Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ریاست

کرسمس اور نئے سال کے پیش نظرلوگوں کی آمد ورفت میں اضافہ

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 19th Dec.

نئی دہلی،19دسمبر: دہلی ہوائی اڈہ جو پہلے ہی مسافروں کی قطاروں کی وجہ سے سرخیوں میں تھا، اب 20 دسمبر سے کرسمس منانے والوں کی آمدورفت میں اضافہ دیکھنے کو ملے گا۔ اس کے بعد ملک اور بیرون ملک نیا سال منانے والوں کا جانا شروع ہو جائے گا۔ ان تمام باتوں کو مدنظر رکھتے ہوئے T-3 کے ساتھ ساتھ T-2 پر بھی وسائل بڑھانا ہوں گے۔ ورنہ ایسا نہ ہو کہ T-3 پر مسافروں کی قطاریں کم کرنے کے لیے T-2 پر مسافروں کا ہجوم ہو۔ اس کے لیے ماہرین کا کہنا ہے کہ T-3 کی طرح T-2 پر بھی اضافی ایکسرے مشینیں بڑھائی جائیں۔ تبھی آنے والے دنوں میں مسافروں کی بڑھتی ہوئی تعداد کو سنبھالا جا سکے گا۔ ہوائی اڈے کے حکام نے بتایا کہ اس کے بعد سے چوٹی کے اوقات کی چھ پروازوں کو T-3 سے T-2 اور T-1 میں منتقل کیا گیا ہے۔ تب سے صبح T-3 پر قطاروں سے کچھ مہلت ملی ہے۔ تاہم ابھی تک یہ مسئلہ مکمل طور پر حل نہیں ہوا ہے۔ اور ایک دو دن میں کرسمس منانے والوں کا ٹیک آف یہاں سے شروع ہو جائے گا۔ اس کے پیش نظر اگر بروقت تینوں ٹرمینلز پر وسائل میں اضافہ نہ کیا گیا تو مسئلہ مزید سنگین ہو سکتا ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ جب تک ٹرمنل ون کی توسیع کا کام مکمل نہیں ہوتا یہ مسئلہ مکمل طور پر ختم نہیں ہوگا۔ تاہم، T-3 میں پانچ ایکسرے مشینیں بڑھانے کا فائدہ نظر آرہا ہے۔ جس کی وجہ سے مسافروں کی قطاریں کم ہو گئی ہیں اور انہیں تیزی سے اسکریننگ کر کے پرواز کی طرف روانہ کیا جا رہا ہے۔ انٹری پوائنٹس پر بھی قطاریں کم ہو کر T-3 پر آ گئی ہیں۔ تاہم کرسمس اور نئے سال کی آمدورفت میں اضافے کے پیش نظر یہاں انتظامات کو مزید بڑھانے پر زور دیا جا رہا ہے۔ اس میں سی آئی ایس ایف اہلکاروں کی تعداد بڑھانے کے ساتھ ساتھ مسافروں کے بیٹھنے کی گنجائش کو بھی بڑھانا ہوگا۔ کیونکہ چند دنوں میں دھند بھی شروع ہو سکتی ہے۔ ایسے میں اگر یہاں پانچ سات پروازیں بھی تاخیر کا شکار ہوتی ہیں تو مسئلہ بڑا ہو جائے گا۔اہلکار کا یہ بھی کہنا تھا کہ یورپی اور امریکی ممالک میں نصب جدید ایکسرے مشینوں میں چیکنگ کے دوران بیگ سے لیپ ٹاپ یا دیگر الیکٹرانک گیجٹس نکالنے کی ضرورت نہیں ہے۔ ان کی تصویر کا معیار بھی بہت اچھا ہے اور وہ سنگل اور ڈبل سے ایک قدم آگے سامان کی 3D تصاویر دیتے ہیں۔ جسے کسی بھی طرح الٹا یا الٹا کر کے دیکھا جا سکتا ہے۔ تاہم بھارت میں ہوائی اڈے کے لئے بنائے گئے قوانین کی بات ہے۔ اگر یہاں بھی یورپ اور امریکی ممالک کی طرح جدید ایکسرے مشینیں لگائی جائیں تو یہاں بھی ہینڈ بیگ سے سامان نکالے بغیر اس طرح چیک کیا جا سکتا ہے۔ فی الحال ذرائع کا کہنا ہے کہ دہلی ایئرپورٹ کے تینوں ٹرمینلز پر ایکسرے مشینیں نصب ہیں۔ یہ 10 سال سے زیادہ پرانا ہے۔ شرط یہ ہے کہ سامان کی تھری ڈی امیج چھوڑیں، ان میں ڈوئل ویو بھی نظر نہیں آتا۔ جب کہ بیورو آف سول ایوی ایشن (BCAS) کے معیارات بھی کہتے ہیں کہ ایئرپورٹ پر کم از کم ڈوئل امیج ایکسرے مشینیں لگائی جائیں۔ لیکن حیرت کی بات ہے کہ دہلی کے ہوائی اڈے پر ایسی ایکسرے مشینیں نصب ہیں، جن سے صرف ایک ہی نظارہ نظر آتا ہے۔ اس میں بھی سامان کو سیدھا اور چپٹا نہیں چیک کیا جا سکتا۔ اس کی وجہ سے یہاں سامان کی چیکنگ کے دوران زیادہ وقت لگتا ہے۔واضح رہے کہ ایئرپورٹ کے تینوں ٹرمینلز T-1، T-2 اور T-3 پر مسافروں کے ہینڈ بیگج کی جانچ کے لیے نصب ایکسرے مشینیں پرانی ہو چکی ہیں۔ یہاں تک کہ ان کی سکرین میں سامان کی تصویر بھی صاف نظر نہیں آتی۔ اس کے باوجود ان پرانی مشینوں سے مسافروں کے تمام سامان کو چیک کیا جا رہا ہے۔ یہی نہیں بلکہ مسافروں کو چیک کرنے کے لیے استعمال کیے جانے والے ہینڈ میٹل ڈیٹیکٹر بھی بعض اوقات ٹھیک سے کام نہیں کرتے۔ وہ سیکورٹی کے معاملے میں بہت سنجیدہ بتائے جا رہے ہیں۔ اس معاملے میں، ہوائی اڈے کے ایک سینئر اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر این بی ٹی کو بتایا کہ ہاں، یہ سچ ہے کہ تینوں ٹرمینلز پر نصب ایکسرے مشینیں پرانی ہیں۔ ان کے مانیٹرز میں بھی سامان کی تصویر واضح طور پر نظر نہیں آتی۔ کئی بار ہینڈ میٹل ڈیٹیکٹر میں بھی بیپ کی آواز نہیں آتی۔ ان سب کو جدید ٹیکنالوجی کے مطابق فوری طور پر تبدیل کرنے کی ضرورت ہے۔

About the author

Taasir Newspaper