ہندوستان

مولانا ارشد مدنی کا سخت رد عمل،مسلمان اپنی دینی تعلیم کا انتظام خود کریں

Taasir Newspaper
Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Deoband  (Uttar Pradesh) on 17-Oct-2020

دیوبند: آسام میں سرکاری امداد یافتہ مدارس کو بند کرنا در اصل اسی متعصبانہ ذہنیت کا کام جو مسلمانوں کو مایوسی میں دھکیلنا چاہتی ہے اور انہیں قومی دھارے سے باہر دیکھنا چاہتی ہے لیکن حقیقت یہ ہے کہ مسلمان ہزاروں سال سے ان مدارس کے کفیل ہیں اور وہ اپنے دین کے مسئلہ میں کسی کے محتاج نہیں ہیں۔ مذکورہ خیالات کااظہار آج یہاں اپنی رہائش گاہ پرجمعیتہ علماء ہند کے قومی صدر مولانا سید ارشد مدنی نے کیا۔ انہوںنے مدرسوں کے متعلق آسام حکومت کے حالیہ فیصلے پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہاکہ دراصل یہ اسی متعصبانہ ذہنیت کے لوگوں کا فیصلہ ہے جو تبلیغی جماعت کو نشانہ بنارہے تھے ، ان کا مقصد مسلمانوں کو مذہبی اعتبار سے مایوسی کا شکا ربنانا اور انہیں یہ احساس کرانا ہے کہ ان کے لئے یہاں مذہب پر چلنا آسان نہیں ہے بلکہ ان کے راستے بند کردیئے گئے ہیں۔انہوں نے کہاکہ مسلم قوم آج سے نہیں بلکہ ہزاروں سال سے اس ملک میں رہتی ہے،وہ اپنے دین کے مسئلہ میں کسی کی محتاج نہیں ہے بلکہ وہ اپنے پیر وںپر کھڑی ہے، ملک کے اندر ہزاروں مدرسے چل رہے ہیں،حالانکہ اس وقت یہ قوم بدحالی کا شکار ہے لیکن وہ اپنے دین پر قائم ہے اور اپنے مدارس و مساجد کو زندہ رکھے ہوئے ہے۔انہوں نے کہاکہ اگر یہ دو چار فیصد مدرسے بھی حکومت کی متعصبانہ ذہنیت کا شکار ہوجاتے ہیں تو میں یہ سمجھتا ہوں مسلمانوں کو مزید قوت و ہمت کے ساتھ ان مدرسوں کا تعاون کرنا چاہئے اور اپنے دین کے تحفظ کے لئے ان مدارس کو زندہ رکھنا چاہئے۔ انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہاکہ جب الیکشن قریب آتا ہے تو اس طریقے کے مسائل کھڑے کئے جاتے ہیں اور ہوسکتاہے یہ بھی الیکشن کارڈ ہو۔ انہوں نے کہاکہ ہندوستان میں قائم مدارس پوری دنیا میں اسلام کے تحفظ و بقاء کا ذریعہ ہیں۔ انہوں نے کہاکہ ملک میں ایک زمانے سے متعصبانہ ذہنیت کے لوگ ان مدارس کو بند کرنا چاہتے ہیںلیکن ایسا کبھی نہیں ہوگا انشاء اللہ اور مسلمان اپنے بل بوتے پر ان مدارس کو زندہ رکھے گا۔

About the author

Taasir Newspaper

Taasir Newspaper