ریاست

تعمیراتی کام، صنعتوںکے معاملے پر غور کریں: سپریم کورٹ

Written by Taasir Newspaper

نئی دہلی ،10 ؍دسمبر-دہلی-این سی آر میں آلودگی کے بارے میں اہم احکامات دیتے ہوئے سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ تعمیراتی کاموں، صنعتوں اور دیگر اکائیوں کے مسائل کی جانچ کرنے اور ان پر کمیشن فار ایئر کوالٹی مینجمنٹ ان دلہی ۔این سی آراینڈ ایڈوائزنگ ایریاز(سی اے کیو ایم) غور کریں۔ اور جہاں ضرورت ہو وہاں پابندی میں مراعات دی جائیں،کمیشن ایک ہفتے میں اس پر فیصلہ کرے۔ سپریم کورٹ نے کہا کہ کچھ ریاستیں تعمیراتی مزدوروں کو اجرت نہیں دے رہی ہیں۔ ہم ریاستوں کو ہدایت دیتے ہیں کہ وہ پہلے کے حکم کی تعمیل کریں اور تعمیل کے حلف نامے داخل کریں۔ غور طلب ہے کہ دہلی-این سی آر میں آلودگی کے معاملے کی سماعت جمعہ کو ہوئی ۔ چیف جسٹس این وی رمنا، جسٹس ڈی وائی چندر چوڑ اور جسٹس سوریہ کانت کی بنچ اس کی سماعت کر رہی ہے۔ سماعت کے دوران درخواست گزار کے وکیل نے کہا کہ آلودگی سے متعلق صورتحال میں کچھ بہتری آئی ہے تاہم دو معاملات پر سماعت ضروری ہے۔ سماعت کے دوران چیف جسٹس (سی جے آئی ) رمنا نے کہاکہ کمیشن سے رات 11 بجے حلف نامہ موصول ہوا ہے۔ درخواست گزار کے وکیل وکاس سنگھ کہہ رہے ہیں کہ ہوا کا معیار بہتر ہوا ہے۔ اس پر سالیسٹر جنرل (ایس جی) تشار مہتا نے کہا کہ یہ معلوم نہیں ہے کہ وکاس سنگھ عرضی گزار آدتیہ دوبے کی طرف سے کہہ رہے ہیں یا بلڈرز کی طرف سے۔سی جے آئی نے کہاکہ ہم نرمی پر کوئی فیصلہ نہیں لیں گے، سی اے کیو ایم کو اس پر فیصلہ لینے دیں۔ اب ہم اس پر کچھ نہیں سنیں گے۔ دیگر تمام درخواستوں پر سی اے کیو ایم غور کرے گا۔ عرضی گزار کے لیے وکاس سنگھ نے کہا کہ تعمیر کے معاملے پر کال کریں۔ باقی وہ فیصلہ کر سکتے ہیں۔
اس پر سی جے آئی نے کہا کہ سی اے کیو ایم تمام اپیلوں کا فیصلہ کرے گا۔سی جے آئی نے ایس جی تشار مہتا سے ایئر کوالٹی کمیشن کے بارے میں پوچھا اور کہا کہ کمیشن کو ریاستوں کے ساتھ مل کر فیصلہ لینا چاہیے۔ تمام درخواستیں اور اعتراضات کمیشن کے سامنے رکھے جائیں۔ سی جے آئی نے کہا کہ آلودگی کے معاملے میں کمیشن کو ذمہ داری دی گئی ہے۔

About the author

Taasir Newspaper