Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

کھیل

دراوڈ کو مختصر ترین فارمیٹ میں بھارتی ٹیم کا کوچ نہیں بننا چاہیے: دانش کنیریا

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 12th Nov.

نئی دہلی، 12 نومبر:2022 کے ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ سے ہندوستان کے باہر ہونے کے بعد پاکستان کے سابق اسپنر دانش کنیریا نے کہا ہے کہ راہل دراوڈ کو مختصر ترین فارمیٹ میں ہندوستانی ٹیم کا کوچ نہیں بننا چاہیے۔ کنیریا کا خیال ہے کہ دراوڈ کے پاس ‘ذہنیت’ کا فقدان ہے جو ہندوستانی ٹیم کو T20 ورلڈ چمپئن بننے کے لیے رہنمائی کے لیے درکار ہے۔2021 کے T20 ورلڈ کپ کے بعد روی شاستری کے استعفیٰ کے بعد دراوڈ کو ہندوستانی ٹیم کے کوچ کی ذمہ داری سونپی گئی تھی۔ کوچ کا عہدہ سنبھالنے کے بعد سے دراوڈ نے ہندوستانی ٹیم میں خاص طور پر بلے بازوں میں ایک نیا انداز قائم کرنے کی کوشش کی ہے۔ تاہم ان کی یہ کوشش ناکام ہوگئی اور ٹیم انگلینڈ کے ہاتھوں سیمی فائنل میں ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ سے باہر ہوگئی۔
کنیریا نے اپنے یوٹیوب چینل پر ایک ویڈیو میں ہندوستان کی T20 ٹیم کے کوچ کی حیثیت سے دراوڈ کی ساکھ پر سوال اٹھایا۔ سابق پاکستانی اسپنر کو نہیں لگتا کہ ان کے پاس مختصر ترین فارمیٹ میں ہندوستانی ٹیم کو کامیاب بنانے کے لیے ضروریصلاحیت ہے۔کنیریا نے کہا، “اگر آپ نے رشبھ پنت کو چن لیا ہے تو آپ کو ان کا استعمال کرنا چاہیے تھا، کے ایل راہل کے آؤٹ ہونے کے بعد انہیں بیٹنگ پر بھیجا جانا چاہیے تھا۔ وہ 19ویں اوور میں بلے بازی کے لیے آئے تھے۔” تب وہ کیا کر سکتے ہیں ؟ اس ذہنیت کو بدلنا ہوگا۔ راہل دراوڈ کو اپنی ذہنیت کو بدلنا ہوگا۔ بحیثیت کرکٹر راہل ٹیسٹ فارمیٹ میں بہترین تھے۔ انہیں صرف ٹیسٹ میں ہندوستان کی کوچنگ کرنی چاہئے لیکن ٹی ٹوئنٹی میں نہیں ۔کنیریا نے کہا، “دراوڈ میں کوئی جارحیت نہیں ہے۔ وہ دباؤ کو ہینڈل کرنا نہیں جانتے۔ وہ ایک پرسکون کرکٹر تھے جو سارا دن کریز پر رہ سکتا تھا۔ لیکن، یہ ٹی 20 کرکٹ ہے۔ یہاں، آپ کو دباؤ کو ہینڈل کرنا پڑتا ہے۔ ۔ لیکن، آپ T20 میں دباؤ نہیں جھیل سکتے۔ کنیریا نے ٹیم میں راہل تیوتیا، محمد سراج، عمران ملک وغیرہ جیسے کئی کھلاڑیوں کی عدم موجودگی پر بھی سوال اٹھایا۔انہوں نے کہا، “راہل ڈراوڈ نے بھی ورلڈ کپ سے پہلے بڑی غلطیاں کیں۔ انتظامیہ کی طرف سے مختلف ٹیمیں بنائی گئیں، لیکن تیاری صفر تھی۔ راہل تیوتیا کہاں تھے؟ اگر وہ ہوتے تو ہندوستان کے پاس ایک آل راؤنڈر ہوتا، جو کھیل کھیل سکتا تھا، شاداب خان جیسا کردار ادا کر سکتا تھا۔ وہ باؤلنگ کرتا ہے اور بلے باز کے طور پر ایک متاثر کن کھلاڑی ہو سکتا ہے۔ آپ نے اس میں سرمایہ کاری نہیں کی۔ آپ کا باؤلنگ کا شعبہ کمزور تھا لیکن آپ نے کچھ نہیں کیا۔ محمد سراج ہو سکتا تھا۔ ایکس فیکٹر جبکہ عمران ملک کو بھی منتخب نہیں کیا گیا۔ آسٹریلیا میں آپ کو تیز گیند بازوں کی ضرورت ہے۔ وہاں آپ کو 120-130 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے بولرز کی ضرورت نہیں ہے۔ ہندوستانی کرکٹ ٹیم کو اب ری سیٹ کا بٹن دبانا ہوگا اور 2024 میں منعقد ہونے والے T20 ورلڈ کپ کے اگلے ایڈیشن کے لیے کچھ نوجوان کھلاڑیوں کو تیار کرنا ہوگا۔

About the author

Taasir Newspaper