Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

دنیا بھر سے

اونٹوں کی زبان ’’ الحداء ‘‘ یونیسکو کی فہرست میں شامل

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 20th Jan.

یونیسکوسٹی،20جنوری:اونٹوں کے ساتھ رابطے کی زبان جسے ’’الحداء‘‘کہا جاتا ہے کو یونیسکو کی غیر محسوس ثقافتی ورثے کی فہرست میں شامل کیا گیا تھا۔ یہ زبان اونٹوں اور مملکت کے باشندوں کے درمیان گہرے روایتی تعلقات کی عکاسی کرتی ہے۔ زبان ایک لوک ورثہ کے طور پر اونٹ اور ان کے مالکان کے درمیان رابطے کا کام کرتی ہے۔’’الحذاء‘‘کے تاریخی سفر میں ہنر مند چرواہا اپنی آواز کا استعمال کرتے ہوئے اونٹوں کو پرسکون کر سکتا ہے اور انہیں صحرا کی وسیع ریت سے گزر کر اپنے حکم کی تعمیل پر راغب کر سکتا ہے۔ اس طرح صحرا کی تاریکی میں بھی یہ زبان ایک سہارا بن جاتی ہے۔ ریت کے ذروں پر، حدی خواہوں کے نعروں اور بدوؤں کے گیتوں کی گونج، نعرے کے بعد آواز یا اونٹ کی پکار کی محض سرگوشی شاعرانہ گانے میں تبدیل ہوگئی ہے۔ اونٹوں کی اس ’’ حدی‘‘ میں مٹھاس کو ملایا گیا ہے۔ اس ترانے میں آواز، شاعری ، بیان کا جادو، معانی کی فراوانی بدوؤں کے ماحول اور ان کی ثقافت سے ماخوذ ہے۔کہا جاتا ہے کہ ’’الحداء‘‘ کو سب سے پہلے ادا کرنے والے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے دادا مضر بن نزار تھے۔ اونٹ سے اترتے ہوئے ان کے ہاتھ پر چوٹ آئی تو انہوں نے درد سے کراہتے ہوئے جو الفاظ پکارے وہ ’’ وایداہ، وایداہ‘‘ کے تھے۔یہ الفاظ سن کر اونٹ ان کے گرد جمع ہوگئے اور ان کے ساتھ چلنے کے طلبگار دکھائی دئیے۔ اس کے بعد انہیں اونٹوں کو مخاطب کرنے ، پکارنے اور قریب بلانے کے لیے انہیں الفاظ کے استعمال کا خیال آیا۔ انہوں نے اونٹوں کو مخاطب کرنے کے لیے ان الفاظ کا استعمال شروع کردیا۔قدیم عربوں نے ’’ الحداء‘‘ کو دو قسموں میں تقسیم کیا ہے۔’’ حداء الاوب‘‘ اور ’’حداء الورد‘‘۔ پہلی حدی ان کو گھروں جہاں ان کا کنبہ اور پانی ہوتا ہے کی طرف واپس بلانے کے لیے استعمال کی جاتی ہے۔ دوسری قسم کنویں کے گرد جمع ہونے اور پانی پلانے کے عمل کے آغاز کے وقت استعمال ہوتی ہے۔ یہ آواز سن کر اونٹ پانی کے مقام کی گرد منڈلاتے ہوئے آجاتے ہیں۔

About the author

Taasir Newspaper