Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ریاست

دہلی میں پھل اور سبزیوں کی طرح مل رہا تیزاب ایک لیٹر تیزاب کی بوتل صرف 70 روپے میں کھلے عام فروخت ہو رہی ہیں ، اس پر کوئی پابندی نہیں

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 15 th Dec.

نئی دہلی،15دسمبر: بندا پور، سنتوش پارک، اتم نگر، راجا پوری، مدھو وہار، موہن گارڈن جیسی درجنوں کالونیاں اس جگہ سے تھوڑی ہی دوری پر ہیں جہاں بدھ کو موہن گارڈن علاقے میں موٹر سائیکل سوار نوجوانوں نے ایک نابالغ لڑکی کے چہرے پر تیزاب پھینک دیا۔ صبح ان کالونیوں میں بہت سی دکانیں ہیں جہاں تیزاب آسانی سے دستیاب ہے۔ تاہم اگر آپ ’تیزاب‘ مانگیں گے تو آپ کو کچھ نہیں ملے گا اور آپ کو انکار کر دیا جائے گا کہ ہمارے پاس تیزاب نہیں ہے، لیکن اگر آپ کہتے ہیں کہ آپ بیت الخلا ء صاف کرنا چاہتے ہیں، تو کیا آپ کو اس کے لیے تیزاب کی قسم کی کوئی چیز ملے گی؟ کہ ٹوائلٹ ٹھیک سے صاف ہو جائے گا، تو آپ کو آسانی سے مل جائے گا۔ کچھ لوگ تو ان کالونیوں میں سائیکلوں پر تیزاب کی بوتلیں کھلے عام فروخت کرتے بھی نظر آئیں گے۔ ایک لیٹر تیزاب کی بوتلیں سڑکوں پر صرف 70 روپے میں کھلے عام فروخت ہو رہی ہیں اور اس پر کوئی پابندی نہیں۔وشواس پارک میں گروسری کی دکان پر’تیزاب‘ مانگنے پر دکاندار نے پہلے تو انکار کر دیا لیکن جب ٹوائلٹ صاف کرنے کے لیے’تیزاب‘ قسم کی کوئی چیز دینے کو کہا تو دکاندار نے فوراً تیزاب کی بوتل اٹھا کر اس کے سامنے رکھ دی۔ یہی نہیں، اس نے اس بوتل کو کھلے عام لے جانے سے انکار کر دیا اور اسے اخبار میں لپیٹنے کو کہا۔ تیزاب سے بھری اس بوتل کی قیمت صرف 50 روپے بتائی گئی تھی۔ کچی کالونیوں میں ایسے درجنوں گروسری اسٹورز کے علاوہ ہارڈ ویئر کی دکانوں پر تیزاب آسانی سے دستیاب ہے۔قرول باغ کے رائیگر پورہ اور آس پاس کے علاقوں میں بھی تیزاب آسانی سے دستیاب ہے جہاں زیورات کی صفائی اور پالش کا کام کیا جاتا ہے۔ یہاں چھوٹے گھروں میں تیزاب کے بڑے کنستر رکھے جاتے ہیں۔ جن جگہوں پر گاڑیوں کی بیٹریاں ری چارج کرنے یا ٹھکانے لگانے کی دکانیں ہیں وہاں تیزاب بھی خریدا اور فروخت کیا جاتا ہے۔ تاہم ہر کوئی ان جگہوں پر جا کر تیزاب نہیں لے سکتا۔ واقفیت کے بعد ہی آپ یہ حاصل کر سکتے ہیں۔ پرانی دہلی کے لال کوان اور تلک بازار میں آپ جس قسم اور مقدار میں تیزاب چاہتے ہیں، آپ آسانی سے چھپ کر حاصل کر سکتے ہیں۔ تاہم کیمیکل مارکیٹ کے دکانداروں کا دعویٰ ہے کہ وہ تیزاب ہر کسی کو فروخت نہیں کرتے۔ تیزاب صرف ان کو فروخت کیا جاتا ہے جن کے پاس لائسنس ہے۔پرانی دہلی کے کھاری باولی میں واقع کیمیکل مارکیٹ کے دکانداروں کا کہنا ہے کہ تیزاب تین طرح سے بنتا ہے۔ ایک نمک کے مرکب کے ساتھ، دوسرا گندھک کے مرکب کے ساتھ اور تیسرا نائٹرک ایسڈ کے مرکب کے ساتھ۔ سلفیورک ایسڈ بنیادی طور پر پیتل کے زیورات، برتنوں اور بتوں کو صاف کرنے کے لیے استعمال ہوتا ہے۔ اس کی خاص طور پر کالجوں اور ڈیری لیبز میں ضرورت ہے۔ سونے، چاندی اور تانبے کو پالش کرنے کے لیے استعمال ہونے والا تیزاب سالٹ پیٹر (نائٹرک ایسڈ) کا مرکب ہے اور یہ سب سے خطرناک ہے۔ نمک والے تیزاب زیادہ جلن کا سبب بنتا ہے۔ یہ عام طور پر ٹوائلٹ کلینر کے طور پر استعمال ہوتا ہے۔

About the author

Taasir Newspaper