Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ریاست

راجندر مشرا کالج میں انڈین کونسل آف سوشل سائنس ریسرچ، نئی دہلی کے زیر اہتمام متھیلا میں سماجی اقتصادی حالت اور ترقی کے موڈ پر دو روزہ قومی سیمینار کا افتتاح،

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 16 th Dec.

سہرسہ (سالک کوثر امام)راجندر مشرا کالج سہرسہ میں انڈین کونسل آف سوشل سائنس ریسرچ، نئی دہلی کے زیر اہتمام متھیلا میں سماجی اقتصادی حالت اور ترقی کے موڈ پر دو روزہ قومی سیمینار کا افتتاح، بی این ایم یو مدھے پورہ کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر آر کے پی رمن، وائس چانسلر اور چانسلر پروفیسر۔  ڈاکٹر ابھا سنگھ نے مشترکہ طور پر کیا۔  پرتاپ یونیورسٹی جے پور کے سابق وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر اوگر موہن جھا، ٹی پی کالج مدھے پورہ کی پروفیسر ڈاکٹر وینا کماری اور کالج کے پرنسپل پروفیسر ڈاکٹر ارون کمار خان کے ساتھ جنوبی ایشیا کے ڈاکٹر دیو ناتھ پاٹھک نے بھی شرکت کی۔ نیشنل سیمینار میں بطور ریسورس پرسن یونیورسٹی اور قومی سمینار کے کوآرڈینیٹر ڈاکٹر للت نارائن مشرا اور آرگنائزنگ سکریٹری ڈاکٹر کویتا کماری نے مشترکہ طور پر چراغ روشن کر پروگرام کا افتتاح کیا۔  کالج کی طرف سے تمام معزز مہمانوں کو پاگ، چادر اور گلدستے سے نوازنے کے بعد، انہیں سیمینار سے متعلق تصاویر کے ساتھ یادگاری نشانات دیے گئے۔  قومی سیمینار کے مہمان خصوصی یونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر آر کے پی رمن نے اپنے خطاب میں متھیلا خطے کی سماجی، ثقافتی اور سیاسی وراثت کو پیش کیا۔اس کے ساتھ ساتھ اس علاقے کی ترقی کے لیے زرعی شعبے، گھریلو صنعت، ڈیری انڈسٹری اور مقامی وسائل کے ذریعے ترقی کی بات کی۔یونیورسٹی کے پرو وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر ابھا سنگھ نے متھیلا پینٹنگ، متھیلا ہینڈی کرافٹ انڈسٹری کو فروغ دینے کی وکالت کی اور کہا۔ آج اس صنعت میں شامل ہو کر خواتین نے اپنی شرکت کو یقینی بنا کر اپنی سماجی و اقتصادی حیثیت کو بھی بہتر بنایا ہے۔  پرتاپ یونیورسٹی جے پور کے سابق وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر اوگر موہن جھا نے اپنے خطاب میں متھیلا خطہ کے دیہات کی بدلتی ہوئی سمت اور حالت کو بیان کیا اور ساتھ ہی کہا کہ ترقی کے لیے دیہی وسائل اور سیلاب پر قابو پانا ضروری ہے۔ سارک یونیورسٹی دہلی سے آئے دیو ناتھ پاٹھک نے متھیلا خطے کی سماجی ساخت کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ اس علاقے کے سماجی مسائل کو دور کرکے ہی ترقی ممکن ہے۔  انہوں نے ذات پات سے پاک سماج اور ایک پڑھے لکھے سماج کے ذریعے ترقی کا رسم الخط لکھنے کی بات کی۔ٹی پی کالج مدھے پورہ کے ہندی شعبہ سے آئی ہوئی پروفیسر ڈاکٹر وینا کماری نے متھلی کی اہمیت، متھیلا خطے کی زبان اور اس کی اہمیت کو تفصیل سے بتایا۔  