دنیا بھر سے

یوکرین کو مزید ہائی ٹیک ہتھیار بھیج رہے ہیں: پینٹاگن

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network / Mosherraf

واشنگٹن،24مئی:امریکی وزیر دفاع لائیڈ آسٹن نے انکشاف کیا ہے کہ دْنیا بھر کے تقریباً 50 دفاعی رہ نماؤں نے پیر کو ملاقات کی اور یوکرین کو مزید جدید ہتھیار بھیجنے پر اتفاق کیا ہے۔ ان ہتھیاروں میں یوکرین کے ساحلوں کی حفاظت کے لیے ہارپون میزائل لانچر اور میزائل بھی شامل ہیں۔پینٹاگان کے نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے آسٹن نے یہ بتانے سے انکار کیا کہ آیا واشنگٹن ہائی ٹیک موبائل میزائل لانچر یوکرین کو بھیجے گا یا نہیں کیونکہ کیف نے ان ہتھیاروں کی درخواست کی ہے۔لیکن لائیڈ آسٹن نے کہا کہ 20 ممالک نے پیر کو اعلان کیا کہ وہ یوکرین کو سیکیورٹی امداد کا ایک نیا پیکج بھیجیں گے۔ یہ امداد ایک ایسیوقت میں بھیجی جا رہی ہے جب یوکرین میں روسی فوجی آپریشن تیسرے مہینے میں داخل ہو رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ ڈنمارک نے ساحلوں کے دفاع میں مدد کے لیے یوکرین کو ہارپون میزائل لانچر اور میزائل بھیجنے پر اتفاق کیا ہے۔
اس کے علاوہ آسٹن نے دفاعی سربراہان کے ساتھ ایک ورچوئل میٹنگ کے اختتام پر نامہ نگاروں سے کہا کہ ہم نے یوکرین کی ضروریات کی ترجیح اور میدان جنگ کی صورتحال کے بارے میں بہت زیادہ سخت فیصلے کیے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ کئی ممالک انتہائی ضروری توپ خانے، ساحلی دفاعی نظام، ٹینک اور بکتر بند گاڑیاں عطیہ کرتے ہیں۔ دوسروں نے تربیت کے لیے نئے وعدے کیے ہیں۔جوائنٹ چیفس آف سٹاف کے چیئرمین جنرل مارک ملی نے کہا کہ نچلی سطح پر بات چیت جاری ہے کہ امریکا کو یوکرینی فوج کی تربیت کو کس طرح ایڈجسٹ کرنے کی ضرورت پڑ سکتی ہے اور کیا کچھ امریکی افواج کو یوکرین میں تعینات کیا جانا چاہیے۔اس سوال کے جواب میں کہ آیا امریکی اسپیشل آپریشنز فورسز یوکرین کا رخ کر سکتی ہیں، جس کی حکام نے تصدیق کی ہے کہ ابھی تک ایسا نہیں ہوا، ملی نے کہا کہ یوکرین میں امریکی افواج کے دوبارہ داخلے کے لیے صدارتی فیصلے کی ضرورت ہے۔
دو روز قبل امریکی صدر جو بائیڈن نے یوکرین کے لیے 40 ارب ڈالر کے امدادی پیکج کی منظوری دی تھی۔ہفتے کو اس پیکج پر دستخط بائیڈن کے جنوبی کوریا کے دورے کے دوران ہوئے۔ صدر منتخِب ہونے کے بعد جوبائیڈن کا یہ کسی ایشیائی ملک کا پہلا دورہ ہے۔امریکی کانگریس نے اس سے قبل بھاری اکثریت سے پیکج کی منظوری دی تھی۔ بائیڈن نے اصل میں کانگریس سے 33 ارب ڈالر کی امداد کی منظوری کی درخواست کی تھی لیکن کانگریس نے اس امداد کی ویلیو بڑھا کر تقریباً 40 ارب ڈالر کر دیا۔کل پیکج کا نصف دفاعی امور کے لیے مختص کیا جائے گا، جس میں یوکرین کے لیے چھ ارب ڈالر کی براہ راست فوجی امداد بھی شامل ہے۔

About the author

Taasir Newspaper