ملک بھر سے

کانگریس کے مظاہروں پر کی گئی کارروائی پر شیوانند تیواری کا طنز

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 5th Aug

پٹنہ،05اگست:کانگریس آج بے روزگاری اور مہنگائی کے خلاف احتجاج کر رہی ہے۔ احتجاج کے دوران پولیس نے آج پرینکا گاندھی واڈرا اور دیگر کانگریس لیڈروں کو دہلی میں پارٹی ہیڈکوارٹر کے باہر سے حراست میں لے لیا۔ اس دوران اس پورے معاملے پر آر جے ڈی لیڈر شیوانند تیواری کا ردعمل آیا ہے۔ شیوانند تیواری نے کہا ہے کہ کانگریس سخت رویہ کے ساتھ سڑک پر نکل آئی ہے۔ یہ ایک اچھی علامت ہے۔ حکومت نے جس طرح کانگریس کے پہلے سے طے شدہ پروگرام کو روکنے کی کوشش کی آزادی کے بعد ملک کی تاریخ میں ایسا کبھی نہیں دیکھا گیا۔سونیا گاندھی کی رہائش گاہ سمیت کانگریس ہیڈکواٹر پر سینکڑوں پولیس اہلکار تعینات کیے گئے تھے۔ اس طرح حکومت کی طرف سے ایک سیاسی جماعت کو اس کے پروگرام کے انعقاد کے جمہوری حق سے زبردستی روکنے کی کوشش کی گئی۔ یہ جمہوریت کو قتل کرنے کے مترادف ہے۔حکومت امرت کا جشن آزادی منا رہی ہے۔ ہر گھر میں پرچم کشائی کی مہم چل رہی ہے۔ وہ ترنگا جسے انہوں نے جدوجہد آزادی یا اس کے بعد برسوں تک تسلیم نہیں کیا تھا آج اس کے احترام کا ڈھونگ رچایا جا رہا ہے۔ وطن سے محبت اور عقیدت کا جذبہ ملک کے ہر شہری کے ذہن کا فطری جذبہ ہے۔ ان کی کارکردگی میں فطری نہیں بلکہ دکھاوے کا جذبہ نظر آتا ہے۔سوراج کا اعلان 26 جنوری 1930 کو ملک بھر میں ترنگا لہرا کر کیا گیا تھا۔ وہ ترنگا آزادی، جمہوریت، مساوات اور بھائی چارے کی علامت سمجھا جاتا تھا۔ آج گھر گھر جھنڈوں کے بہانے جمہوریت کو کچلنے کی مذموم کوشش کی جا رہی ہے۔ تو سوال صرف کانگریس کا نہیں جمہوریت کو بچانے کا ہے۔ جہاں کہیں جمہوریت کو دبانے کی کوشش کی جائے اس کی مخالفت کی جائے۔ کانگریس ایک سیاسی پارٹی کے طور پر اپنے پروگرام کو پرامن طریقے سے چلانے کا حق رکھتی ہے۔ جمہوریت کے ہر وکیل کی طرف سے اس حق کو دبانے کی مخالفت کرنا آج کی تباہی کا مذہب ہے۔

About the author

Taasir Newspaper