Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

دنیا بھر سے

امریکہ میں پہلی بار ٹرانسجینڈر کی سزائے موت پر عمل درآمد

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 4th Jan.

واشنگٹن،4جنوری:امریکہ میں قتل کا جرم ثابت ہونے پر پہلی مرتبہ کسی ٹرانسجینڈر کی موت کی سزا پر عمل درآمد کیا گیا ہے۔خبر رساں ادارے ‘ایسوسی ایٹڈ پریس’ کے مطابق ریاست میسوری میں منگل کو 49 سالہ ٹرانسجینڈر ایمبر میکلالن کو زہر کا انجیکشن لگا کر ان کی زندگی کا خاتمہ کیا گیا۔ایمبر پر 2003 میں اپنی سابق گرل فرینڈ کو قتل کر کے لاش مسسسیپی دریا میں بہانے کا الزام تھا۔ عدالت میں جرم ثابت ہونے پر انہیں موت کی سزا سنائی گئی تھی۔ایمبر نے میسوری کے گورنر مائیک پارسن سے رحم کی اپیل کی تھی جسے گورنر نے منگل کی صبح مسترد کر دیا تھا۔رحم کی اپیل مسترد ہونے پر منگل کو ہی ایمبر کی سزا پر عمل درآمد کرتے ہوئے انہیں زہر کا انجیکشن لگایا گیا جس کے چند منٹ بعد ان کی موت واقع ہو گئی۔اس فائل فوٹو میں سوگوار غمزدہ ہیں جب وہ 15 فروری 2018 کو فلوریڈا کے پارک لینڈ میں مارجوری اسٹون مین ڈگلس ہائی اسکول میں ہونے والی فائرنگ کی یاد میں موم بتیاں روشن کرنے کی تقریب میں شامل ہوئے۔ایمبر نے اپنے آخری تحریری بیان میں لکھا کہ ” میں نے جو کچھ بھی کیا اس پر معافی چاہتی ہوں۔ میں بہت پیار کرنے والی اور دیکھ بھال کرنے والی شخصیت ہوں۔امریکہ کے بیورو آف جسٹس کے اعداد و شمار کے مطابق لگ بھگ 3200 ٹرانسجینڈر ملک کی مختلف جیلوں میں قید ہیں۔امریکہ میں 2022 کے دوران 18 افراد کی سزائے موت پر عمل درآمد کیا گیا ہے۔واضح رہے کہ امریکہ کی بعض ریاستوں میں سزائے موت پر پابندی ہے جب کہ بعض ریاستوں میں سزائے موت کے مجرم کی سزا پر عمل درآمد کیا جاتا ہے۔ریاست میسوری کی جیل میں قید لیونرڈ ٹیلر کی سزائے موت پر عمل درآمد کے لیے سات فروری کی تاریخ مقرر ہے۔ ٹیلر پر اپنی گرل فرینڈ اور تین بچوں کو قتل کرنے کا الزام ہے۔”ڈیتھ پینلٹی انفارمیشن سینٹر” کے اعداد و شمار کے مطابق 70 کی دہائی میں سزائے موت کی بحالی کے بعد سے 1558 افراد کی موت کی سزا پر عمل درآمد کیا جاچکا ہے۔

About the author

Taasir Newspaper