Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ملک بھر سے

انڈمان -نکوبار میں نیتا جی کی یادگار لوگوں کے دلوں میں حب الوطنی کا جذبہجگائے گی: پی ایم مودی

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 23rd Jan.

نئی دہلی، 23 جنوری : وزیر اعظم نریندر مودی نے پیر کے روز کہا کہ نیتا جی سبھاش چندر بوس کی یادگار اور 21 نئے ناموں والے جزیرے نوجوان نسلوں کے لیے مسلسل تحریک کا ذریعہ ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ آزادی کی جدوجہد میں نیتا جی کے تعاون کو دبانے کی کوشش کی گئی لیکن آج دہلی-بنگال سے لے کر انڈمان نکوبار جزائر تک پورا ملک نیتا جی کی وراثت کو بچا کر انہیں خراج عقیدت پیش کر رہا ہے۔نیتا جی سبھاش چندر بوس کے 126 ویں یوم پیدائش کو پراکرم دیوس کے طور پر مناتے ہوئے، وزیر اعظم نے پیر کے روز انڈمان اور نکوبار جزائر کے مرکز کے زیر انتظام علاقے کے 21 سب سے بڑے بے نام جزیروں کا نام ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے پرم ویر چکر جیتنے والوں کے نام پر رکھا۔ وزیر اعظم نے نیتا جی سبھاش چندر بوس جزیرے پر بنائے جانے والے نیتا جی کے لیے وقف قومی یادگار کے ماڈل کی بھی نقاب کشائی کی۔
وزیر اعظم نے پراکرم دیوس پر مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ یہ متاثر کن دن نیتا جی سبھاش چندر بوس کے یوم پیدائش پر ملک بھر میں منایا جاتا ہے۔ انڈمان اور نکوبار جزائر کے لیے آج کا دن ایک تاریخی دن ہے۔ انہوں نے کہا کہ نیتا جی سبھاش چندر بوس کی زندگی کی احترام میں ایک نئی یادگار کا سنگ بنیاد اسی جزیرے پر رکھا جا رہا ہے جہاں وہ ٹھہرے تھے۔ اس دن کو آنے والی نسلیں آزادی کے امرت کال کے ایک اہم باب کے طور پر یاد رکھیں گی۔
انڈمان اور نکوبار جزائر کی تاریخ پر روشنی ڈالتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ یہاں پہلی بار ترنگا لہرایا گیا اور ہندوستان کی پہلی آزاد حکومت قائم ہوئی۔ ویر ساورکر اور ان جیسے بہت سے دوسرے ہیروز نے اس سرزمین پر ملک کے لییوقف اور قربانی کے عروج کو چھوا۔ انہوں نے کہا کہ “اس بے مثال جنون اور بے پناہ درد کی آوازیں آج بھی سیلولر جیل کی کوٹھریوں سے سنائی دیتی ہیں‘‘۔
وزیر اعظم نے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ انڈمان کی شناخت جدوجہد آزادی کی یادوں کے بجائے غلامی کی علامتوں سے جڑی ہوئی ہے اور کہا کہ ہمارے جزیروں کے ناموں پر بھی غلامی کے نقوش موجود تھے۔ وزیر اعظم نے تین اہم جزائر کا نام تبدیل کرنے کے لیے چار پانچ سال پہلے اپنے پورٹ بلیئر کے دورے کو یاد کیا اور کہا، “آج راس آئی لینڈ نیتا جی سبھاش چندر بوس آئی لینڈبن گیا ہے، ہیولاک اور نیل جزیرہ سوراج اور شہید جزیرہ بن گیا ہے‘‘۔
انہوں نے مزید کہا کہ سوراج اور شہید کا نام خود نیتا جی نے دیا تھا، لیکن آزادی کے بعد بھی کوئی اہمیت نہیں دی گئی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ جب آزاد ہند فوج کی حکومت نے 75 سال مکمل کیے تو ہماری حکومت نے ان ناموں کو پھر سے بحال کر دیا‘‘۔
وزیر اعظم نے نیتا جی سبھاش چندر بوس سے متعلق کاموں پر روشنی ڈالی جو آزادی کے فوراً بعد کئے جانے چاہئے تھے اور نشاندہی کی کہ وہ پچھلے 8-9 سالوں میں کئے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آزاد ہندوستان کی پہلی حکومت 1943 میں ملک کے اس حصے میں قائم ہوئی تھی اور ملک اسے مزید فخر کے ساتھ تسلیم کر رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آزاد ہند حکومت کے قیام کے 75 سال مکمل ہونے پر ملک نے لال قلعہ پر پرچم لہرا کر نیتا جی کو خراج عقیدت پیش کیا۔
