Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

دنیا بھر سے

اوپیک محتاط، 2023 میں تیل کی طلب میں اضافے کی اپنی پیشن گوئی پر قائم

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 14 th Dec.

ریاـض،14دسمبر: پٹرولیم برآمد کرنے والے ممالک کی تنظیم (اوپیک) نے منگل کو 2022 اور 2023 میں عالمی سطح پر خام تیل کی طلب میں اضافے کی اپنی پیش گوئیوں پر قائم رہنے کے بعد اسے کئی بار کم کرنے کے بعد کہا کہ اقتصادی سست روی “کافی واضح ہے” اس میں ممکنہ اضافہ ہو سکتا ہے۔ چین کی جانب سے کرونا وائرس سے نمٹنے کے لیے “زیرو کوویڈ” کی پالیسی کو نرم کرنے کے بعد تیل کی طلب میں اضافہ ممکن ہے۔’اوپیک‘ نے ایک ماہانہ رپورٹ میں کہا ہے کہ 2023 میں تیل کی طلب میں 2.25 ملین بیرل یومیہ یا تقریباً 2.3 فیصد اضافہ ہو گا۔ 2022 میں 2.55 ملین بیرل یومیہ اضافے کے بعد دونوں پیش گوئیاں گزشتہ ماہ سے تبدیل نہیں ہوئیں۔OPEC اب 2023 کی پہلی سہ ماہی میں ایک صاف ستھری متوازن مارکیٹ دیکھ رہا ہے۔ اس نے ایک ماہ قبل پیش گوئی کی تھی۔ گروپ کے تازہ ترین اعداد وشمار خام تیل کی قیمتوں میں گذشتہ ہفتے 11 فیصد کی کمی کے بعد سامنے آئے ہیں جس میں ایندھن کی ناقص کھپت کے خدشات شامل ہیں۔چین کی انسداد کوویڈ اقدامات کو چھوڑنے کی صلاحیت کے بارے میں شکوک و شبہات بڑھ رہے ہیں اور ایسے اشارے مل رہے ہیں کہ امریکا میں مالیاتی سختی جاری ہے۔ دریں اثنا روسی تیل کی برآمدات پر نئی عائد پابندیوں نے سپلائی میں خاطر خواہ کمی نہیں کی ہے۔ اوپیک نے توقع ظاہر کی ہے کہ اس عرصے میں اس کے خام تیل کی عالمی طلب پہلے کی توقع سے تین لاکھ 80 ہزار بیرل یومیہ کم رہے گی۔ویانا میں قائم اوپیک نے کہا کہ جیسے جیسے 2022 جا رہا ہے، عالمی اقتصادی ترقی میں حالیہ سست روی اس کے تمام دور رس اثرات کے ساتھ کافی حد تک واضح ہو گئی ہے۔ توقع ہے کہ سال 2023 بہت سی غیر یقینی صورتحال میں گھرا رہے گا، جس میں چوکسی اور احتیاط کی ضرورت ہے۔اوپیک اور اس کے “اوپیک پلس” کے شراکت داروں نے تقریباً 2 ملین بیرل یومیہ پیداوار میں کٹوتی نافذ کی، جس کا اعلان اکتوبر میں کیا گیا تھا۔ اوپیک کے سیکرٹری جنرل ہیثم الغیث نے ہفتے کے آغاز میں کہا تھا کہ اوپیک پلس” معاہدہ عالمی منڈیوں کے توازن کو برقرار رکھنے کے لیے کام کر رہا ہے۔تیل کی قیمتیں اب لندن میں 80 ڈالر فی بیرل سے نیچے ٹریڈ کر رہی ہیں، جو اس سال کے شروع میں پیداواری ممالک کی طرف سے کیے گئے بڑے فائدے میں کمی ظاہر کرتی ہیں۔ اوپیک + کے رکن نائیجیریا نے کہا ہے کہ گروپ قیمتیں 90 ڈالرسے اوپر رکھنا چاہتا ہے۔سعودی عرب اور روس کی سربراہی میں 23 ممالک کے ” اوپیک پلس” گروپ نے اس ماہ کے شروع میں 2023 کے اوائل میں سپلائی کی سطح کو کوئی تبدیلی نہ رکھنے کا فیصلہ کیا تھا، جس سے اس گروپ کو اپنی کٹوتیوں کے اثرات کی پیمائش کے لیے مزید وقت دیا گیا تھا۔

About the author

Taasir Newspaper