دنیا بھر سے

میرکل نے اپنی خریداری خود کر کے عوام کو مثبت پیغام دیا ہے

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 23-March-2020

برلن،نئی قسم کے کورونا وائرس کی وبا کے باعث بہت سارے جرمن باشندے سڑکوں پر نکلنے سے خوفزدہ ہیں، لیکن برلن کی ایک سپر مارکیٹ میں جرمن چانسلر نے اپنی اشیائے ضروریات مختصر تعداد میں خرید کر عوام کو ایک مثبت پیغام دیا ہے۔جرمنی کی وفاقی چانسلر انگیلا میرکل نے کورونا وائرس کے انفیکشن کے واقعات میں بڑے پیمانے پر اضافے کے باوجود اپنی خریداری کی عادت ترک نہیں کی۔ جرمن اخبار بلڈ میں شائع ہونے والی خبر کے مطابق چانسلر میرکل نے دارالحکومت برلن میں گزشتہ جمعہ کی شام اپنے گھر کے قریب واقع ایک سپر مارکیٹ سے ویک اینڈ کے لیے ضروری اشیاء کی خریداری کی۔ چانسلر میرکل بھی اپنی ضروریات کی چیزوں کو سپر مارکیٹ میں تلاش کر رہی تھیں، کیونکہ کورونا وائرس کی وجہ سے عوام زیادہ سے زیادہ سامان خرید کر گھروں میں ذخیرہ کر رہے ہیں۔ تاہم میرکل نے غیر ضروری اشیا خریدنے کے بجائے مختصر مقدار میں صرف بنیادی ضروریات کی چیزیں، جیسے کہ سبزیاں، پھل، صابن اور ٹوائلٹ پیپر وغیرہ ہی خریدے۔انگیلا مریکل کی اس شاپنگ میں عوام کے لیے چند مثبت پیغامات تھے۔ مثال کے طور پر انہوں نے واضح طور پر یہ پیغام دیا کہ جتنی ضرورت ہے اتنا ہی سامان خریدیں اور سپر مارکیٹ میں کیش کاؤنٹر پر قطار میں انتظار کے دوران آپس میں کم از کم ایک سے دو میٹر تک کا فاصلہ رکھیں۔ یورپی یونین کے سب سے زیادہ آبادی والے ملک جرمنی میں کورونا وائرس کی نئی قسم سے لگنی والی بیماری کووڈ انیس کے ہاتھوں اب تک 55 افراد ہلاک ہو چکے ہیں جبکہ اس وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد بھی اتوار بائیس مارچ کی سہ پہر تک انیس ہزار سے زائد ہو چکی ہے۔جرمنی کے زیادہ تر ریاستوں میں عام شہریوں کو صرف ضروری کاموں کے لیے ہی گھروں سے نکلنے کی اجازت ہے، جیسے کہ اشیائے خوراک وغیرہ کی خریداری، کام پر جانے، ادویات خریدنے یا پھر کسی ڈاکٹر کے پاس یا ہسپتال جانے کے لیے۔

About the author

Taasir Newspaper