Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ملک بھر سے

دیسی جنگی ہیلی کاپٹر ایل سی ایچ فضائیہ میں شامل ، پاکستان کی مغربی سرحد پر تعینات

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 3rd Oct۔

جودھ پور (راجستھان)، 03 اکتوبر: دنیا کا پہلا مقامی لائٹ اٹیک ہیلی کاپٹر باضابطہ طور پر پیر کو آئی اے ایف کے بیڑے میں شامل ہو گیا۔ وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے خود 15 منٹ تک اڑان بھر کر ہیلی کاپٹر کی طاقت کا تجربہ کیا۔ ہیلی کاپٹر کا فضائیہ کی روایت کے مطابق واٹر کینن سلامی دے کر استقبال کیا گیا۔ وزیر دفاع نے پہلے ‘سروا دھرم پوجا’ کی اور اس کے بعد ایل سی ایچ کے سامنے کھڑے ہو کر تصویر کھنچوائی۔ اس جنگی ہیلی کاپٹر کو ‘پرچنڈ’ کے نام سے جانا جائے گا۔
آج ایچ ایل سے 04 ہیلی کاپٹر موصول ہوئے۔
پاکستان کی مغربی سرحد کو مزید محفوظ بنانے کے لیے ایل سی ایچ تھانوش کا پہلا اسکواڈرن آج سے راجستھان کے جودھ پور میں شروع کر دیا گیا ہے۔ ایچ ایل سے آج موصول ہونے والے چار ہیلی کاپٹروں کو اس پہلیا سکواڈرن میں تعینات کیا گیا ہے۔ اب اس کے بعد پاکستان کے ساتھ چین کی سرحد کی نگرانی کرنا آسان اور محفوظ ہو جائے گا۔ اس سے دہشت گردوں اور دراندازوں کو روکنے میں بھی مدد ملے گی۔ ہندوستانی فضائیہ کو ایچ اے ایل سے ملنے والے دیگر جنگی ہیلی کاپٹر اس اسکواڈرن میں شامل ہوں گے۔ اس ہیلی کاپٹر کو چینی سرحد پر بھی تعینات کرنے کا منصوبہ ہے۔
سب سے پہلے، ایل سی ایچ کی مذہبی رسومات اداکی گئی
وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے نئے ایل سی ایچ کی سرو دھرم پوجا کرکے فضائیہ کے بیڑے میں دیسی لائٹ اٹیک ہیلی کاپٹر کی شمولیت کے پروگرام کا آغاز کیا۔ اس کے بعد ہندوستان ایروناٹکس لمیٹڈ کے سی ایم ڈی سی بی اننت کرشنن نے ایل سی ایچ کی کلیدی چین وزیر دفاع کو سونپی۔ راج ناتھ سنگھ نے اسے ایئر چیف وی آر چودھری کے حوالے کیا اور مقامی لائٹ اٹیک ہیلی کاپٹر کو آئی اے ایف کے بیڑے میں شامل کرنے کی رسمی کارروائیاں مکمل کیں۔ اس موقع پر حسب روایت ایل سی ایچ کو ‘واٹر کینن سلامی’ دی گئی۔ وزیردفاع نے یونٹ 143 کے کمانڈنگ آفیسر کے ساتھ 15 منٹ تک اڑان بھری اور ایل سی ایچ کے سامنے کھڑے ہو کر تصویریں بھی کھنچوائیں۔
جودھ پور میں ایل سی ایچ کا یہ پہلا اسکواڈرن
وزیر اعظم نریندر مودی نے گزشتہ سال 19 نومبر کو ‘ قومی دفاعی انحصار’ کے موقع پر ہندوستانی فضائیہ کے سربراہ وی آر چودھری کو ہلکے وزن کے لڑاکا ہیلی کاپٹر کا ماڈل سونپا تھا۔ ملک کے سب سے بڑے اور طاقتور جودھ پور ایئر فورس اسٹیشن پر دیسی حملہ آور ہیلی کاپٹروں کی تعیناتی سے پاکستان کے ساتھ مغربی سرحد کو مزید مضبوط کیا جائے گا۔ جودھ پور میں تعینات لائٹ کامبیٹ ہیلی کاپٹر کے ایل سی ایچ ایئر فورس کے ورڑن کا یہ پہلا سکواڈرن ہے۔ ایل سی ایچ مؤثر جنگی کرداروں کے لیے جدید ٹیکنالوجیز اور خاموش خصوصیات کو شامل کرتا ہے۔
