Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

دنیا بھر سے

آب وہوا کی تبدیلی سے نبرد آزما پاکستان کی معاونت کیلئے بین الاقوامی کانفرنس

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 5th Jan.

اسلام آباد ،5جنوری:آب وہوا کی تبدیلی سے نبرد آزما پاکستان کے لئے، اقوام متحد اورحکومت پاکستان کی مشترکہ میزبانی میں 9 جنوری 2023 کو جنیوا میں ایک بین الاقوامی کانفرنس کا انعقاد کیا جارہا ہے۔اس کانفرنس میں 2022 کے تباہ کن سیلاب کے بعد پاکستان کے لوگوں اور حکومت کی مدد کے لئے پبلک، پرائیویٹ سیکٹرز اور سول سوسائٹی کیکے راہنما اکٹھے ہو رہے ہیں۔اس کانفرنس کے دو مقاصد ہیں۔ بحالی اور تعمیر نو کے لئے مختلف شعبوں کے تعاون پر مبنی ایک حکمت عملی پیش کرنا جسے 4 آر ایف کا نام دیا گیا ہے اور پاکستان میں ماحولیاتی تبدیلی سے نمٹنے اور امطابقت پیدا کرنے کے لئے بین الاقوامی مدد اور پائدار شراکت داریوں کی تشکیل کی کوشش۔یہ کانفرنس نو جنوری کو جنیوا میں اقوام متحدہ کے دفتر میں مقامی وقت کے مطابق صبح نو بجے سے شام چھ بجے تک ، اسلام آباد کے وقت کے مطابق دوپہر ایک بجے سے رات دس بجے تک اور نیو یارک کے وقت کے مطابق صبح تین بجے سے دوپہر بارہ بجے تک منعقد ہو گی۔کانفرنس کی کاروائی دو حصوں میں ہو گی۔ پہلے حصے میں اعلی سطح کی افتتاحی تقاریر ہوں گی جس میں 4 آر ایف دستاویزکو سرکاری طور پر پیش کیا جائے گا اورشراکت داروں کی مدد سے متعلق اعلانات ہوں گے۔پاکستان میں 2022 کے تباہ کن سیلاب کئی دہائیوں میں ملک میں آنے والے بد ترین قدرتی سانحے تھے۔ ان سیلابوں میں ملک کا ایک تہائی حصہ زیر آب آگیا ، لگ بھگ 15000 لوگ ہلاک یا زخمی اور 80 لاکھ بے گھر ہوئے۔0 2 لاکھ سے زیادہ گھر ، 13000 کلومیٹرز پر مشتمل شاہراہیں۔ 439 پل اور چالیس لاکھ ایکڑ سے زیادہ زرعی رقبہ یا تو تباہ ہوا یا اسے نقصان پہنچا۔ ان سیلابوں کے براہ راست اثرات کے نتیجے میں لگ بھگ 90 لاکھ سے زیادہ لوگ غربت کی لپیٹ میں آسکتے ہیں۔اقوام متحدہ کی مدد اور عطیہ دہندگان اور شراکت داروں کی فیاضی اور پاکستانی عوام کے جرائتمندانہ رد عمل سے حکومت پاکستان نے آب وہوا کے اس عظیم سانحے سے نمٹنے کی کوشش کی ہے۔اس نے بین الاقوامی اداروں کی مد د سے 2 اعشاریہ 2 ملین گھروں کی مدد کے لئے 245 ملین امریکی ڈالر نقد فراہم کئے ہیں ، بے گھر اور بے سروسامان متاثرین کو ہزاروں خیمے ، خوراک ، پانی اور ادویات تقسیم کی ہیں۔اقوام متحدہ اور ورلڈ بنک گروپ ، ایشیائی ترقیاتی بنک اور یورپی یونین کی مدد سے پاکستان نے قدرتی آفت کے بعد کی ضروریات کا ایک تخمینہ، پوسٹ ڈیزاسٹر نیڈز ایسسمنٹ ، یا پی ڈی این اے تیار کیا ہے جس میں سیلاب سے ہونے والے نقصانات کا تخمینہ 14 اعشاریہ 9 ارب امریکی ڈالر ، اقتصادی نقصانات کا 15 اعشاریہ 2 ارب ڈالر سے زیادہ اور بحالی کی ضروریات پر 16 اعشاریہ تین ارب ڈالر کا تخمینہ پیش کیا گیا ہے۔پی ڈی این اے میں بنیادی ترجیحات کی نشاندہی کی گئی ہے جن میں معاش اور زراعت کی بحالی ، نجی رہائش گاہوں کی تعمیر نو اور سڑکوں ، پلوں ، اسکولوں اور ہسپتالوں سمیت عوامی انفرا اسٹرکچر کی مرمت اور بحالی شامل ہیں۔PDNA کے ابتدائی تخمینوں سے پتہ چلتا ہے کہ سیلاب کے براہ راست نتیجے کے طور پر، قومی غربت کی شرح میں 3.7 سے 4.0 فیصد پوائنٹس کا اضافہ ہو سکتا ہے، جو 8.4 سے 9.1 ملین مزید لوگوں کو غربت میں دھکیل سکتا ہے۔پی ڈی این اے کے ابتدائی تجزیے سے ظاہر ہوا ہے کہ ملک کے 25 غریب ترین اضلاع میں سے 19 متاثر ہوئے اور 3,100 کلومیٹر ریلوے ٹریک تباہ ہوئے یا انہیں نقصان پہنچا۔4.4 ملین ایکڑ زرعی زمین متاثر ہوئی یا تباہ ہوئی، اور 10 لاکھ سے زیادہ مویشی ضائع ہوئے۔26,000 سے زیادہ اسکولوں کو نقصان پہنچا یا تباہ کیا گیا، جس سے 3.5 ملین سے زیادہ طلباء متاثر ہوئے۔نوسال سے انیس برس کی عمر کی ، تقریباًچھ لاکھ چالیس ہزار لڑکیوں کو جنسی استحصال، صنفی بنیاد پر تشدد اور بچپن کی شادیوں کے بڑھتے ہوئے خطرے کا سامنا ہے۔تقریباً 660,000 حاملہ خواتین کو زچگی کی خدمات تک رسائی کے لیے چیلنجز کا سامنا ہے، جب کہ تقریباً 40 لاکھ بچے صحت کی دیکھ بھال تک رسائی سے محروم ہیں۔ابتدائی تخمینے بتاتے ہیں کہ زرعی پیداوار میں کمی اور قیمتوں میں اضافے سے غذائی عدم تحفظ کا سامنا کرنے والے لوگوں کی تعداد دوگنی ہو کر،ا 7 ملین سے بڑھ کر 14.6 ملین ہو جائے گی۔

About the author

Taasir Newspaper