Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ملک بھر سے

دہلی کانجھوالا حادثہ: مقتولہ کی آخری رسومات ادا

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 3rd Jan.

پوسٹ مارٹم رپورٹ میں موت کی وجہیں آئیں سامنے، 10 اہم نکات

نئی دہلی ، 3 جنوری :دہلی کے کانجھا والا واقعہ سے دہلی شرمسار ہے ۔ اس معاملے کی تفتیش جاری ہے۔ جس میں آئے روز نئے نئے انکشافات ہو رہے ہیں۔ اس معاملے میں وزارت داخلہ نے دہلی پولیس سے رپورٹ طلب کی ہے۔ کیس کے پانچ ملزمان پولیس کی حراست میں ہیں۔ مہلوکہ کی پوسٹ مارٹم رپورٹ بھی منگل (3 جنوری) کو آ گئی ہے۔ اس پوسٹ مارٹم رپورٹ کے دس اہم نکات یوں ہیں۔کانجھاوالا میں اتوار کی رات پیش آئے واقعے میں مہلوکہ کی پوسٹ مارٹم رپورٹ میں ریپ کی تصدیق نہیں ہوئی ہے۔ دہلی پولیس کے اہلکار نے بتایا کہ مہلوکہ کا پوسٹ مارٹم مولانا آزاد میڈیکل کالج میں کیا گیا۔ رپورٹ میں موت کی عارضی وجہ سر، ریڑھ کی ہڈی، دونوں نچلے اعضا میں چوٹ ہے۔ موت شاید گاڑی کے حادثے اور گھسیٹنے کی وجہ سے ہوئی تھی۔ جنسی زیادتی کا کوئی ثبوت نہیں ہے۔ پوسٹ مارٹم رپورٹ آنے کے بعد مہلوکہ کے ماموں نے کہا کہ پوسٹ مارٹم رپورٹ میں آیا ہے کہ موت گھسیٹنے کی وجہ سے ہوئی ہے۔ ریپ کی تصدیق نہیں ہوئی ہے۔ مہلوکہ لڑکی کی لاش کو ایمبولینس میں اسپتال سے اس کی رہائش گاہ پہنچائی گئی ہے ۔ جہاں اس کی تدفین کی گئی، اس دوران لوگوں کی بھیڑ جمع ہوگئی۔ نیز دہلی کے وزیر اعلی اروند کجریوال نے بھی منگل کو متاثرہ خاندان سے بات کی۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ انہوں نے متاثرہ کی والدہ سے بات کی ہے۔ بیٹی کو انصاف دلائیں گے۔ اس کی ماں بیمار رہتی ہے۔ ان کا مکمل علاج کروائیں گے۔ متاثرہ خاندان کو دس لاکھ روپے کا معاوضہ دیں گے۔ حکومت متاثرہ خاندان کے ساتھ ہے۔ آئندہ بھی کوئی ضرورت پڑی تو ہم پوری مدد کریں گے۔وہیںتفتیش سے معلوم ہوا کہ متاثرہ لڑکی اکیلی نہیں تھی بلکہ اس کی ایک سہیلی اس کے ساتھ تھی جو خوف کے مارے موقع سے بھاگ گئی ۔ لڑکی کی سہیلی کا بیان ریکارڈ کر لیا گیا ہے۔ اسپیشل کمشنر آف پولیس (لا اینڈ آرڈر) ساگر پریت ہڈا نے کہا کہ واقعہ کا ایک گواہ سامنے آیا ہے، جو واقعہ کے وقت لڑکی کے ساتھ تھا۔ انہوں نے بتایا کہ اس کا بیان ضابطہ فوجداری کی دفعہ 164 کے تحت ریکارڈ کیا گیا ہے۔ واقعہ کے وقت وہ لڑکی کے ساتھ اسکوٹی پر سوار تھی اور اسے کوئی چوٹ نہیں آئی۔ اس نے بتایا کہ وہ شاید ڈری ہوئی تھی ، اس لیے لڑکی کو موقع پر چھوڑ کر بھاگ گئی۔ پولیس کو حاصل کردہ سی سی ٹی وی فوٹیج میں ایک سال کی پارٹی میں شرکت کے بعد لڑکی تقریباً 2.45 بجے ایک ہوٹل سے نکلتی ہوئی دکھائی دے رہی ہے۔ اس نے گلابی ٹی شرٹ پہن رکھی تھی اور اس کی سہیلی سرخ ٹی شرٹ پہن رکھی تھی۔ شروع میں اس کی سہیلی اسکوٹی چلا رہی تھی اور متأثرہ لڑکی پیچھے بیٹھی تھی۔ پولیس کے مطابق بعد میں فوٹیج میں لڑکی اسکوٹی چلاتی ہوئی نظر آرہی ہے اور اس کی سہیلی پیچھے بیٹھی ہوئی ہے۔پولیس نے بتایا کہ اس کی سہیلی کو معمولی چوٹیں آئیں اور وہ واقعہ کے بعد موقع سے فرار ہو گئی، جبکہ لڑکی گاڑی کے نیچے پھنس گئی جو اسے گھسیٹ کر لے گئی۔ پولیس کے مطابق کار اسے تقریباً 12 کلومیٹر تک گھسیٹتی رہی اور بعد ازاں اس کی برہنہ لاش کانجھا والا میں سڑک پر ملی۔ لڑکی اپنے خاندان میں اکلوتی کمانے والی تھی۔نیز وزیر داخلہ امت شاہ کی ہدایت پر وزارت داخلہ نے پیر کو دہلی پولیس سے اس معاملے میں تفصیلی رپورٹ طلب کی ہے۔ دہلی پولیس نے فوری طور پر کارروائی کرتے ہوئے اسپیشل کمشنر شالنی سنگھ کی سربراہی میں ایک انکوائری کمیٹی تشکیل دی اور ان سے کہا کہ وہ جلد از جلد انکوائری رپورٹ پیش کریں۔ اسپیشل کمشنر آف پولیس شالنی سنگھ نے اپنی ٹیم کے ساتھ سلطان پوری سے کانجھوالا تک 12 کلومیٹر طویل سڑک کا معائنہ کیا جہاں 20 سالہ لڑکی کو کار سے گھسیٹا گیا تھا۔ ایک سینئر پولیس افسر نے بتایا کہ پوچھ گچھ کے ایک حصے کے طور پر سنگھ نے پیر کی رات کو اپنی ٹیم کے ساتھ جائے واردات کا دورہ کیا اور بیرونی دہلی میں سڑک کا معائنہ کیا جہاں لڑکی کو کار کے نیچے پھنسنے کے بعد گھسیٹا گیا تھا۔ ذرائع کے مطابق ٹیم کی بنیادی ذمہ داری روٹ کا تجزیہ کرنا اور مستقبل میں ایسے واقعات کو روکنے کے لیے بہتری کی تجویز دینا ہے۔ یہ بھی دیکھا جائے گا کہ آیا پولیس نے تمام معیاری آپریٹنگ طریقہ کار پر عمل کیا اور کیا اس نے واقعے کے وقت مناسب جواب دیا۔ منگل کو کچھ اہلکار پوسٹ مارٹم رپورٹ لے کر وزارت داخلہ پہنچے۔وہیں عام آدمی پارٹی (اے اے پی) کے قانون سازوں کے ایک وفد نے منگل کو دہلی پولیس کمشنر سنجے اروڑہ سے ملاقات کی اور کانجھا والا واقعہ میں ملوث افراد کو سخت ترین سزا دینے کا مطالبہ کیا ہے۔ انہوں نے مبینہ طور پر ملزمان کو تحفظ فراہم کرنے کے لیے ضلع کے ڈپٹی کمشنر آف پولیس کو برطرف کرنے کا بھی مطالبہ کیا۔

About the author

Taasir Newspaper