لبنان جنگ کے حوالے سے امریکی حکام کے ساتھ تفصیلی بات چیت ہوئی: اسرائیلی وزیر دفاع

تاثیر۲۷      جون ۲۰۲۴:- ایس -ایم- حسن

بیروت،27جون:لبنان اور اسرائیل کی سرحد پر جاری کشیدگی ایک بڑی جنگ کیخطرے کا باعث بنتی دکھائی دے رہی ہے جس پر اقوام متحدہ کی طرف سے بھی تنبیہ کی گئی ہے۔اسی حوالے سے اسرائیلی وزیر دفاع یوآو گیلنٹ نے کہا ہے کہ انہوں نے امریکی حکام سے ملاقات کے دوران لبنان کی سرحد پر “سکیورٹی کی صورت حال” کو تبدیل کرنے پر تبادلہ خیال کیا۔انہوں نے مزید کہا کہ میں نے قومی سلامتی کے مشیر جیک سلیوان کے ساتھ حزب اللہ کے ساتھ جھڑپوں کی پیشرفت پر تبادلہ خیال کیا۔ یہ ملاقات ایک ایسے وقت میں ہوئی ہے جب غزہ کی پٹی میں جاری جنگ کی توسیع اور لبنان کے ساتھ ایک جامع جنگ شروع ہونے کے بارے میں امریکہ میں تشویش پائی جاتی ہے۔
جبکہ بدھ کو وائٹ ہاؤس سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ قومی سلامتی کے مشیر جیک سلیوان نے بھی اسرائیلی وزیر دفاع سے ملاقات کے دوران مغربی کنارے میں کشیدگی کا معاملہ اٹھایا۔انہوں نے مزید تاخیر کے بغیر ٹیکس محصولات کی فلسطینی اتھارٹی کو منتقلی کی اہمیت پر بھی تبادلہ خیال کیا۔یہ پیش رفت اس وقت سامنے آئی جب وائٹ ہاؤس کے ترجمان نے العربیہ/الحدث کے نامہ نگار سے بات کرتے ہوئے کہا تھا کہ واشنگٹن لبنان کے ساتھ اسرائیل کی سرحدوں کے حوالے سے سفارتی کوششوں کے ذریعے شمال میں دوسرے محاذ کو روکنے کے لیے سخت محنت کر رہا ہے۔
انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ لبنان میں امریکیوں کی حفاظت امریکی صدر جو بائیڈن کی ترجیح ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ان کا ملک لبنان میں امریکی سفارت خانے میں رجسٹرڈ امریکیوں سے رابطے میں رہے گا۔حزب اللہ اور اسرائیلی فوج کے درمیان محاذ آرائی اور جھڑپوں کی شدت تقریباً دو ہفتے قبل اسرائیل کی جانب سے تنظیم کے رہ نما طالب عبداللہ کے قتل کے بعد سے مزید سخت ہوگئی ہے۔دونوں فریقوں کے درمیان دھمکیوں کی شدت میں بھی اضافہ ہوا، کیونکہ حزب اللہ کے رہ نما حسن نصراللہ نے گذشتہ بدھ کو ایک ٹیلی ویڑن تقریر میں دھمکی دی تھی کہ اگر جنگ پھیل گئی تو اس کی زد میں قبرص بھی آئے گا۔ انہوں نے قبرص پر لبنان کے خلاف اسرائیلی سازشوں کی میزبانی اور اسرائیل کو اپنے اڈے فراہم کرنے کا الزام لگایا۔اسرائیلی فوج نے گذشتہ ہفتے اعلان کیا تھا کہ اس نے لبنان میں وسیع حملے کے منصوبے کی منظوری دے دی ہے۔اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے بھی دو روز قبل انکشاف کیا تھا کہ غزہ کی پٹی کے جنوب میں واقع شہر رفح میں لڑائی جلد ختم ہو جائے گی اور اب ان کی توجہ شمالی محاذ پر لبنان کے ساتھ مرکوز ہوگی۔