Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

سیاست

جامعہ میں بی بی سی کی دستاویزی فلم کی اسکریننگ کے اعلان کے بعد 10 طلبہ کو حراست میں لیا گیا

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 25th Jan.

نئی دہلی،25جنوری: دہلی کی جامعہ یونیورسٹی میں وزیر اعظم نریندر مودی پر بی بی سی کی دستاویزی فلم کی اسکریننگ کا اعلان کرکے ماحول خراب کرنے کے الزام میں پولیس نے تین طلبہ کو حراست میں لے لیا ہے۔ طلباء کی حراست کے خلاف احتجاج کرنے والے 7 دیگر طلباء کو بھی پولیس نے حراست میں لے لیا ہے۔ یہ کارروائی چیف پراکٹر کی شکایت پر کی گئی ہے۔ پولیس کے مطابق واقعے کے حوالے سے جامعہ یونیورسٹی کی سیکیورٹی سخت کردی گئی ہے۔ہنگامہ آرائی کے درمیان جامعہ یونیورسٹی کے تمام دروازے بند کر دیے گئے ہیں۔ طلبہ کو اس میں داخلے کی اجازت نہیں دی جارہی ہے۔جامعہ کے طلبہ نے کہا تھا کہ وہ بی بی سی کی دستاویزی فلم ‘انڈیا: دی مودی سوال’ دکھائیں گے۔ لیکن جامعہ نے انہیں اجازت دینے سے انکار کر دیا۔ تاہم طلباء آج شام 6 بجے گیٹ نمبر 8 پر ڈاکومنٹری دکھانے پر بضد رہے۔ یونیورسٹی نے طلبا کو نوٹس جاری کر دیا۔جامعہ انتظامیہ کی جانب سے نوٹس جاری کیے جانے کے باوجود بدھ کی شام چھ بجے گیٹ نمبر 8 کے ایم سی آر سی لان میں بی بی سی کی ممنوعہ اور متنازعہ دستاویزی فلم کا انعقاد کیا جا رہا تھا۔ اس سلسلے میں جامعہ یونیورسٹی نے اجازت نہیں دی تھی۔اس کے بعد جامعہ میں سیکورٹی سخت کر دی گئی ہے۔ لان اور گیٹ پر ملاقاتوں اور اجتماعات کی اجازت نہیں ہے۔ ساتھ ہی منتظمین کے خلاف سخت تادیبی کارروائی کا بھی کہا گیا ہے۔یونیورسٹی انتظامیہ کی جانب سے کہا گیا ہے کہ اطلاع ملی ہے کہ ایک سیاسی تنظیم (ایس ایف آئی) سے تعلق رکھنے والے کچھ طلباء نے آج یونیورسٹی کیمپس میں ایک متنازعہ دستاویزی فلم کی نمائش کے بارے میں پوسٹر پھیلایا ہے۔ یونیورسٹی انتظامیہ نے ماضی میں ایک میمورنڈم/سرکلر جاری کیا ہے اور ایک بار پھر اس بات کا اعادہ کیا ہے کہ کیمپس میں مجاز اتھارٹی کی اجازت کے بغیر طلبائکی کوئی میٹنگ/اسمبلی یا کسی فلم کی نمائش کی اجازت نہیں دی جائے گی، ایسا نہ کرنے پر سخت تادیبی کارروائی کی جائے گی۔ یونیورسٹی کے خلاف لوگوں/تنظیموں کو یونیورسٹی کے پرامن تعلیمی ماحول کو تباہ کرنے سے روکنے کے لیے ہر ممکن اقدامات کر رہی ہے۔2002 کے فسادات کے دوران وزیر اعظم نریندر مودی کے گجرات کے وزیر اعلیٰ کے دور پر مبنی ایک دستاویزی فلم پر پابندی لگا دی گئی ہے، جس میں حکومت نے سوشل میڈیا کمپنیوں سے اسے ہٹانے کو کہا ہے۔ اپوزیشن نے اس اقدام پر تنقید کی ہے۔پی ایم مودی کی حکومت نے دستاویزی فلم ‘انڈیا: دی مودی سوال’ کو ‘پروپیگنڈا پیس’ قرار دیا ہے۔ انہیں گجرات فسادات کی تحقیقات میں کسی بھی غلط کام سے بری کر دیا گیا ہے۔ گزشتہ سال سپریم کورٹ نے قتل سے متعلق ایک مقدمے میں ان کی بریت کے خلاف اپیل مسترد کر دی تھی۔2002 میں گجرات کے گودھرا میں یاتریوں کو لے جانے والی ٹرین کے ایک ڈبے میں آگ لگ گئی تھی جس میں 59 افراد ہلاک ہوئے تھے۔ اس کے بعد ریاست میں تین دن کے تشدد کے دوران ایک ہزار سے زیادہ لوگ مارے گئے۔ الزام ہے کہ حکومت نے جان بوجھ کر شروع ہونے والے فسادات کو روکنے کے لیے خاطر خواہ اقدامات نہیں کیے تھے۔

About the author

Taasir Newspaper