دہلی

ڈاکٹروں کی ہڑتال کو کجریوال کی حمایت ،پیسے کہاں خرچ کیے گئے؟

Taasir Newspaper
Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | New Delhi  (India)  on 28-Oct-2020

نئی دہلی : دہلی میں میونسپل کارپوریشن کے زیر انتظام چلائے جانے والے اسپتالوں کے میڈیکل اسٹاف کو تنخواہ کی عدم ادائیگی کے معاملے پرہندوراو اسپتال سمیت متعدد اسپتالوں کے ڈاکٹرہڑتال پر ہیں۔ ڈاکٹروں کی ہڑتال پر وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے کہاہے کہ ہمارے لیے شرم کی بات ہے۔ کجریوال نے کارپوریشن سے بہت سارے سوالات بھی پوچھے۔سی ایم اروند کیجریوال نے کہا کہ میونسپل کارپوریشن کے ڈاکٹر ہڑتال پر بیٹھے ہیں ، انہیں تنخواہ نہیں ملی ہے۔ یہ ہم سب کے لیے شرم کی بات ہے۔ یہ ڈاکٹرزکے لیے غلط ہے جس نے اپنی تنخواہ نہ ملنے پرکورونا میں اپنی جان لگادی ۔یہ معاملہ حساس ہے۔ اس معاملے پر سیاست نہیں ہونی چاہیے اور ڈاکٹروں کو تنخواہ ملنی چاہیے۔سی ایم اروند کیجریوال نے کہاہے کہ میونسپل کارپوریشن میں باربارتنخواہ دینے کے مطالبے ہورہے ہیں۔ہرکسی کویہ سوچنا ہوگا کہ میونسپل کارپوریشن میں رقم کی کمی ہے۔میں نے وزیر خزانہ اور عہدیداروں سے پوچھا کہ پیسہ کہاں گیا؟ میونسپل کارپوریشن کوزیادہ رقم دی گئی تھی۔سی ایم اروندکیجریوال کہتے ہیں کہ 2013 اور 2014 کے دوران کجریوال حکومت نے میونسپل کارپوریشن کو دوگنا پیسہ دیا ، توپیسہ کہاں گیا؟ میونسپلٹی کا پیسہ کہاں جارہا ہے؟ آپ اساتذہ ، جھاڑو دینے والوں اورڈاکٹروں کو تنخواہ کیوں نہیں دے سکے؟میونسپل کارپوریشن کو دہلی حکومت کے 3800 کروڑروپیے واپس کرنے ہیں۔جل بورڈکوبھی 3000 کروڑکارپوریشن کوواپس کرنا ہے۔

About the author

Taasir Newspaper

Taasir Newspaper