Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ملک بھر سے

آر ٹی آئی میں خلاصہ : ٹرمپ کے دورۂ ہند پرمودی سرکار نے تقریباً 38 لاکھ روپے خرچ کئے

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 18th Aug

نئی دہلی، 18اگست: مرکز نے 2020 میں سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے 36 گھنٹے کے سرکاری دورے کے لیے رہائش، خوراک اور دیگر انتظامات پر تقریباً 38 لاکھ روپے خرچ کیے ہیں، وزارت امور خارجہ نے سنٹرل انفارمیشن کمیشن کو یہ اطلاع دی ۔ٹرمپ 24-25 فروری 2020 کو ہندوستان کے اپنے پہلے دورے پر پہنچے تھے۔ انہوں نے اپنی اہلیہ میلانیا، بیٹی ایوانکا، داماد جیرڈ کشنر اور کئی اعلیٰ حکام کے ساتھ احمد آباد، آگرہ اور نئی دہلی کا دورہ کیا تھا۔ٹرمپ نے 24 فروری کو احمد آباد میں تین گھنٹے گزارے۔ اس دوران انہوں نے 22 کلومیٹر طویل روڈ شو میں حصہ لیا، سابرمتی آشرم میں مہاتما گاندھی کو خراج عقیدت پیش کیا اور نئے تعمیر شدہ موتیرا کرکٹ اسٹیڈیم میں وزیر اعظم نریندر مودی کے ساتھ ایک بہت بڑ ی ریلی’ نمستے ٹرمپ‘ میں خطاب کیا۔ اس کے بعد وہ اسی دن تاج محل دیکھنے آگرہ روانہ ہوئے، وہ 25 فروری کو وزیر اعظم مودی کے ساتھ دو طرفہ بات چیت کے لیے دہلی آئے تھے۔مشال بھٹینا کی آر ٹی آئی درخواست میں وزارت خارجہ سے امریکی سابق صدرٹرمپ کے دورۂ ہند کے دوران حکومت ہند کی طرف سے خوراک، سیکورٹی، رہائش، پرواز، نقل و حمل وغیرہ پر کئے گئے کل اخراجات کی تفصیلات مانگی گئی تھی ۔ مشال بھٹینا نے یہ درخواست 24 اکتوبر 2020 کو دی تھی، لیکن انہیں کوئی جواب نہیں ملا جس کے بعد انہوں نے سنٹرل انفارمیشن کمیشن سے رجوع کیا۔وزارت خارجہ نے 4 اگست 2022 کو کمیشن کو ایک رپورٹ بھیجی جس میں COVID-19 کی عالمی وبا کی وجہ سے جواب دینے میں تاخیر کی اطلاع دی گئی۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ سربراہان مملکت کے سرکاری دوروں پر میزبان ممالک کے اخراجات بین الاقوامی طور پر منظور شدہ اصولوں کے مطابق ہے۔اس میں کہا گیا ہے حکومت ہند نے 24-25 فروری کو، (اس وقت) ریاستہائے متحدہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ہندوستان کے سرکاری دورے کے دوران ان کی رہائش، کھانے اور دیگر انتظامات پر ایک اندازے کے مطابق 38,00,000 روپے خرچ ہوئے۔رپورٹ پر غور کرنے کے بعد چیف انفارمیشن کمشنر وائی کے سنہا نے کہا کہ وزارت نے تسلی بخش جواب دینے میں تاخیر کی وجہ بتائی ہے۔

About the author

Taasir Newspaper