Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ملک بھر سے

مسلم اور قبائلی تحفظات کو پارلیمنٹ میں موضوع بحث بنائیں: کے سی آر

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 8 th Dec.

حیدرآباد ، 07 دسمبر : وزیرِ اعلیٰ کے سی آر نے تلنگانہ کے ساتھ قدم قدم پر ہونے والی ناانصافیوں اور مرکز کی انتقامی کارروائیوں کو پارلیمنٹ کے سرمائی سیشن میں موضوع بحث بنانے اور جائز حقوق کے لئے بڑے پیمانہ پر احتجاج درج کرانے کا ٹی آر ایس کے ارکان پارلیمنٹ کو مشورہ دیا۔ مرکزی حکومت کے آمرانہ پالیسیوں ، قومی تحقیقاتی ایجنسیوں کی ہراسانیوں کو دونوں ایوانوں میں اٹھانے کی ٹی آر ایس کے ارکان پارلیمنٹ ارکان راجیہ سبھا کو ہدایت دی۔ تلنگانہ کے مفادات کا تحفظ کرنے پارلیمنٹ کی کارروائیوں میں رکاوٹیں پیدا کرنے کی ضرورت پڑھنے پر اجلاسوں کا بائیکاٹ کرنے سے بھی گریز نہ کرنے پر زور دیا۔ ٹی آر ایس کے ارکان اسمبلی کی خریدی کے معاملہ کو پارلیمنٹ میں موضوع بحث بناتے ہوئے بی جے پی کے اصلی چہرہ کو ملک کے عوام کے سامنے آشکار کرنے کے رہنمایانہ خطوط جاری کئے۔ چہارشنبہ سے پارلیمنٹ اجلاس کا آغاز ہورہا ہے جس کے پیش نظر چیف منسٹر کے سی آر نے پرگتی بھون میں ٹی آر ایس کے ارکان پارلیمنٹ ارکان راجیہ سبھا کا اجلاس طلب کیا۔ اس اجلاس میں ٹی آر ایس کے ورکنگ پریسیڈنٹ کے ٹی آر پارلیمانی پارٹی کے قائد ڈاکٹر کے کیشو راو ، لوک سبھا ٹی ار ایس پارٹی کے قائد ناما ناگیشور راو کے علاوہ دوسروں نے شرکت کی۔ چیف منسٹر کے سی آر نے کہا کہ تلنگانہ تیزی سے ترقی کرنے والی ریاست ہے۔ تلنگانہ سے تعاون کرنے کے بجائے مرکزی حکومت ناانصافی کر رہی ہے۔ امتیازی سلوک کرتے ہوئے ریاست کی ترقی میں رکاوٹ بننے کی کوشش کر رہی ہے۔ مرکزی حکومت کی غیر ضروری تحدیدات کی وجہ سے جاریہ مالیاتی سال تلنگانہ کو 40 ہزار کروڑ کی آمدنی سے محروم ہونا پڑ رہا ہے۔ ساتھ ہی ارکان اسمبلی کو خرید کر ٹی آر ایس کو اقتدار سے بیدخل کرنے کی سازش تیار کی تھی۔ مرکزی حکومت کی تلنگانہ سے ناانصافیوں ، تقسیم آندھراپردیش کے وعدوں پر عدم عمل آوری۔ بی جے پی کے دیوالیہ پن کی سیاست کے علاوہ دیگر مسائل پر بڑے پیمانہ پر ناراضگی کا اظہار کرنے پر زور دیا۔ ایوانوں اور ایوانوں کے باہر بھی اپنے احتجاج کو برقرار رکھنے کی ہدایت دی۔ ہم خیال اپوزیشن جماعتوں کے ساتھ احتجاج کو جاری رکھنے ضامن روزگار اسکیم کے عمل میں رکاوٹیں اور معاشی معاملت میں کسی بھی قسم کا سمجھوتہ نہ کرنے کی ہدایت دی۔ قومی تحقیقاتی ایجنسیوں ای ڈی ، سی بی آئی ، انکم ٹیکس کے دھاؤں اور ہراسانیوں کے خلاف آواز اٹھنانے پر زور دیتے ہوئے کہا کہ ارکان اسمبلی کی خریدی کو بے نقاب کرنے کرنے پر جوابی کارروائیوں کے طور پر قومی تحقیقاتی ایجنسیوں کے دھاوے پڑ جانے کا دعویٰ کیا۔ ابھی تک ملک میں کئی غیر بی جے پی حکومتوں اقتدار سے محروم کیا گیا۔ مزید کئی ریاستوں میں اس طرح کی سازش پر عمل کیا جارہا ہے۔ اس معاملہ میں ہم خیال اپوزیشن جماعتوں کے ساتھ احتجاجی حکمت عملی کو قطعیت دینے کا ٹی آر ایس کے ارکان پارلیمنٹ کو مشورہ دیا۔ پارلیمنٹ کی نئی عمارت کو امبیڈکر کے نام سے موسوم کرنے کا مطالبہ کرنے ، قبائلی ، مسلم تحفظات میں توسیع دینے ، بی سی طبقات کی فلاح و بہبود کیلئے مرکز میں علحدہ وزارت تشکیل دینے کیلئے اسمبلی میں جو قرارداد منظور کی گئی ہے ، اس پر عمل کرنے کیلئے مرکز پر دباؤ ہٹانے کی بھی پیش نظر تلنگانہ کے ساتھ ملک کے مسائل پر بھی ایوانوں میں آواز اٹھانے کا مشورہ دیا.

About the author

Taasir Newspaper