Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ریاست

پولیس شردھا قتل کیس میں برآمد کی گئی ہڈیوں کو تحقیقات کیلئے ایمس بھیجے گی

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 17 th Dec.

نئی دہلی،17دسمبر:شردھا کے قتل کیس میں برآمد ہونے والی ہڈیوں کی ڈی این اے رپورٹ شردھا کے والد اور بھائی سے مماثل ہو سکتی ہے، لیکن پھر بھی یہ ثابت نہیں ہو سکا کہ شردھا کا قتل کیا گیا ہے۔ پولیس حکام کا کہنا ہے کہ عدالت میں شردھا کے قتل کو ثابت کرنے کے لیے ہم ان تمام ہڈیوں کو ایمس میں جانچ کے لیے ڈی این اے میچ کے لیے سی بی آئی کے سی ایف ایس ایل کو بھیجیں گے۔پھر ایمس کے ماہرین پولیس کو بتائیں گے کہ گرفتار ملزم آفتاب امین کی ہدایت پر جنگلات سے برآمد ہونے والی ہڈیوں کے بغیر انسان زندہ نہیں رہ سکتا۔ پولیس افسر کا کہنا ہے کہ اس معاملے میں ایک قانونی مسئلہ ہے، جس میں پولیس کو عدالت میں یہ بھی ثابت کرنا ہو گا کہ جنگلات سے برآمد ہونے والی ہڈیاں۔ ان کے بغیر انسان کا زندہ رہنا ممکن نہیں۔ ہڈیوں کے پوسٹ مارٹم اور دیگر تحقیقات کے بعد پولیس کو ایمس سے جو رپورٹ ملے گی، وہ عدالت میں یہ ثابت کرنے کے لیے بہت اہم ہوگی کہ شردھا کی موت ہوئی ہے اور آفتاب نے اسے قتل کیا ہے۔شردھا کے قاتل کے اعتراف کی حمایت کے لیے ایف ایس ایل روہنی کی پولی گراف اور نارکو رپورٹ دے گا، جس میں ملزم آفتاب کی طرف سے اس بات کا اعادہ کیا گیا ہے کہ اس نے شردھا کو قتل کیا۔ ابھی تک پولیس نے نہ تو قتل میں استعمال ہونے والی آری برآمد کی ہے اور نہ ہی شردھا کی کھوپڑی۔ ایسی صورتحال میں ماہر کا کہنا ہے کہ اگر ایمس کے ماہر جنگلات سے ملنے والی ہڈیوں کا جائزہ لیں تو کہا گیا ہے کہ یہ ہڈیاں ہاتھ پاؤں اور جسم کے ایسے حصوں کی ہیں جنہیں کاٹنے کے بعد بھی ان کا ہونا ممکن ہے۔ ایک انسان کا بچنا ہے اگر ایسا ہے تو یہ بات پولیس کے حق میں نہیں ہوگی۔ پولیس کا کہنا ہے کہ ان کے پاس یہ ثابت کرنے کے لیے کافی شواہد موجود ہیں کہ یہ آفتاب ہی تھا جس نے شردھا کو قتل کر کے اس کی لاش کے ٹکڑے کیے تھے۔ لیکن ایمس کی رپورٹ ہمیں عدالت میں ثبوت کی شکل میں اہم مدد دے گی۔ پولیس کو ڈی این اے اور پولی گراف رپورٹ مل گئی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ آفتاب نے اب تک نہ تو اپنے اہل خانہ یا دوستوں سے ملنے کی خواہش ظاہر کی اور نہ ہی جیل حکام کو ایک بار بھی فون کیا۔دہلی کی ساکیت عدالت میں سنیچر کو شردھا کے قتل کے ملزم آفتاب امین پونا والا کی درخواست ضمانت پر سماعت ہونے کا امکان ہے۔ وہ اس وقت عدالتی حراست میں ہے۔ انہوں نے جمعہ کو ضمانت کی درخواست دائر کی تھی۔ شردھا واکر قتل کیس میں پولیس کی نمائندگی کے لیے خصوصی سرکاری وکیل مدھوکر پانڈے اور امیت پرساد کو مقرر کیا گیا ہے۔ دہلی کے لیفٹیننٹ گورنر (ایل جی) وی کے۔ سکسینہ نے دہلی پولیس کی تجویز کو منظور کرتے ہوئے ان دونوں کے ناموں پر مہر لگا دی تھی۔

About the author

Taasir Newspaper