یہ موت نہیں بلکہ قتل ہے، تمل ناڈو میں 32 دلت مارے گئے، راہل، پرینکا کیوں خاموش ہیں: بی جے پی

تاثیر۲۳      جون ۲۰۲۴:- ایس -ایم- حسن

نئی دہلی، 23 جون: بھارتیہ جنتا پارٹی نے تمل ناڈو میں نقلی شراب پینے سے ہونے والی اموات پر اپوزیشن انڈیا اتحاد کی خاموشی پر سوال اٹھایا ہے۔ پارٹی لیڈر سمبت پاترا نے کہا کہ اب تک 56 لوگوں کی موت ہو چکی ہے، جن میں سے 32 دلت ہیں، لیکن راہل گاندھی، پرینکا گاندھی، ڈی ایم کے لیڈر اور دیگر اتحادی لیڈر اس واقعہ پر کچھ نہیں کہہ رہے ہیں۔
پارٹی ہیڈکوارٹر میں منعقدہ ایک پریس کانفرنس میں بی جے پی لیڈر اور پوری لوک سبھا سیٹ سے نومنتخب رکن سمبت پاترا نے کہا کہ اگر اس ملک میں 32 سے زیادہ دلت مارے جاتے ہیں تو میں اسے قتل کہوں گا، یہ موت نہیں ہے۔
پاترا نے کہا کہ تمل ناڈو کے کرونا پورم نامی گاؤں میں زہریلی شراب کا سانحہ، جہاں زیادہ تر درج فہرست ذات کے لوگ رہتے ہیں، بہت افسوسناک ہے۔ 56 سے زائد افراد ہلاک اور متعدد کی حالت تشویشناک ہے۔ کانگریس پارٹی اور ان کے انڈیا اتحاد کے لیڈر اس معاملے پر کیوں خاموش ہیں؟
انہوں نے مزید کہا کہ اس کا مرکزی ملزم ڈی ایم کے سے وابستہ تھا۔ انہوں نے کہا کہ کلاکوریجی میں نقلی شراب کا یہ کاروبار برسوں سے جاری ہے۔ وہ تھانے اور ضلعی عدالت کے قریب بھی چل رہا تھا۔ آج کے اخبار میں واضح طور پر لکھا گیا ہے کہ اس واقعہ کے ماسٹر مائنڈ گووند راج کا گودام ایک مصروف سڑک پر تھا۔ سب سے بڑی بات یہ ہے کہ گووند راج کے گھر کے باہر اور اندر ڈی ایم کے کے اسٹیکر لگے ہوئے ہیں۔ وہ چیف منسٹر اسٹالن سے پوچھنا چاہتے ہیں کہ آپ اس میں ملوث ہیں یا نہیں، آپ کی طرف سے کون جواب دے گا؟