بھارت

کسان آندولن میں اپنی جان گنوان چکے کسانوں کی یاد میں اب چلے گی مٹی ستیہ گرہ

Taasir Newspaper
Written by Taasir Newspaper

الور ، 04 اپریل ۔ کسانوں کے احتجاج کے دوران شہید ہونے والے کسانوں کی یاد میں اب مٹی ستیہ گرہ چلایا جائے گا۔ سماجی کارکن میدھا پاٹکر کی پہل پر ملک بھر سے شاہجہان پور-کھیڑا بارڈر پر مٹی ستیہ گرہ کے تحت کسان کلش میں مٹی بھیج رہے ہیں۔ اس مٹی سے شہید ہونے والے کسانوں کی یاد میں شہید یادگار کی تعمیر کی جائے گی
کسان تنظیموں نے اس احتجاج کے دوران مرنے والے کسانوں کے نام پر ایک یادگار بنانے کا فیصلہ کیا ہے۔ شاہجہان پور بارڈر پر شاہراہ کے وسط میں ڈیوائڈرس پر میموریل تعمیر کرنے کی تیاریاں کی گئیں۔ ملک کے مختلف حصوں سے لائی گئی مٹی اس میں استعمال ہوگی۔ اب تک ہزاروں مقامات سے جمع کی گئی مٹی شاہجہان پور ہریانہ کی سرحد پر پہنچ چکی ہے۔ ایک یا دو دن کے بعد ، اس یادگار کی تعمیر کا عمل سرحد پر شاہراہوں کے مابین ڈیوائیڈر پر شروع ہوگا۔
کسان قائدین کا کہنا ہے کہ اب تک ملک بھر میں کسان تحریک کے تحت 350 سے زائد کسان شہید ہوچکے ہیں۔ یہ یادگار ان کسانوں کی یاد میں تعمیر کی جائے گی۔ مٹی پورے ملک سے جمع کرنے کا کام جاری ہے۔
شاہ جہان پور۔ ہریانہ بارڈر پر 2 دسمبر سے کسانوں کی تحریک چل رہی ہے۔ شروع میں ، کسان سرحد کے قریب ہی ٹھہرے تھے۔ یہ احتجاج قومی شاہراہ پر 12 دسمبر سے شروع ہوا۔ تب سے ، کسان مسلسل قومی شاہراہ پر احتجاج کر رہے ہیں۔ کسان رہنماؤں کا کہنا ہے کہ ملک میں مختلف قسم کی مٹی اور آب و ہوا پائی جاتی ہے ، لہذا ملک میں ہر قسم کی فصل کی پیداوار ہوتی ہے۔ انہوں نے الزام لگایا کہ حکومت ان کی اراضی کا قبضہ قومی اور بین الاقوامی کارپوریٹ کمپنیوں کے پاس رکھنا چاہتی ہے۔ مرکزی حکومت چاہتی ہے کہ ان کمپنیوں کو ملک کی فوڈ سیکیورٹی پر قبضہ دے کر منمانی کرنا چاہتی ہے ۔ اس کے خلاف کسانوں کا جاری احتجاج اور اب تک کاشتکاروں کی شہادت رائیگاں نہیں جائے گی۔
کسان مہا پنچایت کے قومی صدر رامپال جاٹ کا کہنا ہے کہ کاشتکار عدم تشدد سے اپنی تحریک جاری رکھے ہوئے ہیں۔ کسان رہنماؤں کی شہادت کے بعد ، سماجی کارکن پاٹیکر کی پہل پر مٹی سے متعلق ستیہ گرہ شروع کردی گئی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ کسان شاہجہان پور بارڈر پرپر امن احتجاج کررہے ہیں۔ وہ ایسی کسی بھی تحریک کا حصہ نہیں ہیں جہاں تشدد ہوتا ہو یا جھوٹ کا سہارا لے کر خود کو سچ اور دوسرے کو جھوٹا بتایا جاتا ہو۔

About the author

Taasir Newspaper

Taasir Newspaper