کنٹریکٹ بس ڈرائیور تنخواہ کا مطالبہ کرتے ہوئے موبائل ٹاور پر چڑھ گیا

تاثیر۲۳      جون ۲۰۲۴:- ایس -ایم- حسن

لکھنؤ، 23 جون: ریاستی دارالحکومت لکھنؤ کے قیصر باغ میں محکمہ ٹرانسپورٹ کا ایک کنٹریکٹ بس ڈرائیور موبائل ٹاور پر چڑھ گیا۔ اس کی بیوی اور بچے ٹاور کے نیچے ہی ہڑتال پر بیٹھ گئے۔ واقعہ کی اطلاع ملتے ہی محکمہ ٹرانسپورٹ اور محکمہ پولیس میں خوف و ہراس پھیل گیا۔ اطلاع ملنے کے بعد قیصر باغ پولیس اور محکمہ ٹرانسپورٹ کے افسران موقع پر پہنچے اور انہیں جلد تنخواہ ادا کرنے کا وعدہ کرکے ٹاور سے نیچے اتارنے کی کوشش کی تاہم ان کا مطالبہ تھا کہ وہ ٹرانسپورٹ کے آنے کے بعد ہی ٹاور سے نیچے اتریں گے۔
پولیس کے مطابق راجو سینی ایک کنٹریکٹ بس ڈرائیور ہے جو علی گڑھ ضلع کے ہاتھرولی میں کام کرتا ہے۔ اتوار کو وہ اپنی بیوی بھاونا، بیٹے امن اور بیٹی خوشبو کے ساتھ قیصر باغ بس اسٹینڈ پہنچے۔ یہاں بنے موبائل ٹاور پر چڑھ گیا۔ جبکہ بیوی بچوں کے ساتھ ہڑتال پر بیٹھ گئی۔ اطلاع ملتے ہی پولیس، فائر بریگیڈ اور ٹرانسپورٹ کارپوریشن کے اہلکار موقع پر پہنچ گئے اور اسے قابو کرنے کی کوشش شروع کردی۔ انہوں نے کہا کہ کئی مہینوں سے اسے تنخواہ نہیں دی جا رہی اور مانگنے پر تنگ کیا جا رہا ہے۔ تنخواہ نہ ملنے کی وجہ سے ان کا خاندان فاقہ کشی کے دہانے پر ہے۔ بچوں کی پڑھائی بھی رک گئی ہے۔ یہ اس وقت تک نہیں اترے گا جب تک وزیر ٹرانسپورٹ یہاں نہیں آتے۔ انتظامیہ نے اسے تنگ کیا تو وہ یہاں سے کود جائے گا۔ اپنی بیوی کے موبائل کے ذریعے وہ اپنے تمام خیالات پولیس اور انتظامیہ تک پہنچا رہا ہے۔
قیصر باغ بس اسٹینڈ کے آر ایم آر کے ترپاٹھی بھی موقع پر پہنچ گئے۔ انہوں نے کہا کہ کیشئر کو بلایا گیا ہے اور ڈرائیور کی جو بھی تنخواہ باقی ہے وہ اسے دے دی جائے گی۔ راجو سینی پر بھی اپنی ڈیوٹی سے غفلت برتنے کا الزام ہے۔