کھیل

روہت شرما کورونا پازیٹیو

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Mosherraf- 26 June

نئی دہلی ،26جون :انگلینڈ کے دورے پر ہندوستانی کیمپ سے بری خبر ہے۔ ٹیم انڈیا کے کپتان روہت شرما واحد ٹیسٹ سے پہلے ہی کورونا کا شکار ہو گئے ہیں۔ وہ انگلینڈ کے خلاف کھیلے جانے والے واحد ٹیسٹ سے باہر ہو گئے ہیں۔ بورڈ آف کنٹرول فار کرکٹ ان انڈیا نے ایک بیان جاری کرکے اس کی تصدیق کی ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ روہت شرما کا ریپڈ اینٹیجن ٹیسٹ ہفتہ کو کیا گیا تھا۔ وہ فی الحال ٹیم ہوٹل میں آئیسولیشن میں ہیں اور بی سی سی آئی کی میڈیکل ٹیم کی نگرانی میں ہیں۔ ساتھ ہی میڈیا رپورٹس کے مطابق روہت کی غیر موجودگی میں جسپریت بمراہ ٹیم کے کپتان ہوں گے۔ تاہم اس حوالے سے بی سی سی آئی کی جانب سے کوئی باضابطہ بیان سامنے نہیں آیا ہے۔نئی دہلی ،26جون :انگلینڈ کے دورے پر ہندوستانی کیمپ سے بری خبر ہے۔ ٹیم انڈیا کے کپتان روہت شرما واحد ٹیسٹ سے پہلے ہی کورونا کا شکار ہو گئے ہیں۔ وہ انگلینڈ کے خلاف کھیلے جانے والے واحد ٹیسٹ سے باہر ہو گئے ہیں۔ بورڈ آف کنٹرول فار کرکٹ ان انڈیا نے ایک بیان جاری کرکے اس کی تصدیق کی ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ روہت شرما کا ریپڈ اینٹیجن ٹیسٹ ہفتہ کو کیا گیا تھا۔ وہ فی الحال ٹیم ہوٹل میں آئیسولیشن میں ہیں اور بی سی سی آئی کی میڈیکل ٹیم کی نگرانی میں ہیں۔ ساتھ ہی میڈیا رپورٹس کے مطابق روہت کی غیر موجودگی میں جسپریت بمراہ ٹیم کے کپتان ہوں گے۔ تاہم اس حوالے سے بی سی سی آئی کی جانب سے کوئی باضابطہ بیان سامنے نہیں آیا ہے۔
روہت سے پہلے بھارتی ٹیم کے اسپنر روی چندرن اشون بھی کورونا کا شکار ہو چکے ہیں۔ جس کی وجہ سے وہ باقی کھلاڑیوں کے ساتھ لندن نہیں گئے۔ تاہم اب وہ ٹھیک ہیں۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق لندن پہنچنے کے بعد سابق بھارتی کپتان وراٹ کوہلی بھی کورونا کا شکار ہوگئے۔ حالانکہ اب وہ ٹھیک ہیں۔ وہ پریکٹس میچ میں کھیل رہے ہیں۔ انہوں نے تیسرے دن لسٹر شائر کے خلاف دوسری اننگ میں 67 رن بنائے۔
بھارت اور انگلینڈ کے درمیان واحد ٹیسٹ یکم جولائی سے شروع ہوگا۔ یہ گزشتہ سال ہونے والی ٹیسٹ سیریز کا حصہ ہے۔ گزشتہ سال انگلینڈ کے دورے پر پانچ ٹیسٹ میچوں کی سیریز کھیلنے گئی ٹیم انڈیا نے کورونا کیس کی وجہ سے آخری میچ کھیلنے سے انکار کر دیا تھا۔ اس دورے میں باقی ایک ٹیسٹ کیا جا رہا ہے۔ ہندوستانی ٹیم اس وقت پانچ ٹیسٹ میچوں کی سیریز میں 2-1 سے آگے ہے۔

About the author

Taasir Newspaper