روہتاس ضلع کے بقیہ دس بے زمین اسکول بھی اب ہو جائینگے مرج،محکمہ تعلیم کا کام ہے شروع

تاثیر۱۱  جولائی ۲۰۲۴:- ایس -ایم- حسن

          سہسرام ( انجم ایڈوکیٹ ) اب روہتاس ضلع کے 10 بے زمین اسکول ہونگے مرج، ان کو ضم کرنے کی کوششیں شروع کردی گئی ہیں، ذرائع سے موصولہ اطلاع کے مطابق ضلعی محکمہ تعلیم نے ان اسکولوں کا یو ڈائس کوڈ ختم کرکے ان اسکولوں کو ضم کرنے کیلئے ریاستی سطح پر فائل دائر کردی ہے، ریاستی سطح سے حکم ملتے ہی چناری، کاراکاٹ، ناصری گنج، شیوساگر اور سہسرام بلاک کے تقریباً 10 اسکولوں کو ضم کردیا جائیگا ۔ اگر ذرائع کی مانیں تو ان 10 اسکولوں میں چناری بلاک کا اصل پرائمری اسکول، اردو گرلز پرائمری اسکول، چناری، کاراکاٹ بلاک کا اصل اسکول، اردو پرائمری اسکول رام پور بھرتھا، پرائمری اسکول تدھوا، رام پور بھریٹھا، مڈل اسکول شامل ہیں ۔ براڈیہ پرائمری اسکول میں وشن پور، ناصری گنج بلاک سے اردو مڈل اسکول، ناصری گنج وارڈ دو میں چلایا جانے والا نیا پرائمری اسکول، شیوساگر بلاک سے مڈل اسکول، سینوار میں چلایا جانے والا نیا پرائمری اسکول، سہسرام ​​بلاک سے بیروان اور مڈل اسکول، پرائمری اسکول بالبودھنی، گورمکھی میں پرائمری اسکول، پرائمری اسکول لشکری ​​گنج، شری گروچرن رام لچھمن کے نام پرائمری اسکول ہیتم پور چلانیاں، سیکنڈری گرلز اسکول عالم گنج، گورنمنٹ گرلز مڈل اسکول گاندھی پاتھ، سہسرام طلعت اردو مڈل اسکول کبیر گنج، نظیریہ اسکول ۔ مذکورہ اسکولوں میں 40 سے 293 بچے تعلیم حاصل کرتے ہیں، مذکورہ 10 بے زمین اسکولوں کیلئے کئی سالوں سے زمین کی تلاش جاری تھی لیکن طویل عرصہ گزرنے کے بعد بھی عمارت کی تعمیر کیلئے زمین کی عدم دستیابی کے باعث ان اسکولوں کو ضم کردیا جائیگا ۔ انضمام کے بعد اب یہ اسکول ٹیگ شدہ اسکول کے نام سے جانے جائینگے، اتنا ہی نہیں بچے اور اساتذہ کا تعلق بھی ٹیگ شدہ اسکولوں سے ہی ہوگا، اگر طلباء کے تناسب سے زیادہ اساتذہ اور عملہ ہونگے تو انہیں دوسرے اسکولوں میں بھیج دیا جائیگا، اس سلسلے میں سرو شکشا ابھیان کے ڈی پی او راگھویندر پرتاپ سنگھ کا کہنا ہے کہ اب تک 67 اسکولوں کو ضم کر دیا گیا ہے اور مزید 10 اسکولوں کو بھی ضم کرنے کی تجویز بھیج دی گئی ہے، موصول ہونے والی ہدایات کی روشنی میں ہی کام کیا جائیگا ۔