ملک بھر سے

ایئرفورس سی- 17 گلوب ماسٹرز ہندوستان کے لئے ‘ لائف لائن ‘ بن گئے

Taasir Newspaper
Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | New Delhi (Delhi)  on 28-April-2021

نئی دہلی :، 28 اپریل۔ انڈین بری ٹرانسپورٹ ہوائی جہاز سی۔ 17 گلوب ماسٹرز ان دنوں ہندوستان کی زندگی کی لائف لائن بن چکے ہیں۔ یہ ‘ اسکائی لارڈز ‘ پوری دنیا سے خالی آکسیجن ٹینکر لانے اور انہیں ہندوستان کے پلانٹ تک پہنچانے کے لئے شٹل سروس کا کام کر رہے ہیں جب ہندوستان سانس لینے کی جدوجہد کر رہا ہے۔ ہندوستانی فضائیہ نے امداد فراہم کرنے میں اپنی کوششیں جاری رکھے ہوئے اپنا محاذ برقرار رکھا ہے۔ ملک سے بیرون ملک فضائیہ کے ہوائی جہاز خالی آکسیجن کنٹینرز لانے کے لئے اڑ رہے ہیں۔ہندوستانی فضائیہ نے ملک بھر میں آکسیجن رابطے قائم کرنے کے لئے خالی کنٹینروں کو ‘ ایئر لفٹ ‘ کرنے کی مہم تیز کردی ہے۔ ہندوستانی فضائیہ کا سی 17 طیارہ 25 اپریل سہ پہر ساڑھے 3 بجے گوالیار ائیرفورس بیس سے رانچی تک ہزار لیٹر گنجائش کے 2 کرائیوجینک آکسیجن ٹینکروں کو ایئر لائفٹ کیا ۔ دو کنٹینروں کو گوالیار سے رانچی ایئر فورس کے ٹرانسپورٹ طیارے میں پہنچایا۔ ہفتہ ہی کو ہندوستانی فضائیہ کا ایک سی 17 طیارہ ہنڈن ایئر بیس سے پونے ایئر بیس کے لئے صبح 8:00 بجے روانہ ہوا اور 02 خالی کریوجنک آکسیجن کنٹینر ٹرک جام نگر ایئر بیس کیلئے پہنچے۔ وہاں سی 17 طیارہ 2 مزید خالی کنٹینر لے کر پونے سے جام نگر پہنچا ۔ اس سے قبل ، ایک اور سی 17 طیارہ ہفتہ کے روز جودھ پور سے دو خالی کنٹینروں کو جام نگر لے گیا تھا۔ آکسیجن سے بھرا ہوا سلنڈر اور کنیٹینر ایئرلفٹ نہیںکیا جاسکتا کیونکہ آسمان میں دباؤ کی وجہ سے مائع آکسیجن کے اخراج اور آگ کا خطرہ ہے۔ اسی لیے فضائیہ کے طیاروں کا استعمال خالی سلنڈر اور کٹنیرس کو لے جانے کے لئے استعمال ہو رہا ہے، تاکہ نقل و حرکت کا وقت کم ہو سکے۔ہندوستانی فضائیہ کا ایک چنوک ہیلی کاپٹر اور این 32 فوجی طیارے کوویڈ کی جانچ کا سامان جموں سے لیہ اور جموں سے کارگل لے گئے۔ ان آلات میں بائیو سیفٹی کیبینٹ ، سینٹرفیوجس اور اسٹیبلائزر شامل تھے۔ یہ مشینیں سائنسی اور صنعتی تحقیق کونسل (سی ایس آئی آر) نے تعمیر کیں ہیں اور اب وہ جانچ کی گنجائش کو بڑھانے کے لئے مرکزی علاقہ لداخ کو دی گئیں ہیں۔ایئرفورس سی – 17 ٹرانسپورٹ طیارہ 26 اپریل کو7 خالی کریوجنک آکسیجن کنٹینر ہوائی لفٹ کرنے کے لئے دبئی میں اترا۔ 06 آکسیجن کنٹینر لوڈ ہونے کے بعد شام صبح 5بج کر30 بجے پانا گڑھ مغربی بنگال پہنچا۔سیکرٹری دفاع ڈاکٹر . اجے کمار نے دبئی ایئرپورٹ پر سی۔ 17 گلوب ماسٹر کو ٹویٹ کرتے لکھا ، ” تب تک ایئر فورس امن سے نہیں بیٹھے گی جب تک ملک کی ضروریات پوری نہیں کی جاتی ہیں۔ ” فضائیہ کی دبئی سے آکسیجن کنٹینر لانے کے لئے بیرون ملک اپنی دوسری پرواز تھی ۔ اس سے قبل ہفتے کے روز بھی ، ایک سی 17 سترہ طیارہ بردار 04 اعلی صلاحیت والا کرائیوجنک آکسیجن ٹینکر سنگاپور سے پانا گڑھ آیا تھا۔اڈانی گروپ نے دبئی اور فضائیہ کا بھی شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے دبئی سے مائع آکسیجن لے جانے کے لئے استعمال کے لئے تیار 12 کریوجنک ٹینک حاصل کرلئے ہیں۔ ہندوستانی فضائیہ نے ان میں سے 6 ٹینکوں کو ہندوستان منتقل کردیا ہے۔ اس کے علاوہ پونے ، اندور اور بھوپال سے جام نگر ، بڑودہ سے رانچی اور ہنڈن سے پانا گڑھ تک کرائیوجینک آکسیجن کنٹینرز فراہم کیا ہے۔ بنکاک سے پانا گڑھ ائیر بیس تک کنٹینرز کا ایک اور سیٹ لایا گیا ہے۔ اس کے علاوہ آکسیجن کنٹینرز کو جے پور سے ملک کے اندر جام نگر ایئر بیس تک پہنچایا گیا۔ پاناگڑھ سے آکسیجن کی فراہمی کے بعد ، یہ ٹینکروں کو آکسیجن کو پْر کرکے ملک کے مختلف حصوں میں بھیجا جائے گا تاکہ کوویڈ سے لڑنے والے مریضوں کا اسپتالوں میں علاج کیا جاسکے۔
فضائیہ کے ترجمان کے مطابق ، 27 اپریل کو ، ملک بھر میں کم از کم 7 شہروں سے سی 17 طیارہ کرائیوجینک آکسیجن کنٹینر بذریعہ ہوائی جہاز جام نگر ، رانچی اور بھوبنیشور پہنچنے کے مشن پر رہا ہے۔ اس کے علاوہ دبئی اور سنگاپور سے بہت سے آکسیجن کنٹینر دوسرے حصے میں پاناگڑھ ائیر بیس کے لئے بھیجا جارہا ہے۔ سی- 17 نے پونے ، اندور اور بھوپال سے جام نگر ، بڑودہ سے رانچی اور ہنڈن سے پانا گڑھ تک کرائیوجینک آکسیجن کنٹینر فراہم کیا ہے۔ دہلی کے قریب ہنڈن ایئر بیس سے ، گلو ب ماسٹر جام نگر ، پاناگڑھ ، گوالیار ، بیگم پیٹ (حیدرآباد) ، لیہ ، جموں ، چندی گڑھ ، جودھ پور ، پونے کے لئے مسلسل پرواز کررہا ہے۔ سی -130 جے سپر ہرکیولس کے علاوہ ، آئیل- 76 ٹرانسپورٹ ہیلی کاپٹر بھی بحران کے اس لمحے میں کورونا کے خلاف جنگ لڑ رہے ہیں۔

About the author

Taasir Newspaper

Taasir Newspaper