مینگلور میں زبردست بارش کا سلسلہ جاری،کئی مقامات پر سیلاب جیسی صورتحال

تاثیر۲۸      جون ۲۰۲۴:- ایس -ایم- حسن

بنگلورو 28 / جون :اُڈپی اور مینگلور سمیت ساحلی کرناٹکا میں موسلادھار بار ش کا سلسلہ جاری ہے جس کے نتیجے میں عام زندگی مفلوج ہونے کے ساتھ ساتھ کئی علاقوں میں سیلاب جیسی صورت حال پیدا ہوگئی ہے۔ اُڈپی میں بعض متاثرہ مقامات سے لوگوں کو محفوظ جگہ پر منتقل کرنے کی کارروائی بھی انجام دی گئی ہے، جبکہ بھاری بارش کو دیکھتے ہوئے محکمہ موسمیات نے ایک طرف ضلع دکشن کنڑا میں ریڈ الرٹ جاری کرتے ہوئے جمعرات کے بعد جمعہ کو بھی اسکولوں اور تعلیمی اداروں میں چھٹی کا اعلان کیا ہے، وہیں ضلع اُڈپی میں بھاری برسات کو دیکھتے ہوئے اورینج الرٹ جاری کرتے ہوئے عوام الناس سے احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کی ہدایت دی ہے۔ زبردست بارش کی وجہ سے اُڈپی شہر اور اطراف کے علاوہ ملپے، منی پال، بائلا کیرے، اندرانی، پانڈّوبیٹو، موڈوبیٹو اور بنانجے وغیرہ میں جگہ جگہ پانی جمع ہوگیا اور مصنوعی سیلاب کی کیفیت رونما ہوگئی۔ کل رات بائلا کیرے آدامارو مٹھ کے پاس چار گھروں میں پانی گھسنے کے بعد لوگوں کو نکال کر دوسری جگہ منتقل کیا گیا ہے ۔ فائر فائٹنگ شعبے کے عملے نے الگ الگ مقامات سے 14 افراد کو ہٹا کر کرشنا مٹھ پارکنگ ایریا کے پاس پرائیویٹ ہوٹل میں منتقل کیا ہے۔ کئی جگہوں پر گھروں میں پانی گھسنے کے علاوہ بڑے بڑے درختوں کے گرنے سے ٹریفک میں خلل پیدا ہونے اور بجلی منقطع ہونے کے واقعات بھی پیش آئے۔ مسلسل بارش کی وجہ سے کرشنا مٹھ اور اطراف کے علاقے میں سیلاب جیسی حالت ہوگئی۔ اسی طرح کنداپور اور برہماور تعلقہ میں طوفانی ہواوں کی وجہ سے سپاری کے باغات کو خاصہ نقصان پہنچا ہے۔ مینگلور سے ملی اطلاع کے مطابق ضلع دکشن کنڑا میں مسلسل برسات کے نتیجے میں متوقع قدرتی اور ناگہانی آفات اور مسائل سے نمٹنے کے لئے ڈسٹرکٹ ڈیسیاسٹر منیجمنٹ اتھاریٹی نے ضلع کے ہر تعلقہ میں کنٹرول رومس قائم کیے ہیں۔ اتھاریٹی نے تعلقہ کے ہیڈ کوارٹرس میں کنٹرول روم قائم کرنے کی ہدایت دیتے ہوئے کہا ہے کہ ضلع انتظامیہ کی جانب سے تعینات کیے گئے کمانڈرس کو ہر وقت تیار رہنا چاہیے اور ڈی سی آفس میں موجود کنٹرول روم سے برابر رابطے میں رہنا چاہیے۔ اس کے علاوہ تعلقہ سطح کے افسروں کو تاکید کی گئی ہے کہ وہ اپنے مقام سے کہیں بھی نہ جائیں۔ اسی طرح ضلع انتظامیہ نے ماہی گیروں کو سمندر سے دور رہنے اور سمندر میں گئی ہوئی کشتیوں کو واپس لوٹ آنے کی بھی ہدایت جاری کی ہے۔