ریاست

اب گائے کے گوبر سے بنے چپل پہنیں ، بیماریوں سے دور رہیں

Written by Taasir Newspaper

گائے کے گوبر سے بنی چپل پہننے سے بی پی اور شوگر کو کنٹرول کرنے میں فائدہ ہوتا ہے۔

رائے پور ، 11 دسمبر ۔ چھتیس گڑھ میں 7202 گوٹھانوں میں سے تقریباً 2 ہزار ایسے ہیں جہاں خواتین کا ایک بڑا گروپ گائے کے گوبر سے بنی اشیاء کی تیاری میں مصروف ہے۔ جہاں گوٹھانوں میں مورتیوں ، چراغوں اور سجاوٹ کے ساتھ گائے کے گوبر سے بنی خصوصی چپلیں تیار کی جارہی ہیں۔ اس سے نہ صرف مقامی خواتین کو روزگار کے مواقع میسر آ رہے ہیں بلکہ گوٹھانوں کو بھی بہت فائدہ ہو رہا ہے۔ ایسا مانا جاتا ہے کہ چپل پہننے سے بی پی اور شوگر کو کنٹرول کرنے میں فائدہ ہوتا ہے۔
گوکل نگر کے رہنے والے رتیش اگروال پلاسٹک یا ربڑ کے بجائے گائے کے گوبر سے چپل بنانے کا کام کر رہے ہیں۔ رتیش اگروال نے بتایا کہ ریاستی حکومت گوٹھان بنا کر سڑکوں پر گھومنے والی لاوارث گایوں کو محفوظ کر رہی ہے۔ اس کے ساتھ اب وہ ویدک طریقے سے گوبر سے چپل بنا کر گوٹھان کے مقصد کو ایک نیا روپ دے رہے ہیں۔ ان میں سے بہت سے لوگ پلاسٹک کی وجہ سے بھی مر جاتے ہیں۔ ایسے میں ہر شخص کو پلاسٹک کی پیداوار کو کم کرنے کی کوشش کرنی چاہیے۔ چپل بنانے کے علاوہ اس نے گائے کے گوبر سے چراغ ، اینٹیں اور بھگوان کی مورتیاں بھی بنائیں۔ اس میں 16 افراد کام کرتے ہیں یہ چپل کوئی عام چپل نہیں ہے بلکہ یہ چپل اسے پہننے والے کو کئی بیماریوں سے بچاتی ہے۔
گائے کے گوبر سے تیار کردہ خصوصی چپل گوہر گم ، آیورویدک جڑی بوٹیوں ، چونے اور گائے کے گوبر کے پاؤڈر کو ملا کر بنائے جا رہے ہیں۔ گوبر کی چپل پرانے طریقے سے بنائی جا رہی ہے۔ گوبر کا چراغ ہو یا گوبر کی اینٹ یا بھگوان کی مورتی، ان تمام کاموں سے گوشالا میں گایوں کی دیکھ بھال کے لیے 15 لوگوں کو روزگار مل رہا ہے۔ یہاں خواتین 1 کلو گائے کے گوبر سے 10 چپل بناتی ہیں۔ گائے کے گوبر سے بنی چپل گھر ، باہر یا دفتر میں کہیں بھی پہنی جا سکتی ہے۔ یہ چپل 3 سے 4 گھنٹے گیلے رہنے کے بعد بھی خراب نہیں ہوتی، اگر کوئی چیز گیلی ہو جائے تو دھوپ دکھانے کے بعد دوبارہ پہننے کے قابل ہو جاتی ہے۔
چپل کی قیمت چار سو روپے ہے اور 1000 چپلوں کا آرڈر پہلے ہی موصول ہو چکا ہے۔

About the author

Taasir Newspaper