وزیر اعظم نے کئی دہائیوں سے نیتا جی کی زندگی سے متعلق فائلوں کو عام کرنے کے مطالبے پر زور دیا اور کہا کہ یہ کام انتہائی لگن کے ساتھ کیا گیا ہے۔ وزیر اعظم نے کہا، ’’آج ہمارے جمہوری اداروں اور کرتویہ پتھ کے سامنے نیتا جی کا عظیم مجسمہ ہمیں ہمارے فرائض کی یاد دلا رہی ہے۔‘‘
یہ نوٹ کرتے ہوئے کہ جن ممالک نے اپنی آنے والی شخصیات اور آزادی کے جنگجوؤں کو وقت پر عوام سے جوڑا اور قابل آدرشوں کو تخلیق کیا اور ان کا اشتراک کیا، وہی ملک ترقی اور قوم سازی کی دوڑ میں بہت آگے نکل گئے، وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ ہندوستان آزادی کا امرت کال میں اسی طرح کے اقدامات کرنا۔
21 جزیروں کے نام رکھنے کے پیچھے ’ایک بھارت شریشٹھ بھارت‘ کے منفرد پیغام کو اجاگر کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ یہ ملک کے لیے دی گئی قربانیوں اور ہندوستانی فوج کی بہادری اور بہادری کا پیغام ہے۔ وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ 21 پرم ویر چکر جیتنے والوں نے مادر ہند کی حفاظت کے لیے اپنا سب کچھ قربان کر دیا تھا اور نوٹ کیا کہ ہندوستانی فوج کے بہادر سپاہی مختلف ریاستوں سے تھے، مختلف زبانیں اور بولیاں بولتے تھے اور مختلف طرز زندگی گزارتے تھے لیکن یہ ماں بھارتی کی خدمت تھی۔ اور مادر وطن کے لیے اٹل عقیدت جس نے انہیں متحد کیا۔ ’’جیسے سمندر مختلف جزیروں کو جوڑتا ہے، اسی طرح’ایک بھارت، شریشٹھ بھارت‘ کا احساس مدر انڈیا کے ہر بچے کو متحد کرتا ہے۔‘‘ وزیر اعظم نے کہا۔’’میجر سومناتھ شرما، پیرو سنگھ، میجر شیطان سنگھ سے لے کر کیپٹن منوج پانڈے،صوبیدار جوگندر سنگھ اور لانس نائک البرٹ ایکا تک، ویر عبدالحمید اور میجر راماسوامی پرمیشورن سے لے کر تمام 21 پرم ویروں تک، سب کا ایک ہی عزم تھا – سب سے پہلے قوم! بھارت پہلے! یہ قرارداد اب ان جزائر کے نام سے ہمیشہ کے لیے امر ہو گئی ہے۔ انڈمان میں ایک پہاڑی بھی کارگل جنگ کے کیپٹن وکرم بترا کے نام پر وقف کی جا رہی ہے۔
وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ انڈمان اور نکوبار کے جزائر کا نام نہ صرف پرم ویر چکر ایوارڈ یافتہ افراد کے لیے وقف کیا گیا ہے بلکہ ہندوستانی مسلح افواج کے لیے بھی ہے۔ اس بات کو یاد کرتے ہوئے کہ ہماری فوج کو آزادی کے وقت سے ہی جنگوں کا سامنا کرنا پڑا،وزیراعظم نے کہا کہ ہماری مسلح افواج نے تمام محاذوں پر اپنی بہادری کا لوہا منوایا ہے۔’’یہ ملک کا فرض ہے کہ جن سپاہیوں نے ان قومی دفاعی آپریشنز کے لیے خود کو وقف کیا،ان کو فوج کے تعاون کے ساتھ وسیع پیمانے پر تسلیم کیا جائے۔‘‘ وزیر اعظم نے مزید کہا،’’فوجیوں اور فوج کے نام پر آج ملک اس ذمہ داری کو نبھا رہا ہے اور اسے تسلیم کیا جا رہا ہے‘‘۔
جدوجہد آزادی کو ایک نئی سمت دینے والے ماضی کے جزائر انڈمان اور نکوبار سے تشبیہ دیتے ہوئے وزیر اعظم نے اپنے خطاب کا اختتام یہ کہتے ہوئے کیا کہ یہ خطہ مستقبل میں بھی ملک کی ترقی کو ایک نئی تحریک دے گا۔ “مجھے یقین ہے، ہم ایک ایسا ہندوستان بنائیں گے جو قابل ہو، اور جدید ترقی کی بلندیوں کو حاصل کرے گا”۔
اس موقع پر مرکزی وزیر داخلہ جناب امت شاہ اور جزائر انڈمان اور نکوبار کے لیفٹیننٹ گورنر ایڈمرل ڈی کے جوشی، چیف آف ڈیفنس اسٹاف جنرل انیل چوہان اس موقع پر موجود تھے۔

About the author

Taasir Newspaper