دنیا بھر سے

بین الاقوامی ڈونرز افغانستان کو 28 کروڑ ڈالرز دینے پر رضا مند

Written by Taasir Newspaper

نیویارک ،11دسمبر – عالمی بینک نے تصدیق کی ہے کہ موسمِ سرما میں افغانستان کی آ دھی سے زائد آبادی کے لیے غذائی قلت کے خدشے کے پیش نظر بین الاقوامی ڈونرز 28 کروڑ ڈالرز کی امداد دینے پر رضا مند ہو گئے ہیں۔جمعے کو ورلڈ بینک کی جانب سے جاری کیے گئے بیان میں کہا گیا ہے کہ افغانستان کی تعمیر نو سے متعلق فنڈ اے آر ٹی ایف اس نازک موقع پر افغان عوام کو انسانی امداد فراہم کرے گا۔فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق یہ فنڈز یونی سیف اور ورلڈ فوڈ پروگرام کو فراہم کیے جائیں گے۔ جن کے پاس افغانستان میں زمینی ذرائع موجود ہیں۔ان فنڈز کو افغان عوام کے لیے صحت عامہ اور غذائیت سے متعلق جاری ان پروگراموں میں خرچ کیا جائے گا جن میں فنڈز کی کمی کا سامنا ہے۔بیان کے مطابق یونی سیف کو بنیادی صحت کی سہولیات کی فراہمی کے لیے 10 کروڑ ڈالر جب کہ ورلڈ فوڈ پروگرام کو 18 کروڑ ڈالر فراہم کیے جائیں گے۔اس سے قبل عالمی بینک کی انتظامیہ نے رواں ماہ کے آغاز میں تعمیر نو کے لیے مختص فنڈز کو بھی جاری کرنے کی پیش کش کی تھی۔
خیال رہے کہ اقوامِ متحدہ متعدد بار خبر دار کر چکا ہے کہ افغانستان دنیا کے سنگین ترین انسانی بحران کے دہانے پر ہے۔افغانستان کی لگ بھگ دو کروڑ 20 لاکھ یا نصف آبادی کو موسمِ سرما کے دوران شدید غذائی بحران کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے جس کی وجہ سے افغان شہریوں کو نقل مکانی یا غذائی بحران کا سامنا کرنے میں سے کسی ایک کا چناؤ کرنا پڑے گا۔اقوامِ متحدہ کی ایک حالیہ رپورٹ کے مطابق افغانستان کو اس صورتِ حال کا سامنا گلوبل وارمنگ کے باعث خشک سالی کے علاوہ اگست میں طالبان کے اقتدار میں آنے کے بعد عالمی اداروں کی جانب سے اس کے فنڈز منجمد کرنے کی وجہ سے ہے۔خیال رہے کہ امریکہ نے طالبان کے اقتدار میں بعد امریکی بینکوں میں موجود افغان 10 ارب ڈالرز منجمد کر دیئے تھے جب کہ آئی ایم ایف اور ورلڈ بینک نے بھی فنڈز تک افغانستان کی رسائی معطل کر دی تھی۔
افغانستان کے دارالحکومت کابل میں لوگ غذائی اشیا کی خریداری اور اپنے گھروں کو شدید سردی کے دوران گرم رکھنے کے لیے کوئلہ خریدنے کے لیے اپنی گھریلو اشیا فروخت کرنے پر مجبور ہیں۔امریکہ سمیت مغربی ممالک کو یہ اعتراض ہے کہ طالبان طاقت کے بل بوتے پر اقتدار پر آئے جب کہ انہوں نے جامع حکومت کی تشکیل، انسانی حقوق اور خواتین کو قومی دھارے میں لانے کے اپنے وعدے پورے نہیں کیے۔البتہ طالبان کا یہ موقف رہا ہے کہ وہ اپنی سرزمین کسی اور ملک کے خلاف استعمال ہونے کی اجازت نہیں دیں گے جب کہ انسانی حقوق کے تحفظ اور خواتین کو حقوق دینے کے اپنے وعدے پورے کریں گے۔

About the author

Taasir Newspaper