اداریہ

مہنگائی مار گئی

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Mosherraf-23 June

وطن عزیربھارت میں مہنگائی تمام ریکارڈ توڑ رہی ہے۔ ریزرو بینک کو ریپو ریٹ بڑھانے پر مجبور کیا جا رہا ہے ۔ ریزرو بینک نے ریپو ریٹ میں دو مرتبہ 0.90 فیصد اضافہ کیا ہے اور آنے والے دنوں میں اس میں مزید اضافہ متوقع ہے۔ملک میں مہنگائی 7.79 فیصد تک پہنچ گئی ہے۔ مہنگائی کی وجہ سے نہ صرف اپنے ملککا برا حال ہے۔صرف بھارت ہی نہیں دنیا کےچھوٹے بڑے تمام ممالک مہنگائی کے اثرات سے دوچار ہیں۔ امریکہ اور کینیڈا جیسے ممالک میں مہنگائی 40 سال کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہے۔ سری لنکا کے حالات بد سے بدتر ہوتے جا رہے ہیں۔ اس کے پاس تیل خریدنے کے لیے بھی پیسہ نہیں بچا ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ پاکستان کے حالات بھی دن بدن خراب ہوتے جا رہے ہیں اور وہ بھی سری لنکا کے راستے پر چلنا شروع ہو گیا ہے۔ آج کے دور میں سری لنکا کی حالت کسی سے ڈھکی چھپی نہیں، نہ کھانے پینے کے پیسے ہیں اور نہ تیل خریدنے کے۔ تقریباً ایک ماہ قبل سری لنکا کے وزیر اعظم بننے والے رانیل وکرما سنگھے نے واضح کیا ہے کہ ملک کی معیشت تباہ ہو چکی ہے۔ مہنگائی کے بارے میں مت پوچھو۔ اپریل کے مہینے میں مہنگائی 30 فیصد تک پہنچ گئی۔ پٹرول-ڈیزل 400 روپے فی لیٹر سے مہنگا ہو گیا ہے۔ دودھ، روٹی اور سبزیوں کی قیمتیں اس قدر بڑھ گئی ہیں کہ خواب میں بھی نہیں سوچا ہوگا۔ سری لنکا بھی اپنا قرض ادا کرنے میں نادہندہ ہے۔ عالم یہ ہے کہ اب صرف بین الاقوامی مدد کا سہارا ہے۔ اس وقت پاکستان کی حالت بہت خراب ہے۔ پٹرول پمپوں پر پٹرول نہیں ہے، اے ٹی ایم میں کیش نہیں ہے اور عام آدمی پریشان ہے۔ پاکستان میں اس وقت پیٹرول 230 روپے مہنگا ہو گیا ہے۔ اپریل تک پاکستان میں مہنگائی دو سال کی بلند ترین سطح 13.4 فیصد تک پہنچ گئی۔ مئی میں اس نے مزید رفتار حاصل کی، جس کے بعد یہ 13.8 فیصد کی ریکارڈ سطح پر پہنچ گئی۔ پاکستان کے سابق وزیر خزانہ شوکت ترین نے بھی ایک ٹویٹ کیا ہے کہ پاکستان میں حالات کتنے خراب ہو چکے ہیں۔ ایک چارٹ دیتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ کس طرح ایک عام آدمی کو 4 افراد پر مشتمل اپنا خاندان چلانے کے لیے کم از کم 13 ہزار روپے کی ضرورت ہوتی ہے۔
ان دنوں کینیڈا میں بھی حالات بہت خراب ہیں۔ مئی میں مہنگائی 40 سال کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی اور 7.7 فیصد کی سطح پر پہنچ گئی۔ یہ 1983 کے بعد سے بلند ترین سطح ہے۔ 31 مئی تک تقریباً ایک سال میں کینیڈا میں پیٹرول کی قیمت میں تقریباً 48 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ چین کے مسائل کی وجہ سے گروسری کی قیمتوں میں 9.7 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ پیاز، مرچ اور گاجر جیسی سبزیوں کے ساتھ ساتھ مچھلی وغیرہ کی قیمتیں بھی آسمان کو چھو رہی ہیں۔ کینیڈا کی طرح امریکہ میں بھی یہیصورتحال ہے۔ وہاں بھی مہنگائی 40 سال کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہے۔ بائیڈن نے کہا ہے کہ یوکرین پر روس کے حملے کی وجہ سے دنیا بھر میں گیس اور تمام اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے۔1981 کے بعد پہلی بار اتنی زیادہ مہنگائی ہوئی ہے۔ مارچ میں امریکا میں افراط زر کی شرح 8.5 فیصد تک پہنچ گئی۔ کینیڈا‘ امریکہ کی طرح برطانیہ کو بھی مہنگائی کا سامنا ہے۔ وہاں بھی مہنگائی نے گزشتہ 40 سال کا ریکارڈ توڑ دیا ہے۔ برطانیہ میں مہنگائی مئی میں 9.1 فیصد تک پہنچ گئی ہے جو کہ توقع سے زیادہ بتائی جا رہی ہے۔ کھانے پینے کی اشیاء مہنگی ہونے سے مہنگائی بڑھ گئی ہے۔ ریزرو بینک نے ریپو ریٹ میں 0.50 فیصد اضافہ کیا۔ای ایم آئی مہنگی ہو جائے گی۔برازیل میں مہنگائی اب بڑھ کر 12.13 فیصد اور مصر میں 13.1 فیصد ہو گئی ہے۔ جرمنی میں بھی مہنگائی نے 32 سال کا ریکارڈ توڑ دیا ہے۔ روس کو بھی مہنگائی کا سامنا ہے اور خوردہ افراط زر 20 سالوں میں 17.8 فیصد کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا ہے۔ اگر ہم بھارت کا موازنہ امریکہ، کینیڈا، برطانیہ جیسے ممالک سے کریں تو ہم اس وقت بہت بہتر پوزیشن میں ہیں۔ ہندوستان کے حالات بہتر ہونے کی سب سے بڑی وجہ یہ ہے کہبھارت کھانے پینے کی بہت کم اشیاء کے لیے درآمدات پر منحصر ہے۔ پام آئل اور سورج مکھی کے تیل کے علاوہ بھارت بہت کم کھانے پینے کی اشیاء درآمد کرتا ہے۔ یہاں زیادہ تر کھانے پینے کی چیزیں اگائی جاتی ہیں جس کی وجہ سے مہنگائی بہت زیادہ نہیں بڑھی۔ اس کے ساتھ ہی پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے، کیونکہ اس کے لیے ہم بیرون ملک سے درآمد شدہ خام تیل پر منحصر ہیں۔

About the author

Taasir Newspaper