Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ریاست

یونیورسٹی کے طلباء کے مسائل کے حل کے لیےکنٹرولر آف امتحانات کے ساتھ رجسٹرار کی میٹینگ

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 9 th Dec.

دربھنگہ(فضا امام) 9 دسمبر:-للت نارائن متھلا یونیورسٹی، دربھنگہ کے رجسٹرار پروفیسر مشتاق احمد کی صدارت میں شعبہ امتحانات سے متعلق ایک میٹنگ رجسٹرار کے دفتر میں منعقد ہوئی۔جس میں کنٹرولر آف امتحانات ڈاکٹر آنند موہن مشرا، ڈپٹی کنٹرولر امتحانات ڈاکٹر نوین کمار سنگھ اور ڈپٹی کنٹرولر امتحانات II ڈاکٹر منوج کمار نے شرکت کی۔ رجسٹرار نے روزانہ درخواست کے ذریعے آنے والے طلبہ کے مسائل کے تیزی سے تشخیص UG اور PG کے لیے دو الگ الگ کاؤنٹر قائم کرنے کی بات کہی اور ڈپٹی کنٹرولر امتحانات اول اور دوم خود ان کاونٹرز پر بیٹھ کر طلبہ کے مسائل کا جائزہ لیں گے۔ طلباء کے مسائل کا جائزہ لینے کے بعد فوری کارروائی کی جائے گی۔ اگر طلبہ کی درخواستیں نامکمل ہیں تو اسے لینے کے وقت مکمل درخواستیں دینے کا مشورہ بھی دیا جائے گا، تاکہ ان کے مسائل کو جلد حل کیا جاسکے، کیونکہ دیکھا گیا ہے کہ طلبہ کی جانب سے نامکمل درخواستیں دی جاتی ہیں، جس کی وجہ سے جس سے ان کے مسائل مزید خراب ہو جاتے ہیں۔مسائل کے حل میں مسائل ہوتے ہیں اور ان کے مسائل بروقت حل نہیں ہوتے۔ ایسے طلبہ یونیورسٹی میں بھی آتے ہیں، جن کی مارک شیٹس ان کے کالج بھیج دی گئی ہیں، لیکن کالج کی جانب سے انہیں نہ دینے کی شکایات بھی موصول ہورہی ہیں۔ وائس چانسلر پروفیسر سریندر پرتاپ سنگھ نے اس کو سنجیدگی سے لیا ہے اور اس سلسلے میں یونیورسٹی کی طرف سے تمام منظور شدہ اور ملحقہ کالجوں کے پرنسپلز کے پرنسپلوں کو مطلع کر دیا گیا ہے۔ اگر اب ایسی شکایات موصول ہوئیں تو متعلقہ کالجز کے پرنسپل براہ راست ذمہ دار ہوں گے۔آج کے اجلاس میں کنٹرولر امتحانات اور ڈپٹی کنٹرولرز امتحانات کی ذمہ داریوں کی بھی تصدیق کی گئی۔ طلباء سے بھی اپیل کی گئی کہ وہ اپنے کام کے لیے کسی غیر مجاز ذرائع کا سہارا نہ لیں، کیونکہ یونیورسٹی ان کے مسائل حل کرنے کے لیے پرعزم ہے۔ رجسٹرار پروفیسر مشتاق احمد نے کہا کہ تمام پرنسپلز سے پہلے ہی اپیل کی جا چکی ہے کہ وہ اپنے کالجوں کے طلباء سے درخواستیں وصول کر کے فوری طور پر یونیورسٹی کو بھجوائیں، تاکہ ان کے مسائل جلد حل ہو سکیں۔ لیکن کچھ کالجز کی جانب سے یونیورسٹی کے اس حکم پر عمل نہیں کیا جا رہا ہے جس کی وجہ سے طلباء یونیورسٹی آنے پر مجبور ہیں۔ اس کو سنجیدگی سے لیتے ہوئے وائس چانسلر پروفیسر ایس پی سنگھ نے ان کالجوں کے پرنسپلوں سے معقول انکوائری کا حکم دیا ہے۔

About the author

Taasir Newspaper