سیاست

مہاراشٹر سیاسی بحران:اسپیکر کونوٹس،اگلی سماعت 12جولائی کو

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Mosherraf- 27 June

نئی دہلی، 27جون: سپریم کورٹ نے پیر کو ایکناتھ شندے کی درخواست پر سماعت کی۔ درخواست میںممبرانِ اسمبلی کی نااہلی اور ڈپٹی اسپیکر نرہری جروال کے کردار پر سوالات اٹھائے گئے۔ عدالت نے شندے دھڑے، مہاراشٹر حکومت اور شیوسینا کے دلائل سنے۔ اس کے بعد عدالت نے اراکین اسمبلی کو نااہل قرار دینے کے ڈپٹی اسپیکر کے نوٹس کا جواب دینے کے لیے 12 جولائی2022 تک کا وقت مقرر کیا ہے۔یہ شندے دھڑے کے لیے راحت کی بات ہے۔سپریم کورٹ نے مہاراشٹر بھون، ڈپٹی اسپیکر، مہاراشٹر پولس، شیوسینا لیجسلیچر پارٹی لیڈر اجے چودھری اور مرکز کو بھی نوٹس بھیجے ہیں۔ عدالت نے تمام ایم ایل ایز کو سیکورٹی فراہم کرنے اور جمود برقرار رکھنے کا حکم دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ فیصلے تک فلور ٹیسٹ نہیں کیا جائے گا۔ ڈپٹی اسپیکر کو 5 دن میں جواب جمع کرانا ہوگا۔ کیس کی اگلی سماعت 11 جولائی2022 کو ہوگی۔سپریم کورٹ کی سماعت میں کس نے کیا کہا؟شندے دھڑا: ڈپٹی اسپیکر کو رکنیت منسوخی کا نوٹس آئینی نہیں۔ ہماری املاک کو نقصان پہنچایا جا رہا ہے، ہمیں دھمکایا جا رہا ہے اور ہمارے حقوق کو پامال کیا جا رہا ہے۔ ایسی صورتحال میں آرٹیکل 32 کے تحت ہم براہ راست سپریم کورٹ آسکتے ہیں۔سپریم کورٹ:آپ جس دھمکی کی بات کر رہے ہیں اس کی تصدیق کرنے کا ہمارے پاس کوئی ذریعہ نہیں ہے۔ ہم نے وہ مختصر وقت دیکھا ہے جس کا ذکر ڈپٹی سپیکر کے نوٹس میں کیا گیا ہے۔ آپ اس سوال کے بارے میں سامنے کیوں نہیں گئے؟شندے کا دھڑا: 2019 میں شندے کو متفقہ طور پر پارٹی کا لیڈر مقرر کیا گیا تھا، لیکن 2022 میں از خود نوٹس لیتے ہوئے ایک نیا وہپ جاری کیا جاتا ہے۔ شنڈے کے خلاف کہا گیا کہ انہوں نے رضاکارانہ طور پر پارٹی کی رکنیت چھوڑ دی۔ سب سے اہم مسئلہ یہ ہے کہ اسپیکر یا ڈپٹی اسپیکر اس وقت تک کرسی پر نہیں بیٹھ سکتے جب تک ان کی اپنی پوزیشن واضح نہ ہو۔شندے کا دھڑا: ڈپٹی اسپیکر نے اس معاملہ میں غیر ضروری جلد بازی کا مظاہرہ کیا۔ قدرتی انصاف کے اصول پر عمل نہیں کیا گیا۔ جب اسپیکر کی پوزیشن پر سوال اٹھائے جا رہے ہوں تو نوٹس کے تحت ان کی برطرفی اس وقت تک درست اور مناسب ہو گی جب تک کہ وہ اسپیکر کے طور پر اپنے اختیارات استعمال کرنے کے لیے اکثریت ثابت نہیں کرلیتے۔ جب اسپیکر کو اپنی اکثریت پر اعتماد ہے تو وہ فلور ٹیسٹ سے کیوں ڈرتا ہے؟شندے کا دھڑا: اسپیکر کے پاس ایم ایل ایز کی نااہلی جیسی درخواستوں پر فیصلہ کرنے کا آئینی حق ہے، ایسی صورت حال میں اس اسپیکر کے لیے اکثریت بہت ضروری ہے۔ جب اسپیکر کو ہٹانے کی تجویز زیر التوا ہے، تو موجودہ اراکین اسمبلی کو نااہل قرار دے کر اسمبلی میں تبدیلی کرنا آرٹیکل 179(C) کی خلاف ورزی ہے۔ اس معاملے میں غیر ضروری جلد بازی کا مظاہرہ کیا گیا۔ لیکن، سب سے بڑا سوال یہ ہے کہ اسپیکر اس معاملے کو کیسے دیکھ سکتا ہے۔ آج سب سے پہلے ان کی برطرفی کے نوٹس کے بارے میں بات کرتے ہیں۔سپریم کورٹ نے کہا کہ ڈپٹی اسپیکر کو چیلنج کیا گیا ہے۔ ہمیں پہلے ان کی بات سننی چاہیے۔ اس پر ڈپٹی اسپیکر کے وکیل راجیو دھون نے کہا کہ شیوسینا کی طرف سے آئے میرے دوست ابھیشیک منو سنگھوی کو پہلے بولنے کی اجازت دی جائے۔سپریم کورٹ: کیا اس معاملے میں سوال صرف اسپیکر کے کرسی پر برقرار رہنے کا ہے؟ جب آرٹیکل 179 کے تحت ڈپٹی اسپیکر کو ہٹانے کا معاملہ زیر التوا ہے تو کیا وہ رکنیت منسوخی کا نوٹس بھیج سکتے ہیں؟ کیا آپ نے اس پر غور کیا ہے؟مہاراشٹر حکومت اور شیو سینا: باغی ایم ایل اے پہلے ہائی کورٹ کیوں نہیں گئے اور سپریم کورٹ کیوں نہیں آئے؟ شنڈے دھڑے کو بتانا چاہیے کہ انہوں نے اس طریقہ کار پر کیوں عمل نہیں کیا۔ ایسا کسی صورت میں نہیں ہوتا، جب اسپیکر کے سامنے کوئی معاملہ زیر التوا ہو اور عدالت نے اس میں مداخلت کی ہو۔ جب تک اسپیکر حتمی فیصلہ نہیں کرتا، عدالت کوئی کارروائی نہیں کرتی۔ ڈپٹی اسپیکر کے خلاف ایم ایل ایز کی جانب سے دیے گئے نوٹس کا فارمیٹ غلط تھا۔ اس لیے اسے مسترد کر دیا گیا۔مہاراشٹر حکومت اور شیو سینا: 20 کو ایم ایل اے سورت گئے، 21 کو انہوں نے یہ ای میل لکھا ہوگا اور 22 کو اسپیکر کو نوٹس ملا۔ اب اس میں ہم 14 دن کے قریب بھی نہیں ہیں۔ یہ غیر مجاز ڈاک کے ذریعے آیا تھا اور اسے 14 دن بھی نہیں ہوئے تھے۔سپریم کورٹ: اچھا تو پھر کس انٹیلی جنس سے بھیجا تھا؟مہاراشٹر حکومت اور شیو سینا: یہ رجسٹرڈ ای میل کے ذریعے نہیں بھیجا گیا تھا۔ اسے اسمبلی کے دفتر نہیں بھیجا گیا۔ ڈپٹی اسپیکر نے اپنے دائرہ اختیار میں کام کیا۔ اگر کوئی خط دیتا ہے اور وہ رجسٹرڈ آفس سے نہیں آیا ہے تو اسپیکر پوچھ سکتا ہے کہ آپ کون ہیں۔ یہ خط صرف ایک ایڈوکیٹ وشال اچاریہ نے بھیجا تھا۔

About the author

Taasir Newspaper