Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

دنیا بھر سے

’’پوتین سکون کا سانس لینا چاہتے‘‘: بائیڈن کا جنگ بندی اعلان پر رد عمل

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 6th Jan.

ماسکو،6جنوری:آرتھوڈوکس کرسمس کے موقع پر یوکرین میں روسی جنگ بندی پر تبصرہ کرتے ہوئے امریکی صدر جو بائیڈن نے جمعرات کو کہا ہے کہ روسی صدر ولادیمیر پوتین راحت کی سانس لینا چاہتے ہیں۔بائیڈن نے وائٹ ہاؤس سے ایک تقریر میں کہا کہ روسی صدر “ہسپتالوں، کنڈرگارٹنز اور گرجا گھروں پر بمباری کرنے کے لیے تیار تھے۔ 25 دسمبر اور نئے سال کی شام۔ میرے خیال میں وہ ایک دکان کی تلاش میں ہیں۔دوسری طرف جرمن وزارت خارجہ نے جمعرات کو کہا کہ آرتھوڈوکس کرسمس کے موقع پر یوکرین میں روسی جنگ بندی ان لوگوں کے لیے نہ آزادی اور نہ ہی سلامتی لائے گی جو ہر روز خوف میں رہتے ہیں۔ جرمن خاتون وزیر خارجہ اینالینا بیرباک نے ایک ٹویٹ میں کہا اگر پیوٹن امن چاہتے ہیں تو وہ اپنے فوجیوں کو گھر بھیج دیتے اور جنگ ختم ہو چکی ہوتی۔ لیکن بظاہر وہ ایک مختصر وقفے کے بعد جنگ پھر جاری رکھنا چاہتے ہیں۔خیال رہے روس نے یوکرین میں 36 گھنٹے کی مدت کے لیے جنگ بندی کا اعلان کیا تھا۔ یہ وقت جمعہ کی آدھی رات سے شروع ہو رہا ہے۔ جنگ بندی کا یہ اعلان کریملن نے روسی رہنما پیٹریارک کیرل کی درخواست پر کیا تھا۔ دوسری طرف یوکرین نے پوتین کی طرف سے تجویز کردہ جنگ بندی کو “منافقت” قرار دے دیا ہے۔پوتین نے کہا عزت ماٰب کیرِل کی اپیل پر میں روسی وزیر دفاع کو یوکرین میں فریقین کے درمیان رابطوں کی تمام خطوط پر جنگ بندی پر عمل درآمد شروع کرنے کی ہدایت کرتا ہوں۔ کریملن کے مطابق یہ وقت 6 جنوری جمعہ کو دن 12 بجے شروع ہوتا ہے اور سات جنوری ہفتہ کو رات کو 12 بجے ختم ہو جائے گا۔بیان میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ روس یوکرین سے جنگ بندی کا اعلان کرنے اور آرتھوڈوکس نظریے کے مطابق کرسمس کے موقع پر لوگوں کو اجتماع میں شرکت کی اجازت دینے کا مطالبہ کر رہا ہے۔دوسری جانب یوکرینی صدر کے دفتر کے ڈائریکٹر کے مشیر میخائل پوڈو لیاک نے کہا کہ روس کے ساتھ عارضی جنگ بندی صرف اس صورت میں ہو سکتی ہے جب وہ اپنے زیر کنٹرول علاقوں کو چھوڑ دے۔ انہوں نے اس جنگ بندی کو منافقت قرار دیا۔پوڈو لیاک نے اپنی ٹویٹ میں کہا ہم نے روسی جنگ بندی کو قبول کرنے کے لیے روس کے اپنے ملک کی سرزمین سے انخلا کی شرط رکھی ہے۔ ہم کسی ملک پر حملہ نہیں کر رہے کہ جنگ بندی پر متفق ہوں۔یاد رہے روس اور یوکرین میں بڑی تعداد میں آرتھوڈوکس عیسائی 6 اور 7 جنوری کو کرسمس مناتے ہیں۔ روس نے 24 فروری کو یوکرین پر حملہ کیا تھا اور اس کے بعد سے یہ اپنی نوعیت کی پہلی جنگ بندی تھی۔

About the author

Taasir Newspaper