Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ملک بھر سے

ممبئی فسادات: 30سال بعد بھی مظلومین انصاف سے محروم

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 7 th Dec.

ممبئی، 6دسمبر :ممبئی میں 6دسمبر کو اجودھیا میں بابری مسجد کی شہادت کے بعد ہونے والے دسمبر 1992 اور جنوری 1993 میں دو دور کے خونریز فرقہ وارانہ فسادات کے سلسلے میں سری کرشنا کمیشن رپورٹ کامقدمہ ایک عرصہ سے سپریم کورٹ میں التواء کا شکاررہا۔ وکیل شکیل احمد شیخ کی ایک عرضی پر سپریم کورٹ نے مہاراشٹر حکومت کو حکم دیا ہے کہ جو مظلومین اورمتاثرین مالی امداد سے محروم رہ گئے اور جوفساد میں لاپتہ ہیں،ان کی تلاش کے ساتھ ہی پسماندگان کو معاوضہ دیاجائے۔اطلاع کے مطابق ریاستی حکومت نے فی الحال اس ضمن میں کوئی اہم اقدام نہیں کیا ہے اور نہ اسے گمشدہ افراد کی تلاش میں کوئی دلچسپی نظر آتی ہے۔واضح رہے کہ سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد بھی سرکاری سطح پر اور نہ ہی عوامی سطح پر کوئی سرگرمی مظلوموں کو انصاف دلانے کیلئے نظرآرہی ہے۔وقت کی ضرورت ہے کہ ان متاثرین کو انصاف دلانے کے لیے اس عدالتی کوشش کو آگے بڑھایا جائے، کیونکہ فی الحال اس معاملہ میں کسی کو کوئی دلچسپی نہیں ہے اور مظلومین انصاف کے لئے ترس گئے ہیں جن میں ایک بے قصور اور پولیس کی گولی کا شکار بنے رفیق ماپکر ہیں جن کے پاؤں میں گولی لگی تھی۔ رفیق ماپکر جوکہ وڈالا کی ہلال مسجد میں نمازیوں پر ہونے والی اندھادھند پولس فائرنگ میں زخمی ہوگئے تھے اور عدالت کے چکر لگا لگا کر تھک چکے ہیں۔لیکن انہیں انصاف نہیں ملا ہے، انہوں نے رفیع احمد قدوائی مارگ پولیس اسٹیشن سے وابستہ انسپکٹر نکھل کاپسے کے خلاف مقدمہ دائر کیا تھا اور 2016 میں سیشن کورٹ نے مقدمہ خارج کردیا تھا۔حالانکہ کاپسے کا نام جانبداری اور ناانصافی کرنے بلکہ لوٹ مار میں شامل پولیس اہلکاروں کی فہرست میں شامل ہے اور یہ جسٹس بی این سری کرشنا نے اپنی رپورٹ میں جاری کی ہے۔ دوسری جانب کاپسے کے خلاف کارروائی کے بجائے اسے ترقی دے دی گئی ہے۔عروس البلاد ممبئی میں اجودھیا میں 6دسمبر کوبابری مسجد کی مسماری کے بعداور پھر جنوری 1993میں دوسرے دور کیخونریز فسادات کو تقریباً 30سال گزرچکے ہیں،جسٹس بی این سری کرشنا کی سربراہی میں قائم کئے گئے تحقیقاتی سری کرشنا کمیشن کی رپورٹ کو حکومت کے روبروپیش کئے ہوئے بھی لگ بھگ 24 برس ہوچکے ہیں۔فاروق ماپکر جو کوکن۔مارکنٹائل بینک میں ملازمت کرتے ہیں، نے اس تعلق سے کہاکہ انہیں سرکاری معاوضہ مل گیا ہے،لیکن بے قصوروں کو بلااشتعال گولی کا نشانہ بنانے والے انسپکٹر کاپسے کو اس کے کیے کی سزا نہیں ملی ہے۔ سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد ہی مختلف سیاسی پارٹیوں اور لیڈروں نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ کمیشن کی اس غیر جانبدارانہ اور منصفانہ رپورٹ کو نافذ کرنے کے ساتھ ساتھ سپریم کورٹ کے ذریعے گمشدہ افراد کی تلاش اور معاوضہ کے لئے اقدام کئے جائیں۔سری کرشنا کمیشن نے دوواقعات کے بارے میں خصوصی طورپر ذکر کیا ہے کہ پولیس نے بے قصوروں کو بے دردی سے گولی ماری تھی،ان میں ایک واقعہ جنوبی ممبئی میں محمدعلی روڈ پر واقع سلیمان عثمان بیکری اور متصل مدرسے میں پیش آیا،اور بے گناہوں کو نشانہ بنایاگیا جبکہ دوسرا واقعہ جنوب وسطی ممبئی میں سیوڑی علاقہ میں واقع ہلال مسجد میں پیش آیا جب نہتے نمازیوں کو گولی سے بھون دیا گیا اور انہیں شرپسند ثابت کرنے کی کوشش کی گئی۔کمیشن نے پولیس افسران اور اہلکاروں کی ایک فہرست شائع کی تھی جس میں کہا گیا تھا،ان پولیس اہلکاروں نے کئی موقعوں پر تعصب کا مظاہرہ کیا جن میں بعد میں ممبئی کے پولیس کمشنر بنائے گئے آرڈی تیاگی سرفہرست تھے،کمیشن کا خیال ہے کہ پولیس کے ذہن میں ایک عام تاثر ہے کہ مسلمان شرپسند ہوتے ہیں اور اس کا اعتراف خصوصی برانچ کے ایک اعلیٰ افسر وی این دیشمکھ نے بھی کمیشن کے سامنے کیا ہے۔

About the author

Taasir Newspaper