Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ریاست

خانقاہ کریمیہ بیٹھو شریف گیا میں ہوئی اردو ایکشن کمیٹی گیا شاخ کی میٹنگ

Written by Taasir Newspaper

 

 

اردو والے ہی ہیں اردو کی زبوں حالی کے ذمہ دار، جہیز کو آج بھی کچھ لوگ مانتے ہیں ترقی کا ذریعہ

 گیا ( تاثیر نیوز سروس ) خانقاہ کریمیہ بیتھو شریف گیا میں زیر صدارت پیر طریقت مولانا سید شاہ غفران اشرفی صاحب اردو ایکشن کمیٹی گیا کی ایک اہم میٹنگ مورخہ 25 دسمبر 2022 بروز اتوار  منعقد کی گئی جسمیں بحیثیت مہمان خصوصی پٹنہ سے تشریف لائے ایڈوکیٹ سید محمد عطا الرحمن (صحافی قومی تنظیم) شریکِ بزم رہے ۔ پٹنہ کے علاوہ سہسرام سے تشریف لائے ایڈوکیٹ اختر امام انجم (صحافی تاثیر، پٹنہ)، بیلا سے تشریف لائے ڈاکٹر محمد سلطان احمد ، گیا سے مناظر حسن شاہین، پروفیسر آفتاب عالم اطہر، نوشاد ناداں، مہتاب عالم مہتاب نے بھی اردو کے فروغ اور بقاء کے لئے اپنی خدمات دینے کا وعدہ کیا۔بزم کے جنرل سیکرٹری عرفان مان پوری نے پیش لفظ میں اردو کی بدحالی پر افسوس کیا, خود اردو داں کے گھروں میں اردو بے توجہی کا شکار ہو رہی ہے۔گھر کے بچے اردو سے نابلد ہوتے جا رہے ہیں اور انگریزی اسکول انکی پہلی پسند بنتے جا رہے ہیں۔ انہوں نے سماج اور آج کے ترقی پسند معاشرے میں پھیلتی جا رہی جہیز کی لعنت کے خلاف بھی اہلِ علم حضرات کو آگے آنے کی اپیل کی اور اس برائی کو دور کرنے کی کوشش پر زور دیا تاکہ غریب کی بیٹی و بیٹوں کے گھر آباد ہوسکیں ۔ جناب ڈاکٹر آفتاب عالم اطہر نے اردو اسکولوں میں اردو معلم نہیں ہونے اور ان کی جگہ ہندی اساتذہ تقرری پر افسوس اور تشویش ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ سماج میں اردو دانوں کے باوجود اس پر کوئی آواز  اٹھانے والا نہیں ہے آئیں ہم سب عہد کریں کہ جہاں بھی اردو اساتذہ نہیں ہیں وہاں کی جگہ اردو اساتذہ سے پر کرنے کی عرضداشت کے ساتھ اپنی حکومت سے رجوع کرینگے اور سرکار اور متعلقہ شعبہ کی توجہ اس طرف مبذول کرائیںنگے ۔ جناب نوشاد ناداں نے اپنی بات رکھتے ہوئے کہا کہ آج سے ہم لوگ عہد کریں کہ اردو میں خط و کتابت کا سلسلہ جاری کریں تاکہ ڈاکخانے بھی اس بات پر مجبور ہوں کہ اردو پیون و ڈاکیہ بحال کریں اور اردو میں لکھے خطوط مقررہ جگہ کو موصول ہوں، اپنے گھروں، آفس کی تختیوں پر اردو نام درج کریں، اردو اخبار خرید کر پڑھنے کی عادت ڈالیں، شادی بیاہ و دیگر موقعوں کے دعوت ناموں میں اردو رسم الخط کو عام کریں ۔ جناب ایڈوکیٹ اختر امام انجم سہسرام (بیورو چیف روزنامہ تاثیر اردو پٹنہ) نے کہا کہ اردو کی زبوں حالی کے ذمہ دار اردو والے ہی ہیں، دوسروں کا شکوہ بے معنی ہے، لوگ اردو کی فلاح و بہبود کے لئے ایک اردو اخبار تک نہیں خریدتے اور نہ ہی پڑھتے ہیں، اردو زبان یا اردو اخبار کے فروغ کا جو حال ہے اللہ ہی خیر کرے، بچوں کو کسطرح اردو سے رغبت پیدا کرائیں سوچتے ہی نہیں، جہیز کو آج بھی کچھ لوگ مانتے ہیں اپنی ترقی کا ذریعہ جناب اعجاز مانپوری نے کہا کہ وہ ان تمام باتوں کی تائید کرتے ہیں، جو باتیں اور تجاویز پیش کی گئی ہیں ۔ مہمان خصوصی جناب ایڈوکیٹ سید محمد عطاالرحمن نے اردو کے سلسلے میں ایک جامع تقریر کی اور کہا کہ یہ ہماری ذمہ داری ہے کہ اپنے گھروں کی اصلاح کریں اور اردو کے شجر کی آبیاری کریں ۔ روز مرہ کی زندگی میں اردو کے استعمال کو عام کریں ۔ انھوں نے اپنی تقریر میں جہیز کی لعنت کے حوالے سے بھی کئی اہم  نکتے کی طرف لوگوں کا دھیان مبذول کرایا ۔ انہوں نے کہا کہ آج ہم اپنی بچیوں کو ترقی پسندی اور آزادی کا سبق پڑھا رہے ہیں، آج بچیاں شریعت کے پابند لڑکوں سے شادی کے لئے رضا مند نہیں، نتیجتاً انہیں سروس والا, ڈاکٹر، انجنیئر تو مل جاتا ہے مگر اکثر ایسا دیکھنے کو ملتا ہے کہ ازدواجی زندگی کامیاب نہیں گزرتی اور انجام طلاق تک پہنچ جاتے ہیں ۔ صدر محترم جناب سید شاہ غفران اشرفی صاحب نے اپنے صدارتی خطبے میں فرمایا کہ اپنی زندگی ہی اردو کے لئے وقف کر رکھی ہے، موصوف اپنی ریاست کے مختلف شہروں قصبوں میں مشاعرے اور جلسوں کے ذریعے عوام الناس میں اردو کے تئیں دلچسپی اور اس کی مٹھاس کے زائقے سے روشناس کراتے رہتے ہیں، ہر ماہ ایک ادبی محفل منعقد کر اردو کے فروغ و بقا میں ایک اہم  کردار نبھا رہے ہیں ۔ قابلِ ذکر ہے کہ یومِ اردو کے موقع پر گیا کلکٹریٹ میں یہ بات زور دے کر کہی تھی کہ جو لوگ اردو مقالہ اردو کے علاوہ دوسرے رسم الخط میں پڑھتے ہیں وہ آیندہ خیال رکھیں کہ لکھا ہوا  مقالہ اردو رسم الخط میں ہی ہو، انھوں نے کہا خوشی ہے کہ آج اردو ایکشن کمیٹی ہماری آواز کو حکومت تک پہنچانے کا عہد کر رہی ہے ۔ ساتھ ہی یہ ہدایت دی کہ اپنے اپنے شہروں، صوبوں میں جہاں بھی کوتاہی برتی جارہی ہو اس کی اطلاع اردو ایکشن کمیٹی کو دی جائے اور اس بارے حکومت کی توجہ مبذول کرائی جائے ۔ نشر و اشاعت کے سکریٹری خالق حسین پردیسی نے شرکاء کا شکریہ ادا کیا اور صدر محترم کی اجازت سے نشست کے اختتام کا اعلان کیا ۔

About the author

Taasir Newspaper