دنیا بھر سے

صدر ٹرمپ آزاد و شفاف انتخابات کے نتائج کو تسلیم کریں گے: وائٹ ہائوس

Taasir Newspaper
Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Washington (America) on 26-September-2020

واشنگٹن: وائٹ ہائوس نے انتقالِ اقتدار سے متعلق صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے بیان کی وضاحت کرتے ہوئے کہا ہے کہ صدر آزاد اور شفاف انتخابات کے نتائج کو تسلیم کریں گے۔وائٹ ہائوس کی پریس سیکرٹری کیلی مک اینینی نے جمعرات کو پریس بریفنگ کے دوران کہا کہ صدر ٹرمپ انتخابات میں امریکی عوام کی خواہشات کو قبول کریں گے۔ان کا کہنا تھا کہ یہی سوال ڈیموکریٹس سے بھی پوچھنا چاہیے۔ایک روز قبل وائٹ ہائوس میں ہی صدر ٹرمپ سے جب صحافیوں نے انتخابات میں شکست کی صورت میں انتقالِ اقتدار سے متعلق سوال کیا تھا تو انہوں نے اس سوال کا واضح جواب دینے سے گریز کیا تھا۔صدر ٹرمپ کا کہنا تھا کہ ڈاک کے ذریعے ووٹنگ سے لاکھوں ووٹ دھوکہ دہی کی نذر ہو سکتے ہیں۔ اس لیے ہم چاہتے ہیں کہ اس انداز کے بیلٹ سے چھٹکارا حاصل کیا جائے۔صدر ٹرمپ کے بقول اگر ایسا نہ ہوا تو اقتدار کی منتقلی نہیں بلکہ اقتدار کا تسلسل ہو گا۔صدر ٹرمپ نے کہا کہ وہ پوسٹل ووٹنگ پر اپنے تحفظات کا اظہار کرتے رہے ہیں۔ اْن کے بقول یہ تباہ کن ہے۔ وائٹ ہائوس کی پریس سیکرٹری نے جمعرات کو اس بات پر زور دیا کہ صدر ٹرمپ بڑے پیمانے پر بیلٹ ووٹنگ کے امکان سے نجات چاہتے ہیں۔یاد رہے کہ صدر ٹرمپ ڈاک کے ذریعے ووٹنگ کے عمل پر تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے مسلسل انتخابات کے حوالے سے خدشات کا اظہار کر رہے ہیں۔جمعرات کو نارتھ کیرولائنا اور کیلی فورنیا کے دورے سے قبل صحافیوں سے بات کرتے ہوئے انہوں نے ایک مرتبہ پھر کہا کہ ہم انتخابات کو شفاف بنانا چاہتے ہیں لیکن مجھے یقین نہیں ایسا ہو پائے گا۔انہوں نے دعویٰ کیا کہ کئی بیلٹس دریا میں پڑے ملے ہیں جن پر ٹرمپ کا نام درج تھا اور وہ ردی کی ٹوکری میں ڈال کر پھینکے گئے تھے۔صدر ٹرمپ ریاست کیلی فورنیا، کولوراڈو، ہوائی، نیواڈا، نیو جرسی، اوریگن، یوٹا، ورمونٹ اور واشنگٹن میں ڈاک کے ذریعے ووٹنگ کے منصوبے پر مسلسل تشویش کا اظہار کر رہے ہیں۔دوسری جانب مڈل ڈسٹرکٹ، پنسلوانیا کے اٹارنی آفس کے مطابق تحقیقات کے دوران نو بیلٹس برآمد ہوئے ہیں جب کہ بہت کم تعداد میں ملنے والے فوجی بیلٹس کو ضائع کر دیا گیا ہے۔امریکی محکمہ انصاف نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ ملنے والے نو بیلٹس میں سے سات صدارتی امیدوار ڈونلڈ ٹرمپ کو کاسٹ کیے گئے تھے جب کہ دیگر دو نامعلوم ہیں۔ادھر امریکی سینیٹ نے جمعرات کو ایک علامتی قرارداد کی منظوری بھی دی ہے جس میں اراکین نے پرامن انتقالِ اقتدار کو امریکی آئین کا حصہ قرار دیا۔

About the author

Taasir Newspaper

Taasir Newspaper