ریاست

درندوں نے سات سالہ بچی کو ہوس کا شکار بنانے کے بعد مار ڈالا

Taasir Newspaper
Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Motihari (Bihar)  on 22-Oct-2020

موتیہاری: انسانی شکل انسانیت کو شرمسار کرنے والے حیوانوں کو پھانسی دی جارہی ہے، اس کے باوجود سماج کے اندر کچھ لوگ ایسے ہیں جو اب بھی گندے کام کو انجام دے رہے ہیں.تازہ معاملہ مشرقی چمپارن میں درندے نے ایک سات سالہ بچی کو اپنی ہوس کا نشانہ بنانے کے بعد ہلاک کردیا اور لاش کو گنے کے کھیت میں پھینک دیا۔ معاملہ تھانہ سوگولی کے علاقہ چھپر بہاس کے دوبی ٹولا کا ہے.جہاں گنے کے کھیت میں ایک سات سالہ بچی کی لاش 3 دن سے لاپتہ تھی،جس سے پورے گاؤں نے افراتفری پیدا ہوگئی. کہا جاتا ہے کہ وہ لڑکی ،جس کی عمر محض سات سال تھی ، 19 اکتوبر کی صبح اپنے دروازے پر کھیل رہی تھی ، جب وہ گیارہ بجے اپنی والدہ سکینہ خاتون (خیالی نام) کو اپنے بچے کو کھلانے کے لئے گئی تو اس کا کچھ پتہ نہیں چل سکا۔ دیر سے تلاش کریں جب وہ نہیں ملا تو وہ اپنے شوہر طاہر حسین (فرضی نام) کے ساتھ تلاش کرتی رہی ، لیکن بچے کا پتہ نہیں چل سکا۔ اسی دن ، لڑکی کے والد نے ٹیمپو پر مائک لگایا اور پورے علاقے کے گمشدہ بچے کو پروپیگنڈہ کیا اور لاپتہ شخص کے لئے تھانہ سگولی میں درخواست دی۔ تیسرے دن جب گاؤں والے بیت الخلاء کے لئے گنے کے کھیت میں گئے تو انہوں نے دیکھا کہ ایک بچی کی لاش پڑی ہے۔ اس نے بھاگ کر گاؤں کے لوگوں کو اطلاع دی۔ بچی کا گھر جگہ سے دو سو میٹر دور ہے۔ موقع پر لڑکی کے والدین پہنچ گئے اور اپنی بچی کی شناخت کی اور لوگوں نے پولیس کو اس کی اطلاع دی۔ اطلاع ملنے پر پولیس نے بچی کی نعش کو اپنے قبضہ میں کرلیا اور اسے پوسٹمارٹم کے لئے موتیہاری بھیج دیا۔ بچی کی لاش دیکھ کر پورا گاؤں جمع ہوگیا تھا۔ جبکہ اس کی والدہ کی حالت خراب ہے۔ اسے یہ کہتے ہوئے دیکھا گیا کہ میں کھانے کے لئے اپنی بچی کی تلاش کرتا رہا لیکن میری بچی کھائے بغیر چلی گئی۔ اسی مردہ لڑکی کے والد نے بتایا کہ مجھے لگتا ہے کہ میرے بچے کے ساتھ زیادتی ہوئی ہے اور اسے قتل کردیا گیا ہے۔ اسی تھانہ ویوک کمار نے کہا کہ ہم ملزم کے قتل اور عصمت ریزی دونوں کی تحقیقات کر کے مجرموں کی شناخت کر رہے ہیں ، ملزم کو جلد سے جلد گرفتار کرکے جیل بھیج دیا جائے گا.

About the author

Taasir Newspaper

Taasir Newspaper