Pin-Up Казино

Не менее важно и то, что доступны десятки разработчиков онлайн-слотов и игр для казино. Игроки могут особенно найти свои любимые слоты, просматривая выбор и изучая своих любимых разработчиков. В настоящее время в Pin-Up Казино доступно множество чрезвычайно популярных видеослотов и игр казино.

ریاست

چڑیا گھر میں جنگل راج؟ صندل کا درخت اندر سے غائب

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network – Syed M Hassan 21st Jan.

نئی دہلی،21جنوری: دہلی کے چڑیا گھر میں سیکورٹی اہلکاروں میں سنگین کوتاہی کافی عرصے سے منظر عام پر آ رہی ہے۔ قوانین کی خلاف ورزی کی شکایات میں بھی اضافہ ہوا ہے۔ سیکورٹی گارڈز کی مناسب تعداد اور 300 سے زائد سی سی ٹی وی کیمرے سرکاری کاغذات میں لگے ہوئے ہیں۔ اس کے باوجود چڑیا گھر میں چوری کی وارداتیں منظر عام پر آ رہی ہیں۔حال ہی میں چڑیا گھر کے اندر سے چندن کے درخت غائب ہونے اور برازیلین طوطے کے چوری ہونے کے واقعات بھی منظر عام پر آئے۔ اس کے علاوہ چڑیا گھر میں 2 سال پہلے سے پٹرول اور ڈیزل گاڑیوں کے داخلے پر پابندی ہے۔ پھر بھی بھاری گاڑیاں اندر آتی دیکھی جا سکتی ہیں۔ ذرائع کا دعویٰ ہے کہ سیکورٹی ڈیپارٹمنٹ کی نگرانی کے بغیر ایسی چیزیں منظر عام پر نہیں آسکتی تھیں۔2011-12 میں اس وقت کے ڈائریکٹر امیتابھ اگنی ہوتری نے ماحولیات اور جنگلی حیات کے تحفظ کے لیے چڑیا گھر میں پیٹرول اور ڈیزل گاڑیوں کے داخلے پر پابندی لگانے کا حکم جاری کیا تھا۔ تاہم اس وقت حکم پر عمل درآمد نہیں ہو سکا۔ اب 2 سال پہلے اس حکم کو اس وقت کے ڈائریکٹر رمیش کمار پانڈے نے نافذ کیا تھا۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ان کے تبادلے کے بعد قوانین پر صحیح طریقے سے عمل درآمد نہیں ہو رہا۔ دن میں بھی ٹیمپو اور ٹریکٹر دیکھے جا سکتے ہیں۔ چڑیا گھر میں ہر قسم کی گاڑیوں کے آنے اور جانے کا ایک ہی راستہ ہے۔ دن رات وہاں پہرے دار تعینات ہیں۔ اب بھی ان گاڑیوں کی انٹری ہو رہی ہے۔چڑیا گھر کی دستاویزات کے مطابق 69 گارڈز 3 شفٹوں میں جانوروں کی 20 بیٹس کے لیے دن رات ڈیوٹی دے رہے ہیں۔ چڑیا گھر کے ذرائع نے بتایا کہ حقیقت اس کے بالکل برعکس ہے۔ رات کے وقت صرف 3-4 بیٹ کیپر چڑیا گھر کے اندر ڈیوٹی پر ہوتے ہیں۔ 20 دھڑکنوں میں 70 سے زیادہ جانوروں کے باڑے ہیں۔ ان تمام انکلوڑرز کی سیکورٹی ان کے اختیار میں نہیں ہے۔ ایک گارڈ رات کے وقت داخلے کے واحد دروازے پر تعینات ہوتا ہے۔ پھر بھی چور چوری شدہ درختوں سے کٹی ہوئی لکڑی کو ٹیمپو، ٹریکٹر یا ٹرک میں لاد کر لے جاتے ہیں۔

About the author

Taasir Newspaper