میٹرو اسٹیشن کے قریب ٹل گیا بڑا حادثہ، ڈی ٹی سی بس مہرولی بدر پور روڈ پر 10 سے 15 فٹ گڑھے میں پھنسی

تاثیر۲۶      جون ۲۰۲۴:- ایس -ایم- حسن

نئی دہلی، 26 جون: راجدھانی دہلی میں ابھی مانسون شروع بھی نہیں ہوا ہے، لیکن اس سے پہلے ہی دہلی کی سڑکوں کے دھنسنے کا عمل شروع ہو گیا ہے۔ بدھ کی صبح تقریباً 7:00 بجے ڈی ٹی سی کی الیکٹرک بس دہلی کی مصروف ترین سڑک مہرولی بدر پور روڈ پر تقریباً 10 سے 15 فٹ گہرے گڑھے میں جاگری۔ یہ واقعہ ساکیت میٹرو اسٹیشن کے قریب مہرولی بدر پور روڈ پر پیش آیا۔ تاہم اس سے کوئی جانی یا مالی نقصان نہیں ہوا۔جب ڈی ٹی سی روٹ نمبر 419 کی بس کشمیری گیٹ سے لاڈو سرائے کی طرف جارہی تھی، جیسے ہی بس ساکیت میٹرو اسٹیشن فٹ اوور برج کے قریب پہنچی تو اچانک سڑک دھنس گئی اور بس تقریباً 15 سے 20 فٹ کے گڑھے میں جاگری۔ تاہم خوش قسمتی کہ جب یہ واقعہ پیش آیا تو بس میں صرف چار سے پانچ افراد تھے۔ کیونکہ بس اپنی منزل سے کچھ فاصلے پر تھی۔ اس واقعہ کے بعد بھی کئی گھنٹے تک کوئی مدد نہیں پہنچی اور مہرولی بدر پور روڈ پر تقریباً 4 سے 5 کلو میٹر طویل جام لگ گیا جس کی وجہ سے صبح اس سڑک سے سفر کرنے والے لوگوں کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔
میڈیا سے بات کرتے ہوئے بس ڈرائیور بھوپیندر چوہان نے بتایا کہ جیسے ہی ہم میٹرو میں سوار ہوئے اور تھوڑا آگے بڑھے تو سڑک دھنس گئی اور بس گڑھے میں پھنس گئی۔ جس کے بعد گڑھے سے پانی نکلنا شروع ہو گیا۔ یہ سڑک صبح سات بجے دھنس گئی اور اس کے بعد سے کوئی مدد نہیں پہنچی جس کی وجہ سے طویل ٹریفک جام رہا۔ڈرائیور نے بتایا کہ جب بس گڑھے میں دھنس گئی تو اس میں چار سے پانچ مسافر سوار تھے، اس لیے کوئی زخمی نہیں ہوا۔ انہوں نے بتایا کہ بس روٹ نمبر 419 کی تھی اور کشمیری گیٹ سے لاڈو سرائے کی طرف جارہی تھی۔