Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ریاست

گھر سے پی ایچ ڈی کا تھیسز غائب

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 28th Dec.

نئی دہلی،28دسمبر:آپ نے بہت سی قیمتی چیزوں کی چوری کے بارے میں تو سنا ہوگا، لیکن کیا آپ نے کبھی کسی اسٹڈی پروجیکٹ کی چوری کے بارے میں سنا ہے؟ اگر نہیں تو آج ہم آپ کو ایسی ہی ایک چوری کے بارے میں بتانے جارہے ہیں۔ یہ معاملہ دہلی کے جی ٹی بی انکلیو علاقے میں پیش آیا۔ جہاں پی ایچ ڈی کی تعلیم حاصل کرنے والے طالب علم کا تھیسز چوری ہو گیا۔ حیرت کی بات یہ ہے کہ چوری کا الزام طالب علم کے سپروائزر پر ہے۔ اس نے ایک طالب علم کے تھیسز پر دوسرے طالب علم کا نام دیا۔ پولیس نے متاثرہ طالب علم کے بیان پر آئی پی سی 406 یعنی اعتماد کی مجرمانہ خلاف ورزی کا مقدمہ درج کیا ہے۔29 سالہ متاثرہ طالبہ جی ٹی بی ہسپتال کے کیمپس میں اپنی بہن کے ساتھ رہتی ہے۔ وہ اصل میں یوپی سے ہے اور انڈین انسٹی ٹیوٹ آف سائنس ایجوکیشن اینڈ ریسرچ، پونے سے پی ایچ ڈی (ریاضی) کر رہی ہے۔ اسے 2016 میں وہاں داخل کرایا گیا تھا۔ سب کچھ ٹھیک چل رہا تھا، پھر 2020 میں کورونا آگیا۔ کالج انتظامیہ نے سب کو گھر جانے کو کہا۔ وہ اپنی بہن کے پاس دہلی آئی تھی۔ اس دوران تمام طلبہ کی آن لائن میٹنگ شروع ہوئی۔ ستمبر 2020 میں اس نے اپنے پی ایچ ڈی اور ایم ایس سی کے لیے انسٹی ٹیوٹ کی ایک فیکلٹی میں شمولیت اختیار کی، جو ان کے سپروائزر تھے۔ اس فیکلٹی کے قریب ایک اور طالب علم M.Sc اور B.Sc کا مقالہ کر رہا تھا۔ گھر سے کام ہونے کی وجہ سے وہ آن لائن میٹنگ میں اپنے سپروائزر کو اپنے تمام کاموں کے بارے میں بتاتی تھی جسے دیگر طلباء بھی سنتے تھے۔ یہ 2021 تک اسی طرح چلتا رہا۔یہ الزام لگایا گیا ہے کہ جو کام متاثرہ طالب علم کا تھا، اسے ایک اور طالب علم نے اپنا ہونے کا دعویٰ کرتے ہوئے ادارے کو جمع کرایا تھا۔ جس پر اس نے ڈگری بھی حاصل کی۔ تاہم 13 اگست 2021 کو سپروائزر نے متاثرہ کو ایک میل میں بتایا تھا کہ متاثرہ اس سارے کام کا اصل مصنف ہے، دوسرے طالب علم نے کام کی کاپی کرکے ہی ڈگری حاصل کی، اس لیے اس وقت متاثرہ نے نہیں اٹھایا۔ کوئی اعتراض؟ کیونکہ وہ جانتا تھا کہ سپروائزر بھی اس میں ملوث ہے اور اسے ڈر تھا کہ کہیں وہ متاثرہ کا مستقبل خراب نہ کر دے۔ اس کے بعد متاثرہ نے دوبارہ کام شروع کر دیا۔ انہوں نے یہ کام جولائی 2022 کے پہلے ہفتے میں مکمل کیا۔ الزام ہے کہ جب یہ کام جمع کرانے کا وقت آیا تو سپروائزر نے دوبارہ یہ کام کسی اور طالب علم کے نام پر جمع کرادیا۔ متاثرہ کو معلوم ہوا تو اس نے سپروائزر کو بلایا۔ پوچھنے پر اس نے کہا کہ اس نے ایک اور طالب علم سے وعدہ کیا تھا۔ اس کے ساتھ ملزم نے کہا کہ اب اگر تم نے زیادہ شکایت کی تو تمہارا مستقبل خراب کر دوں گا۔جب متاثرہ کی بہن کو اس معاملے کا علم ہوا تو اس نے انسٹی ٹیوٹ کے ڈائریکٹر کو تحریری شکایت کی۔ الزام ہے کہ پہلے انسٹی ٹیوٹ نے شکایت واپس لینے کے لیے دباؤ ڈالا تھا۔ لیکن بعد میں تحقیقات کے بعد انسٹی ٹیوٹ نے سپروائزر کو قصوروار پایا۔ ایک سال تک کسی کی نگرانی نہ کرنے کا بھی حکم دیا۔ لیکن متاثرہ کو صرف اس کے ساتھ کام کرنے کو کہا گیا۔ متاثرہ لڑکی اتنی مایوس تھی کہ اس نے گولیاں کھا کر اپنی زندگی کا خاتمہ کرنے کی کوشش بھی کی۔ اس کے بعد معاملے کی اطلاع پولیس کو بھی دی گئی جس پر مقدمہ درج کر لیا گیا ہے۔متاثرہ کی بہن کا کہنا ہے کہ انسٹی ٹیوٹ میں اس طرح بہت سے طالب علموں کا استحصال کیا جا رہا ہے۔ اس میں اب تک 3 طالب علم خودکشی کی کوشش کر چکے ہیں اور ایک اپنی جان بھی گنوا چکا ہے۔ اس کے باوجود سپروائزر کو بچانے کی کوششیں کی جارہی ہیں۔ اس وجہ سے ان کا مطالبہ ہے کہ وزارت اس پورے معاملے میں مداخلت کرے۔

 

About the author

Taasir Newspaper