پاکستان اور چینی بارڈرپرنظر رکھاجاسکے گا۔
8 اکتوبر کو یوم فضائیہ کے موقع پر ہندوستان ایروناٹکس لمیٹڈ (ایچ اے ایل) کی جانب سے فضائیہ کو 10 ہیلی کاپٹر موصول ہوں گے۔ ایچ اے ایل سے پہلے بیچ کے دس ایل سی ایچ کو اس اسکواڈرن میں شامل کیا جائے گا۔ یہ ہیلی کاپٹر پاکستان کے ساتھ ساتھ چین کی سرحد پر بھی نظر رکھیں گے۔ تاہم، دو ایل سی ایچ ہیلی کاپٹر پہلے ہی مشرقی لداخ سے ملحقہ ایل اے سی پر تعینات کیے جا چکے ہیں، اس سے پہلے کہ وہ آج باضابطہ طور پر فضائیہ میں شامل ہوں۔ اسے دشمن کے فضائی دفاع، انسداد بغاوت، تلاش اور بچاؤ، اینٹی ٹینک، کاؤنٹر سرفیس فورس آپریشنز وغیرہ جیسے کرداروں کو پورا کرنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔
اس سے قبل 29 ستمبر کو دیسی ساختہ اور تیار کردہ لائٹ کامبیٹ ہیلی کاپٹر کو ہندوستانی فوج میں شامل کیا گیا تھا۔ پہلا ایل سی ایچ باضابطہ طور پر ہندوستان ایروناٹکس لمیٹڈ (ایچ اے ایل) نے ڈائریکٹر جنرل، آرمی ایوی ایشن کور کے حوالے کیا تھا۔ فوج نے ایل سی ایچ کا پہلا اسکواڈرن یکم جون کو بنگلور میں تشکیل دیا تھا۔ اس اسکواڈرن میں اگلے سال اضافہ کیا جائے گا، تاکہ ایل اے سی پر چین کی سرگرمیوں پر نظر رکھ کر اس کی حرکات کو روکا جا سکے۔ فوج کے مطابق اب وہ مزید 95 ایل سی ایچ خریدے گی۔ ان میں سے سات یونٹ بنائے جائیں گے جن میں سے سات پہاڑی علاقوں پر ہوں گے کیونکہ یہ ہیلی کاپٹر سیاچن کی چوٹی پر بھی اتر سکتا ہے۔
اس کی ضرورت کارگل جنگ کے دوران محسوس کی گئی۔
لائٹ کامبیٹ ہیلی کاپٹر دھرو ہیلی کاپٹر کا ایک ارتقائی شکل ہے۔1999 کی کارگل جنگ کے دوران پہلی بار ایسے حملہ آور ہیلی کاپٹروں کی کمی محسوس کی گئی۔ لائٹ کامبیٹ ہیلی کاپٹر کی زیادہ سے زیادہ رفتار 268 کلومیٹر فی گھنٹہ ہے اور اس کی رینج 550 کلومیٹر ہے۔ یہ ہیلی کاپٹر 3 گھنٹے 10 منٹ تک مسلسل پرواز کر سکتا ہے۔ زیادہ سے زیادہ 6500 فٹ کی بلندی تک جا سکتا ہے۔ اس میں 20 ایم ایم کی بندوق ہے، جو ہوا سے ہوا اور ہوا سے زمین پر حملہ کر سکتی ہے۔ اس کے علاوہ چار ہارڈ پوائنٹس ہیں یعنی راکٹ، میزائل اور بم ایک ساتھ نصب کیے جا سکتے ہیں۔
ہیلی کاپٹر میں ریڈار اور لیزر وارننگ سسٹم ہوتا ہے۔
ٹرائلز کے دوران اس ہیلی کاپٹر نے سیاچن، صحرا، جنگل یا 13 سے 15 ہزار فٹ بلند ہمالیائی پہاڑوں پر پرواز کرنے کی صلاحیت کا مظاہرہ کیا تھا۔ اس ہیلی کاپٹر میں نصب جدید ترین ایویونکس سسٹم سے دشمن نہ تو چھپ سکتا ہے اور نہ ہی حملہ کر سکتا ہے کیونکہ یہ سسٹم میزائل کا نشانہ بنتے ہی اس ہیلی کاپٹر کو آگاہ کر دیتا ہے۔ اس کے علاوہ اس میں ریڈار اور لیزر وارننگ سسٹم بھی ہے۔ شیف اور فلیئر ڈسپنسر بھی ہیں، تاکہ دشمن کے میزائلوں اور راکٹوں کو ہوا میں تباہ کیا جا سکے۔

About the author

Taasir Newspaper