Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

سیاست

وزیراعظم نصیحت کے بجائے پہلے خود عمل کریں:اشفاق رحمن

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 19th Jan.

نفرتی لوگوں کے خلاف سخت کاروائ بھی ہونی چاہئے:جےڈی آر

پٹنہ(پریس ریلیز )جنتا دل راشٹروادی کے قومی کنوینر اشفاق رحمن نے کہا ہے کہ وزیراعظم نریندر مودی کہ اس بیان کا ہم خیرمقدم کرتے ہیں ،جس میں انہوں نے اپنی پارٹی کے لیڈران اور کارکنان کو مسلمانوں کے خلاف بیان بازی سے باز آنے کو کہا ہے۔ساتھ ہی اشفاق رحمن نے وزیر اعظم کو مشورہ دیا ہے کہ اس پر پہلے وہ خود عمل کریں ۔ایک قوم کو اشارہ کر کتا کے پلہ  سے موازنہ آج بھی لوگوں کے ذہن میں مرکوز ہے۔لیڈر اور کارکنان پر اپنے رہنما کی بات کا اثر تب ہوتا ہے جب وہ کہی باتوں کو خود عملی جامہ پہنائیں۔اچھی بات ہے کہ وزیراعظم کو احساس ہوا کہ ان کی پارٹی کے لوگ مسلم سماج کے خلاف بے وجہ بیان بازی کر نفرت پھیلانے کا کام کر رہے ہیں ۔
اشفاق رحمن کا کہنا ہے کہ جب تک نفرتی لوگوں کے خلاف حکومتی سطح پر سخت کاروائ نہیں ہو گی وزیراعظم کا مذکورہ بیان بھی 15 لاکھ روپیہ کھاتا میں بھیجنے جیسا جملہ ہی مانا  جائے گا۔اشفاق رحمن کہتے ہیں کہ واقعی میں مودی جی کو مسلمانوں سے ہمدردی ہے تو فوری طور پر خبریہ چینلوں پر سماج میں زہر گھولنے والی بحث پر روک لگائیں ۔وزیراعظم ایسا کر سکتے ہیں ،انہیں یہ قدم اٹھانا چاہئے۔صرف زبانی جمع خرچ سے کچھ نہیں ہونے والا۔لیڈر کی کرنی اور کتھنی میں فرق نہیں ہونا چاہئے۔اشفاق رحمن کا کہنا ہے کہ وزیراعظم نے یہ بھی کہا کہ بھاجپا کارکنان مسلمانوں کے گھر-گھر جائیں ۔ اس سے مسلمانوں کو خوش فہمی میں مبتلا ہونے کی ضرورت نہیں ہے -جیسے ٹی وی پر فرضی مولانا کو بیٹھا کر مسلمانوں کو ذلیل و خوار  کرایا جاتا ہے ،اسی طرح فرضی مسلمانوں سے مل کر خانہ پری کر دی جائےگی  ۔2024 میں لوک سبھا انتخاب ہو نا ہے اس کے مد نظر یہ سوچی سمجھی سیاسی حربہ بھی ہو سکتا  ہے۔اشفاق رحمن کا کہنا ہے کہ وزیراعظم تو بہت کچھ کہتے ہیں لیکن ان کی بات پر پارٹی کے لوگ توجہ کہاں دیتے ہیں ؟کانگریس کی طرز پر بھاجپا بھی مسلمانوں کو سماج سے کانٹ-جھانٹ کر رکھنا چاہتی ہے ۔وزیراعظم کی نیت میں کوئ کھوٹ نہیں  بھی ہو سکتی ہے لیکن عمل کے بغیر کوئ ارادہ ادھورا ہی مانا جائے گا۔چچا غالب نے شاید اسی موقع سے کہا ہوگا. . .    کی خوشی سے مر نہ جاتے اگر اعتبار ہوتا۔

About the author

Taasir Newspaper