Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

دنیا بھر سے

حکام کا 200مظاہرین کی ہلاکت کا اعتراف ،ایرانی صدر نے نظام کا دفاع کیا

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 5 th Dec

تہران ،4دسمبر: ایران کے حکام نے ملک میں جاری مظاہروں کے دوران سیکیورٹی فورسز کے اہلکاروں سمیت 200 افراد کی ہلاکت کا اعتراف کیا ہے جبکہ صدر ابراہیم رئیسی نے موجودہ نظام کا دفاع کرتے ہوئے انسانی حقوق اور آزادی کا ضامن قرار دیا۔غیر ملکی خبر رساں ادارے ’رائٹرز‘ کے مطابق ایران کے صدر ابراہیم رئیسی نے کہا کہ اسلامی ملک انسانی حقوق اور ا?زادی کی ضمانت دیتا ہے جبکہ اقوام متحدہ کے مطابق حکومت مخالف مظاہروں پر کریک ڈاؤن کے نتیجے میں 300 سے زائد افراد اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں۔دوسری جانب، ملک کے سرفہرست سیکیورٹی ادارے نے کہا ہے کہ سیکیورٹی فورسز سمیت 200 سے زیادہ افراد ہلاک ہو چکے ہیں، انسانی حقوق گروپس کی جانب سے دی گئی تعداد کے مقابلے میں یہ تعداد نمایاں طور پر کم بتائی گئی ہے۔22 سالہ مہسا امینی کی اخلاقی پولیس کی حراست میں جاں بحق ہونے کے بعد سے ملک بھر میں تیسرے مہینے بھی مظاہرے جاری ہیں۔رپورٹ میں بتایا گیا کہ یہ مظاہرے 1979 میں اسلامی انقلاب کے بعد اقتدار میں آنے سے لے کر اب تک ایرانی حکومت کے لیے چند بڑے چینلجوں میں سے ایک ہیں۔رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ظالمانہ کریک ڈاؤن کی پرواہ نہ کرتے ہوئے مظاہرین نے سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای کے خلاف نعرے لگائے ہیں، اور بارہا اسلامی حکومت کے خاتمے کا مطالبہ کیا ہے۔ایرانی حکام مظاہروں میں غیر ملک دشمنوں کو ملوث قرار دیتے ہیں، جس میں امریکا، سعودی عرب اور اسرائیل شامل ہیں۔ابراہیم رئیسی نے اراکین اسمبلی سے خطاب میں ایک نامعلوم افریقی وکیل کے حوالے سے کہا کہ ایران کا ا?ئین دنیا بھر میں بہت زیادہ ترقی پسند ہے کیونکہ اس میں جمہوری نظریات شامل ہیں، ان کا کہنا تھا کہ ان کی وکیل سے کئی برس قبل ملاقات ہوئی تھی۔ان کا کہنا تھا کہ آئین اسلامی نظام کا ضامن ہے، اور یہ بنیادی حقوق کے ساتھ آزادی کی بھی ضمانت دیتا ہے۔میزان نیوز ایجنسی نے وزارت داخلہ کی سرکاری سیکیورٹی کونسل کے حوالے سے بتایا کہ فسادات میں اب تک 200 افراد جان سے چلے گئے ہیں۔

About the author

Taasir Newspaper