Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

کھیل

سرفراز کی شاندار سنچری، پاک-نیوزی لینڈ ٹیسٹ برابری پر ختم، سیریز ڈرا

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 6th Jan.

کراچی ،6جنوری :پاکستان نے سرفراز احمد کی شان دار سنچری کی بدولت نیوزی لینڈ کے خلاف دومیچوں کی سیریز کا آخری میچ نتیجہ خیز ہونے سے بچالیا اور سیریز برابری پر ختم ہوگئی۔مرد بحران کا کردا رادا کرنے والے سابق کپتان سرفراز احمد کو مین آف د ی میچ قراردیاگیا۔ جب کہ اسی مردِ بحران کو مین آف دی سیریز بھی منتخب کیاگیا۔ کراچی میں کھیلے جا رہے سیریز کے دوسرے ٹیسٹ میچ کے آخری دن پاکستان نے صفر پر دو کھلاڑیوں کے نقصان پر اپنی دوسری نامکمل اننگز دوبارہ شروع کی تو امام الحق کا ساتھ دینے شان مسعود آئے۔دونوں کھلاڑیوں نے تیسری وکٹ کے لیے 35 رنز کی شراکت قائم کی لیکن اسی اسکور پر امام اپنی وکٹیں محفوظ نہ رکھ سکے اور اش سودھی کی وکٹ بن گئے۔کپتان بابر اعظم اور شان مسعود نے پراعتماد انداز میں بیٹنگ کی اور اسکور کو 77 تک پہنچا دیا لیکن اس مرحلے پر لیگ کی جانب جاتی گیند کو چھیڑنے کی کوشش میںکپتان بابر وکٹ گنوا بیٹھے، انہوں نے 27 رنز بنائے۔ابھی قومی ٹیم اس نقصان سے سنبھلی بھی نہ تھی کہ مائیکل بریسویل نے اپنے اگلے اوور میں ایک اور اہم شکار کرتے ہوئے شان مسعود کی 35 رنز کی اننگز کا بھی خاتمہ کردیا۔80 رنز پر پانچ وکٹیں گرنے کے بعد سرفراز احمد کا ساتھ دینے سعود شکیل آئے اور دونوں کھلاڑیوں نے ذمے دارانہ کھیل پیش کرتے ہوئے کھانے کے وقفے تک مزید کوئی وکٹ نہ گرنے دی۔دونوں کھلاڑیوں نے کھیل کے دوسرے سیشن میں بھی بہترین کھیل کا سلسلہ جاری رکھا اور اس دوران سرفراز احمد نے سیریز میں اپنی لگاتار چوتھی نصف مکمل کر لی۔سعود شکیل اور سرفراز اب تک چھٹی وکٹ کے لیے 88 رنز کی ساجھے داری قائم کر چکے ہیں جس کی بدولت پاکستان نے پانچ وکٹوں کے نقصان پر 169 رنز بنا لیے ہیں۔سرفراز احمد اور سعود شکیل نے 123 رنز کی طویل شراکت قائم کرکے پاکستان کو ایک مستحکم پوزیشن پر لاکھڑا کیا اور ٹیم کو جیت کی امید دلائی۔سعود شکیل نے 146 گیندوں کا سامنا کیا اور 32 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے۔سرفراز احمد کا ساتھ دینے کے لیے ساتویں نمبر پر آغاسلمان میدان میں آئے اور 83 گیندوں پر 70 رنز کی قیمتی شراکت کی۔سابق کپتان سرفراز نے مرد بحران کا کردار ادا کرتے ہوئے اپنی ذمہ دارانہ بیٹنگ کا سلسلہ جاری رکھا اور 135 گیندوں پر ٹیسٹ کیریئر کی چوتھی سنچری مکمل کی۔آغاسلمان 40 گیندوں پر 30 قیمتی رنز بنا کر ایک ایسے وقت پر آؤٹ ہوئے جب پاکستان کو جیت کے لیے 46 رنز درکار تھے۔حسن علی بھی زیادہ دیر وکٹ پر ٹھہر نہیں سکے جبکہ اس دوران نیوزی لینڈ نیا گیند لیا اور 282 کے اسکور پر کپتان ساؤدھی نے بھرپور فائدہ اٹھاتے ہوئے حسن علی کی وکٹ حاصل کی اور اس وقت پاکستان کو جیت کے لیے 37 رنز کی ضرورت تھی۔سرفراز احمد اختتامی اوور کے کھیل کے دوران نیوزی لینڈ کے پھیلائے ہوئے جال میں پھنسے اور باہر جاتی ہوئی گیند ان کے گلوز کو چھو کر پیچھے کھڑے کیسن ولیمسن کے ہاتھوں میں جا پہنچی۔کین ولیمسن کے ایک اچھے کیچ کے نتیجے میں پاکستان کو 9 ویں کا نقصان برداشت کرنا پڑا اور سرفراز 118 رنز کی اننگز کھیل کر آؤٹ ہوگئے۔نسیم شاہ اور ابرار احمد نے آخری وکٹ میں 16 رنز کا اضافہ کیا اور پاکستان کو شکست سے بچاتے ہوئے میچ برابری پر ختم کردیا۔میچ کے اختتام پر پاکستان نے 9 وکٹوں پر 304 رنز بنالیے تھے اور جیت کے لیے 15 رنز درکار تھے۔نسیم شاہ نے 2 چوکوں اور ایک چھکے کی مدد سے 15 اور ابرار احمد 7 رنز بنا کر ناٹ آؤٹ رہے۔نیوزی لینڈ کی جانب سے مائیکل بریسویل نے سب سے زیادہ 4 وکٹیں حاصل کیں، کپتان ساؤدھی اور اش سودھی نے 2،2 کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا۔خیال رہے کہ پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان سیریز کا پہلا میچ بھی بغیر کسی نتیجے کے ختم ہوگیا تھا۔سرفراز احمد کو شان دار سنچری کے ذریعے میچ بچانے پر میچ کے ساتھ ساتھ سیریز کا بھی بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا۔

About the author

Taasir Newspaper