Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ملک بھر سے

جماعت اسلامی ہند مہاراشٹر کا یک روزہ ریاستی میڈیکل ایکٹیویسٹ ورک شاپ کا کامیاب انعقاد

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 24th Jan.

اورنگ آباد 24 جنوری :(رپورٹ)ذوالقرنین احمد :جماعت اسلامی ہند مہاراشٹر شعبہ صحت کے زیر اہتمام یک روزہ میڈیکل ایکٹیویسٹ ورک شاپ کا انعقاد 24 جنوری بروز منگل مرکز اسلامی یونس کالونی میں منعقد کیا گیا جس میں افتتاحی کلمات عبدالحکیم صاحب نے پیش کیے اسکے بعد محمد نعیم صاحب (اسٹیٹ کوآرڈینیٹر صحت و طبی رہنمائی) نے شعبہ کی کارکردگی اور سب سینٹر سے توقعات کے عنوان پر معلومات دی اور پریزنٹیشن پیش کیا، جس میں مریض کے بیماریوں کی صحیح تشخیص اور حکومت کی جاری کردہ اسکیم سے کیسے فائدہ حاصل کیا جائے اور عوام کی خدمات کی جائے پورے مہاراشٹر میں ایسا نیٹورک بنانے کی ضرورت ہے۔ مہاراشٹر میں اس وقت 6 میڈیکل گائیڈنس سینٹر جاری ہے جس کے ذریعے سینکڑوں افراد کی بائے پاس سرجری، کینسر میجر سرجری اور دیگر بیماری کا علاج کروایا گیا۔ بلا مذہبی تفریق کے ہزاروں پیشنٹ کی رہنمائی شعبہ صحت کے ذریعے کی گئی ہے۔
عبدالجبار صاحب (مرکزی سیکریٹری شعبہ خدمت خلق ) نے میدان طب میں خدمت کے محاذ اور تقاضے کے عنوان پر روشنی ڈالی انہوں نے کہاں کہ وقت حالات کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے میڈیکل فیلڈ میں میڈکل ایکٹیویسٹ کے طور پر عوام کی صحیح رہنمائی و رہبری کا کام کرنے کی ضرورت ہے، ایسے ہسپتال ، ایکٹیویسٹ ، ڈاکٹرز، ہیلتھ سینٹر، تیار کیجئے جو معاشرے میں ایک ماڈل کی حیثیت سے پہچانے جائے۔ بغیر کسی مذہبی تفریق کے مریضوں کی خدمات کرنا ضروری ہے۔ میڈیکل کیلنڈر بھی شعبہ صحت سے شائع ہونا کرنے کی ضرورت ہے جس کے ذریعے عوام میں بیماریوں کے متعلق بیداری احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کے متعلق معلومات فراہم کی جائے۔ ہر ضلع میں پرائمری ہیلتھ سینٹر قائم کرنے کی ضرورت پر زور دیا جس کے ذریعے زیادہ سے زیادہ افراد فائدہ حاصل کرسکیں۔ ہسپتالوں کو حکومت سے ملنے والی امداد کا فائدہ عوام کو پہنچ رہا ہے یا نہیں اس کے لیے میڈیکل ایکٹیویسٹ کو ہسپتالوں کے آڈیٹ کروانے چاہیے۔ ڈاکٹر شاداب منور موسی صاحب( ایم ڈی نور ہسپتال بدناپور) نے میڈیکل ایکٹیویسٹ کیلئے میجر بیماریوں کے بارے میں صحت کے بارے میں معلومات ہونا ضروری ہے۔ کریٹیکل بیماریوں کے بارے میں اپنے قریبی مخلص ڈاکٹرز سے مشورہ کرنا بے حد ضروری ہے جو آپ کو صحیح مشورہ دے۔
ڈاکٹر سیف حمید صاحب (نیورو سرجن) نے سرجری کے متعلق معلومات پیش کی انہوں نے کہا کہ میڈیکل ایکٹیویسٹ کو ضرورت مندوں تک پہنچ کر ان کے مسائل حل کرنے چاہیے جو ایک بڑی ذمہ داری ہے۔ انڈیا کا ہیلتھ کیئر سسٹم اس قدر بگڑ چکا ہے کہ غریبوں کی جھونپڑیوں پر ڈاکے ڈالے جاتے ہیں ایمبولینس سروسز کے مالک ڈرائیور مافیا بن چکے ہیں میڈیکل فیلڈ میں کرپشن سسٹم کو توڑنے کی ضرورت ہے۔ جو ڈاکٹرز اپنے مریضوں کو بڑے ہسپتال میں ریفر کرتے ہیں انہیں چاہیے کہ وہ اپنے مریضوں سے فیڈ بیک ضرور لیں تاکہ سسٹم ڈیولپ ہو، آج ڈاکٹرز کو اخلاقیات کا درس نہیں دیا جاتا ہے انکے اندر سے احساس جذباتیت ختم ہوتی جارہی ہے۔ میڈیکل فیلڈ میں پریشر گروپ تیار کرنے کی ضرورت ہے تاکہ گورنمنٹ پرایویٹ ہسپتال سے صحیح علاج مریضوں کا مل سکے۔ میڈیکل فیلڈ میں ڈاکٹرز میڈیکل اسٹاف وغیرہ سے تعلقات بنانے کی ضرورت ہے۔کسی بھی مہلک بیماری کے وقت مہا ماری میں میڈیکل ایکٹیویسٹ کا بہت اہم کردار ہوتا ہے جو سماج میں بیداری احتیاطی تدابیر اور ذہن سازی کرنا مدد کرنا ہوتا ہے۔
مسیج الدین صدیقی صاحب ( صدر گلوبل میڈیکل ٹرسٹ) نے این جی اوز کے متعلق معلومات پیش کی انہوں نے گلوبل میڈیکل ٹرسٹ کے تحت جاری خدمات کو پیش کیا، کیمپ کے ذریعے مختلف بیماریوں کے مریضوں کو مفت علاج کروایا جاتا ہے، انہوں نے کہا کہ فلاحی کام انجام دینے والی تنظیموں میں مقابلہ ہونا چاہیے تاکہ خدمات کا جذبہ پروان چڑھے۔ امیر حلقہ مہاراشٹر محترم رضوان الرحمن صاحب نے اپنی تقریر پیش کرتے ہوئے کہا کہ آج معاشرے میں ایسے ضرورت مند خاندان جن کے مریض کسی بڑے مرض میں مبتلا ہے وہ مجبوری میں سودی قرض لیتے ہیں سود ادا کرنے میں اصل رقم ادا نہیں ہوپاتی ہے ایسے افراد کو سودی دلدل سے باہر نکالنے کی ضرورت ہے۔ اقامت دین کے مقصد سے کام کرنا ہے، جو کام شعبہ صحت میں ہورہے ہیں وہ اونٹ کے منہ میں زیرہ کے مترادف ہے۔ عوام میں بیماریوں سے متعلق بیداری پیدا کرنے کیلئے مختلف پروگرامز لینے کی ضرورت ہے جس کے ذریعے بیماریوں کی روک تھام کی جاسکے۔ اس ورک شاپ میں مہاراشٹر سے بھر سے کم و بیش سو ڈاکٹرز میڈیکل ایکٹیویسٹ نے شرکت کی عبدالجبار صدیقی صاحب کے اختتامی کلمات سے ورک شاپ کا کامیاب اختتام عمل میں آیا۔

 

About the author

Taasir Newspaper