Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ریاست

بدمعاش کو پکڑنے گئے ایک اور پولیس اہلکار پر حملہ، 4 گھنٹے میں مقابلے کے بعد ملزم گرفتار

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 24th Jan.

نئی دہلی،24جنوری : راجدھانی کے مایا پوری میں اے ایس آئی شمبھو دیال پر چاقو سے حملے کے واقعے کے بعد اب ایسا ہی ایک اور معاملہ سامنے آیا ہے۔ اب چاولہ میں ایک بدمعاش سنی نے ہیڈ کانسٹیبل رنکو پر چاقو سے حملہ کر دیا۔ وہ شدید زخمی ہو گیا۔ رنکو کو دوارکا کے ایک اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے۔ یہاں سے اسے صفدرجنگ ریفر کر دیا گیا ہے۔ واقعہ کے بعد دوارکا کی آپریشن ٹیم نے 4 گھنٹے میں قطب وہار میں شرپسند کے چھپنے کی معلومات اکٹھی کیں۔ علاقے کو گھیرے میں لے لیا گیا۔ خود کو گھیرے میں دیکھ کر شرپسندوں نے پہلے پولیس اہلکاروں پر فائرنگ کی۔ جوابی کارروائی میں پولیس نے بھی فائرنگ کی۔ اس میں سنی کی ٹانگ میں دو گولیاں لگیں۔ اس کے بعد پولیس نے سنی اور اس کے ساتھیوں کو پکڑ لیا۔اے ایس آئی سنیل اور ہیڈ کانسٹیبل رنکو اتوار کی رات بائک پر قطب وہار علاقے میں گشت کر رہے تھے۔ اسی دوران اسے اطلاع ملی کہ کچھ بدمعاش ایک آٹو ڈرائیور سے لڑ رہے ہیں۔ اس کے بعد سنیل اور رنکو موقع پر پہنچ گئے۔ سنیل نے بائک پارک کرنا شروع کی اور رنکو موقع پر بھاگا۔ تمام شرپسند بھاگنے لگے۔ بدمعاشوں کو بھاگتے دیکھ کر رنکو نے پیچھا کیا اور سنی کو پکڑ لیا۔ سنی نے اپنی جیب سے چاقو نکالا اور رنکو پر حملہ کرنے لگا۔ موقع دیکھ کر سنی بھاگ گیا۔ پولیس نے ملزمان کے خلاف سرکاری کام میں رکاوٹ ڈالنے اور اقدام قتل کا مقدمہ درج کر لیا۔اس کے بعد پولیس نے سنی کے ٹھکانے کا پتہ لگایا۔ تفتیش میں پولیس کو معلوم ہوا کہ سنی قطب وہار کے ایک گھر میں چھپا ہوا ہے۔ پولیس نے محاصرہ کر لیا۔ ٹیم میں انسپکٹر نوین کمار اور کملیش کمار شامل تھے۔ پولیس کی آمد کی اطلاع ملتے ہی شرپسند چوکس ہوگئے۔ سنی نے پولیس ٹیم پر دو راؤنڈ فائر کئے۔ پولیس نے بھی جواب میں تین راؤنڈ فائرنگ کی۔ بدمعاش سنی کی ٹانگ میں دو گولیاں لگیں۔ اس کے بعد پولیس کمرے میں داخل ہوئی اور بدمعاش کو پکڑ لیا۔ کمرے میں بدمعاش کے دو ساتھی بھی موجود تھے، انہیں بھی پولیس نے پکڑ لیا۔ پولیس کو کمرے سے ایک پستول، ایک چاقو اور تین کارتوس ملے۔ سنی کے ساتھ کمرے میں موجود دوسرے ملزم کا نام سمے سنگھ ہے۔ تیسرا ملزم نابالغ ہو سکتا ہے۔ہیڈ کانسٹیبل پر چاقو سے حملہ کرنے والا ملزم سنی عرف شوٹر تقریباً 25 روز قبل ضمانت پر رہا ہوا ہے۔ دعویٰ کیا جاتا ہے کہ ٹانگ میں دو بار گولی لگنے کے بعد بھی وہ دھمکیاں دے رہا تھا کہ اگلی بار وہ پولیس اہلکار کو مار ڈالے گا۔ انکاؤنٹر میں شامل ایک پولیس افسر نے بتایا کہ واقعے کے بعد بھی ان کے چہرے پر کوئی جھریاں نہیں تھیں۔ انہوں نے بتایا کہ سنی عرف شوٹر حال ہی میں جیل سے باہر آیا ہے۔ اس کے خلاف دوارکا ضلع کے مختلف تھانوں میں چھ مقدمات درج ہیں۔ وہ دوارکا ضلع میں کار ڈکیتی کے معاملے میں گزشتہ ڈیڑھ سال سے تہاڑ جیل میں بند تھا۔ وہ تقریباً 25 دن پہلے ضمانت پر رہا ہوا تھا۔ الزام ہے کہ وہ علاقے کے لوگوں کو ڈرا دھمکا کر پیسے بٹورتا تھا۔ جیل سے نکلنے کے بعد اس نے قطب وہار میں ہی کرائے پر ایک کمرہ لے لیا تھا۔ یہاں وہ اپنے دو ساتھیوں کے ساتھ رہتا تھا۔ سال 2021 میں اسے دوارکا ساؤتھ پولیس اسٹیشن کی ٹیم نے پکڑا تھا۔ اسے پکڑنے کے بعد جب پولیس اسے میڈیکل کے لیے ڈی ڈی یو اسپتال لے گئی تو اس نے وہاں اپنے ساتھ موجود پولیس اہلکار سے ہتھیار چھیننے کی کوشش کی۔

About the author

Taasir Newspaper