اللہ کے نزدیک رمضان کے بعد سب سے افضل روزہ محرم کاروزہ ہے:اسعد اعظمی

تاثیر۸  جولائی ۲۰۲۴:- ایس -ایم- حسن

وارانسی،08جولائی :ضلعی جمعیت اہل حدیث بنارس کی زیر سر پرستی میں منعقد ہونے والے دعوتی و اصلاحی اجلاس عام کے سلسلے کی ایک کڑی کے طور پرمسجد اہل حدیث نئی بستی ،جنسا ،وارانسی میں ایک جلسہ عام کا انعقاد بروز اتوار بعد نماز مغرب عمل میں آیا ۔مولانا اسعد اعظمی ،استاذ جامعہ سلفیہ بنار س اورمعروف مقرر اور خطیب مولانا عبد الغفار سلفی ،استاذ مدرسہ احیاء السنہ نے پر مغز خطاب کیا۔اس پروگرام میں بڑی تعداد میں قرب و جوار سے لوگوں نے شرکت کی اور علمائے کرام کے مواعظ حسنہ سے مستفید ہوئے۔جلسے کا آغاز بعد نماز مغرب حافظ نورالحق کی تلاوت قرآن کریم سے ہوا اور عطاء الرحمن ندوی نے نظامت کے فرائض انجام دیئے۔

اس موقع پر سامعین سے خطاب کرتے ہوئے مولانا اسعد اعظمی نے محرم الحرام کے مہینے کے آغاز کا ذکر کیا اور اس حرمت والے مہینے میں کی جانے والی غیر اسلامی رسوم و رواج پر روشنی ڈالی ۔مولانا اعظمی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اسلامی کیلنڈر کا نیا سال شروع ہو چکا ہے،رمضان کے بعد اللہ کے نزدیک سب سے افضل روزہ محرم کے مہینے کا روزہ ہے ۔انہوں نے اس حرمت والے مہینے میں غیر سلامی اور غیر شرعی امور کی طرف توجہ دلاتے ہوئے کہا کہ اسمہینیکے آغاز میں ہم اپنے قرب و جوار اور محلے میں عجیب سی ہلچل اور سر گرمی دیکھتے ہیں ، بہت سے غیر شرعی اعمال انجام دیئے جاتے ہیں جن کا شریعت اور اسلام سے کوئی لینا دینا نہیں ہے۔اسلام تو سادگی کا نام ہے،اسلام کے نام پر اس حرمت والے مہینے میں یہ ہنگامہ آرائی کرنا سراسر اسلام کے خلاف ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس مہینے میں جو شرعی عمل ہے وہ ہے صرف نوویں اور دسویں محرم کا روزہ رکھنا ،اور اسلام میں اس کی بڑی فضیلت ہے۔انہوں نے کہا کہ اللہ تعالیٰ روزہ رکھنے والوں کے سال بھر کے گناہ معاف فرما دیتا ہے،لیکن افسوس کہ اس مہینے میں عوام کو وہ تمام چیزیں بتائی جاتی ہیں جو اسلام کا حصہ نہیں ہیں مگر وہ عمل نہیں بتایا جاتا جس کے کرنے کا شریعت نے حکم دیا ہے۔
مولانا عبد الغفار سلفی نے نئے ہجری سال کے آغاز پر روشنی ڈالتے ہوئے پر مغز خطاب کیا۔مولانا سلفی نے اس موقع پر پیار حبیب صلی اللہ علیہ وسلم کے ذریعہ مکہ سے مدینہ ہجرت کرنے کے واقعہ پر تفصیلی روشنی ڈالی ۔انہوں نے اپنے خطاب میں کہا کہ ہجرت کا یہ واقعہ ہمیں یہ بتلاتا ہے کہ ہم تک جو اسلام پہنچا ہے وہ کتنی مشکلات کے بعد پہنچا ہے۔اس میں اصحاب رسول ؐ اور صحابیات رسولؐ نے قربانیاں پیش کی ہیں۔انہوں نے ہجرت کے حقیقی مفہوم کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ہجرت صرف گھر اور شہر چھوڑنے کا نام نہیں ہے بلکہ ہجر ت نام ہے اللہ کی حرام کردہ ہر چیز کو ترک کر دینے کا اور مہاجر وہ ہے جو ہر اس چیز کو اللہ کی رضا کے لئے ترک کر دے جس سے اللہ ناراض ہو۔پروگرام مغرب کی نماز کے بعد سے شروع ہوا ور عشا ء تک جاری رہا۔بارش اور موسم ابر آلود ہونے کے باوجود بڑی تعداد میں مقامی اور قرب و جوار کے لوگوں نے پروگرام میں شرکت کی ۔