ملک بھر سے

پنجاب ،ہریانہ کے بعد اب یوپی میں سڑکوں پر اترے کسان

Taasir Newspaper
Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Lucknow  (Uttar Pradesh)  on  27-November-2020

لکھنؤ: زرعی قانون کے خلاف کسانوں کے احتجاج میںمسلسل اضافہ ہورہا ہے۔ پنجاب، ہریانہ،دہلی کے بعد اب مغربی اتر پردیش میں کسانوں کا احتجاج شروع ہوگیا ہے۔ میرٹھ، مظفر نگر، باغپت میںکسان سڑکوں پر آگئے ہیں اور شاہراہ کو روک دیا ہے۔ گزشتہ روز اتر پردیش بھارتی کسان یونین کی طرف سے ایک اعلامیہ جاری کیا گیا تھا کہ وہ جمعہ کی سہ پہر زرعی قانون کے خلاف سڑکوں پر نکلیں گے۔ اب کسانوں کے ذریعہ دہلی – دہرادون شاہراہ کو جام کیا جارہا ہے۔ جمعرات کو بھارتی کسان یونین کے راکیش ٹکیٹ نے ایک بیان دیا تھا کہ پنجاب ،ہریانہ کے کسانوں کے مطالبے کی حمایت کرتے ہیں، ایسی صورت میں ان کی تنظیم کے تمام کسان سڑکوں پر نکلیں گے۔ مظفر نگر میں گزشتہ روز بھی کسانوں نے ایک مہا پنچایت کا انعقاد کیا۔ اہم بات یہ ہے کہ مرکز کے ذریعہ لائے گئے تین زرعی قوانین کی کسانوں نے مخالفت کی ہے۔ کسانوں کا کہنا ہے کہ قانون واپس کیا جائے، ایم ایس پی اور منڈی کے حوالے سے صورتحال کو واضح کیا جائے۔جمعہ کی صبح سے دہلی، ہریانہ، پنجاب سرحد پر کسان سڑکوں پر ہیں اور پولیس کے ساتھ جدوجہد کر رہے ہیں۔ سندھو سرحد پر پولیس اور کسانوں میں تصادم ہوا، پولیس نے آنسو گیس کے گولے پھینکے اور واٹر کینن کا استعمال کیا۔

 

About the author

Taasir Newspaper

Taasir Newspaper