کالج کے پرنسپل پروفیسر خان نے اس موقع پر کہا کہ اس طرح کے قومی سیمینار کے انعقاد سے سماجی علوم سے وابستہ تعلیمی سکالرز اور ریسرچ طلباء میں علم کی ترسیل اور سائنسی رویہ کو فروغ دینے میں مدد ملے گی۔  انہوں نے متھیلا خطہ کے فلسفہ اور ثقافتی اقدار کے ساتھ ترقی کے بارے میں بات کی۔آرگنائزنگ کمیٹی کے کوآرڈینیٹر ڈاکٹر للت نارائن مشرا نے کہا کہ اس طرح کے قومی سمینار کے انعقاد سے معاشرے کے لوگوں کی توجہ مسائل پر مبذول کرانی ہوگی۔ علاقائی تفاوت اور علاقائی ترقی سماجی مسائل کو دور کرکے ہی ممکن ہے۔  انہوں نے ذات پات سے پاک سماج اور ایک پڑھے لکھے سماج کے ذریعے ترقی کا رسم الخط لکھنے کی بات کی۔ٹی پی کالج مدھے پورہ کے ہندی شعبہ سے آئی ہوئی پروفیسر ڈاکٹر وینا کماری نے متھلی کی اہمیت، متھیلا خطے کی زبان اور اس کی اہمیت کو تفصیل سے بتایا۔  کالج کے پرنسپل پروفیسر خان نے اس موقع پر کہا کہ اس طرح کے قومی سیمینار کے انعقاد سے سماجی علوم سے وابستہ تعلیمی سکالرز اور ریسرچ طلباء میں علم کی ترسیل اور سائنسی رویہ کو فروغ دینے میں مدد ملے گی۔  انہوں نے متھیلا خطہ کے فلسفہ اور ثقافتی اقدار کے ساتھ ترقی کے بارے میں بات کی۔آرگنائزنگ کمیٹی کے کوآرڈینیٹر ڈاکٹر للت نارائن مشرا نے کہا کہ اس طرح کے قومی سمینار کے انعقاد سے معاشرے کے لوگوں کی توجہ مسائل پر مبذول کرانی ہوگی۔علاقائی تفاوت اور علاقائی ترقی کی طرح جس سے پالیسی سازوں کے لیے اس سمت میں حل تلاش کرنے میں آسانی ہوگی۔آرگنائزنگ سکریٹری ڈاکٹر کویتا نے کہا کہ یہ قومی سمینار یقیناً مختلف سماجی مسائل، علاقائی ترقی اور علاقائی ترقی کو اجاگر کرتے ہوئے اس کے مناسب حل پر ماہرین تعلیم اور لوگوں کی توجہ مبذول کرائے گا۔ اس موقع پر ایس این کالج کے ڈاکٹر اشوک سنگھ کی کتاب کا اجراء بھی کیا گیا، اسٹیج کی نظامت ڈاکٹر شبھرا پانڈے اور بابر خان نے کی۔  دوسرے سیشن میں دیو ناتھ پاٹھک، سومیت پاٹھک نے اپنے خیالات کا اظہار کیا۔اس موقع پر ڈاکٹر رام نریش سنگھ، سابق پرنسپل کم سنڈیکیٹ ممبر، سینیٹ ممبر رنجن یادو، ڈیولپمنٹ آفیسر لالن ادری، پراکٹر بی این وویکا، سنڈیکیٹ ممبر کیپٹن گوتم۔ اس موقع پر سنٹرل یونیورسٹی گیا کے سومیت پاٹھک، شعبہ تاریخ کے سی پی سنگھ، ویمنس کالج کے رانا سنیل سنگھ، ڈاکٹر پردیپ چند جھا کے علاوہ پروفیسر بھی موجود تھے۔  ڈاکٹر امرناتھ چودھری، ڈاکٹر موہانی موہن خان، ڈاکٹر بی این جیسوال، ڈاکٹر بی ڈی چودھری، ڈاکٹر کشور ناتھ جھا، اربند چودھری، ڈاکٹر اندرا کانت جھا، ڈاکٹر راجیو کمار جھا، ڈاکٹر رتنیشور جھا، ڈاکٹر سپریا۔ کشیپ، ڈاکٹر سندھو کماری، ڈاکٹر پرتیشتھا کماری، ڈاکٹر ڈیزی کماری، ڈاکٹر آلوک کمار، ڈاکٹر اکشے کمار چودھری، ڈاکٹر وینا، ڈاکٹر للتو کمار، ڈاکٹر رینو کماری، ڈاکٹر پریتی کماری، ڈاکٹر ریتا۔ کماری، ڈاکٹر گوری کماری، ڈاکٹر ہیرا کماری، ڈاکٹر راما کماری، ڈاکٹر شویتا شرن، ڈاکٹر آلوک کمار، ڈاکٹر ہریت کرشنا، ڈاکٹر کملا کانت جھا، ڈاکٹر سمیت کمار، ڈاکٹر سمنت کمار، ڈاکٹر بلو۔ ، سشیل کمار جھا، سمیت کمار مشرا، مہانند مشرا، رمن شاہ موجود تھے۔

About the author

Taasir Newspaper