دہلی میں انسانی اعضاء کے پیوندکاری کا پردہ فاش، 7 افراد گرفتار

تاثیر۹  جولائی ۲۰۲۴:- ایس -ایم- حسن

نئی دہلی، 09 جولائی : دہلی پولیس نے منگل کے روز ایک بین الاقوامی کڈنی ٹرانسپلانٹ ریکیٹ کا پردہ فاش کیا ہے۔ اعضاء کی پیوند کاری کا ریاکٹ گردہ عطیہ کرنے والے سے 4-5 لاکھ روپے لے کر 20-30 لاکھ روپے میں فروخت کرتا تھا۔ ساتھ ہی خاتون ڈاکٹر ہر سرجری کے لیے 2 لاکھ روپے وصول کر رہی تھیں۔ پولیس کے مطابق جس ہسپتال میں یہ سرجری ہو رہی تھی وہ نوئیڈا کا ایک بڑا ہسپتال ہے۔ ڈونر اور وصول کنندہ کو دہلی کے جسولا میں ایک فلیٹ میں رکھا گیا تھا۔ بنگلہ دیش ہائی کمیشن کی کئی جعلی دستاویزات برآمد ہوئی ہیں۔پولیس نے اس ریکیٹ کے سات افراد کو گرفتار کیا ہے۔ ان افراد کا تعلق بنگلہ دیش سے ہے۔ اس ریکیٹ کا ماسٹر مائنڈ بھی بنگلہ دیش سے ہے۔ اس میں ایک بڑے پرائیویٹ اسپتال کی سینئر ڈاکٹر وجے کماری کا نام بھی سامنے آیا ہے۔ انہیں بھی گرفتار کر لیا گیا ہے۔ڈاکٹر کے علاوہ 3 بنگلہ دیشی شہریوں کو گزشتہ ماہ گرفتار کیا گیا تھا۔ اس معاملے میں مبینہ طور پر نئی دہلی میں بنگلہ دیش ہائی کمیشن کے نام پر جعلی دستاویزات بنائے گئے تھے۔ جس میں یہ دعویٰ کیا گیا تھا کہ عضو عطیہ کرنے والے اور اعضاء حاصل کرنے والے (دونوں بنگلہ دیشی) کے درمیان تعلق ہے۔ حکام کے مطابق غیر قانونی انسانی گردوں کا یہ کالا دھندہ بنگلہ دیش سے چلایا جاتا تھا تاہم کارروائیاں بھارت میں کی گئیں۔
ڈاکٹر وجیا کماری ایک سینئر کنسلٹنٹ اور کڈنی ٹرانسپلانٹ سرجن ہیں۔ تقریباً 15 سال قبل انہوں نے دہلی کے ایک پرائیویٹ اسپتال میں جونیئر ڈاکٹر کے طور پر کام کرنا شروع کیا تھا۔ وہ نوئیڈا کے ایک پرائیویٹ ہسپتال میں وزٹنگ کنسلٹنٹ کے طور پر کام کر رہی تھیں۔پولیس کے مطابق وہ مبینہ طور پر بنگلہ دیش اور بھارت سے اس گینگ سے منسلک تھی۔ 50 سالہ ڈاکٹر وجیا کماری فی الحال ہسپتال سے معطل ہیں۔ پولیس کے مطابق وہ اس ہسپتال کی واحد ڈاکٹر تھی جو اس گروہ کے ساتھ کام کر رہی تھی۔ اس نے 2021 سے 2023 تک نوئیڈا کے ایک نجی اسپتال میں تقریباً 15 سے 16 اعضاء کی پیوند کاری کی تھی۔